jump to navigation

Eidul Azha – عید الاضحی November 17, 2010

Posted by Farzana Naina in Eid Mubarak, Festivals, Greetings, Islam, Poetry, Shairy, Sher, Urdu, Urdu Poetry.
Tags: , , , ,
1 comment so far

کیسے مٹاؤں زخمی ہتھیلی سے مہندی کے گل بوٹے

اب تو عیدی دینے والے ہاتھ  کا  لمس بھی  یاد  نہیں

 

Rose

♥ معزز دوستو تسلیمات♥

عید کا پر مسرت موقعہ قریب ہے، عید کارڈوں کے کبوتر اپنے پیاروں کے پیغام لے جانے کے لئیے اڑانیں بھر رہے ہیں، ان پیغامات میں ’عید کے اشعار‘ خوشی و غمی، قربت و دوری ہر طرح کے جذبات کی ترسیل کرتے ہیں۔
آپ بھی اپنے پسندیدہ ’عید پر اشعار‘ یہاں پوسٹ کیجیئے تاکہ دیگر ممبران اپنے اپنے کارڈز کو آپ کے انتخاب سے مرصع کر سکیں۔

نوازش، کرم، شکریہ، مہربانی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
Dear Friends

Please post your choice of EID POEMS or COUPLETS here to provide our readers some poetry for EID CARDS.

♥ Good luck.♥

کس شان سے آئی ہے جہاں میں سحر عید
خورشید پر انوار ہے خود نغمہ گر عید
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کون سی چیز تجھے دیس کا تحفہ بھیجوں
پیار بھیجوں کہ دعاؤں ذخیرہ بھیجوں
بربط قلب کی پو سوز صدائیں بھیجوں
دل مجروح کی پاکیزہ دعائیں بھیجوں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید لائی ہے خوشیوں کا دلکش سماں
ہے زمیں پر ہمیں آسماں کا گماں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید ہے دوستوں کی یکجائی
ورنہ پھر عید ہی کہاں آئی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کچھ بڑھ گیا ہے عید کے دن ناز دوستی
اے جان دوست عید مبارک ہو آپ کو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
غصے کی تھی یا پیار کی ہمدم نگاہ تھی
دیکھا جو اس نے آج یہاں عید ہوگئی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کب ترے ملنے کی تقریب بنا عید کا چاند
تیری یاد آئی تو دیکھا نہ گیا عید کا چاند
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کبھی تو خواب سا آؤ کہ عید کا دن ہے
رخ جمیل دکھاؤ کہ عید کا دن ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کتنے ترسے ہوئے ہیں خوشیوں کو
وہ جو عیدوں کی بات کرتے ہیں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
ہم نے چاہا کہ انہیں عید پہ کچھ پیش کریں
جس میں تابندہ ستاروں کی چمک شامل ہو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی سچی خوشی تو دوستوں کی دید ہے
سامنے جب وہ نہیں تو خاک اپنی عید ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی بے بہا مسرت سے
رنگ نکھریں گے پھر فضاؤں میں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی شام کو آفاق کی سرخی لے کر
اس کو ڈھونڈیں گے جہاں تک یہ نظر جائے گی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے چاند غریبوں کو پریشاں مت کر
تجھ کو معلوم نہیں زیست گراں ہے کتنی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن بھی کسی لمحے سکوں حاصل نہیں
عید کے دن بھی تری یادوں سے دل غافل نہیں
عید کے دن بھی نشاط زندگی حاصل نہیں
عید کے دن بھی مقدر میں تری محفل نہیں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن اداس سے گھر میں
ایک بیوہ غریب روتی ہے
اس کا بچہ یہ پوچھ بیٹھا ہے
عید بنگلوں ہی میں کیوں آتی ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن بھی قدم گھر سے نہ باہر نکلے
جشن غربت بھی مناتے تو مناتے کیسے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن تو سحاب اپنے سنوارو گیسو
ایسے لگتے ہو کہ جیسے کوئی سودائی ہو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
مہکے گا محبت کا چمن عید کے دن
شاد ہوں گے ارباب وطن عید کے دن
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔

♥ ♥ ♥

۔۔۔♥ ♥ ♥

Jafri Neelofar
Muskurati ,gungunati ,jhoomti aaye gi EID…
bher ke daman mey bharoN ki mahak laye gi EID…
hum pe kab mouquf thi rounaq tumhare bazm ki
hum na honge tab bhi aaye gi zaroor aaye gi EID
Jo hum KO Choor gyee haiN andheri raton mey
unn hi ko dhoond ke laao ke eid aayi hai………..

***

Asif Shafi
کوئی دیس دی گل دسو
اساں عید تے گھر کرئیے
اس مسلے دا حل دسو

***

Sweetjani Sami
eid eid na kar
eid kozar jayega
zayada feshan na kar
nazar lag jayega

***

Safdar Hashmi
عید کے چاند غریبوں کو پریشاں مت کر
تجھ کو معلوم نہیں زیست گراں ہے کتنی

***

Sarmad Ali
Aye Merey Dost Merey Humdam Tujhay Eid Mubarak
Eid K Is Chaand Ki Sab Khushian Mubarak
Laai Yeh Chaand Terey Liey Shadmaani Ka Paygam
Is Chaand Kay Shabab Ki Har Deed Mubarak
Daman Main Phool Hontoon Pay Tabassum Ho Tumharay
Is Eid Kay Haseen Lamhaat Ki Naveed Mubarak
Khushion Ki Aisi Eidain Manai Tu Hazaroon
Har Raat Chaand Raat Ho Din Eid Mubarak
Agar Tumhari Samajh Main Aye Tu Yeh Ghazal Bhi Parhna
Jo Faqat Yohn Likhi Kay Tumhain Eid Mubarak

***

Ujaar Gai Hain Kaiey Ghar
Hum Eid Ki Khushian Manai Kaisey
Apnay Is Dukh Ko Chupain Kaisey
Har Chehra Udaas Hai
Har Aankh Hai Num
Unhain Apnoon Say Bechar Janay Ka Ghum Hai
Meri Qoum Ko Yeh Kis Ki Nazar Kha Gai
Yeh Azaab-E-Ilaahi Hai Kia
Ya Humaray Gunahon Ki Hai Yeh Saza
Hum APnay Aap Say Poochain
Hum Eid Manain Kaisey

***

Syed Salman Ali Shah
Dastoor Hai Dunya Ka Magar Yea Tu Batado.
Hum Kis Say Miley Kis Say Kahen Eid Mubarak.

***

Mubashir Saeed
veyse tu boht keef meiN ghuzree hee ,magar yar!
ek eid hy pardeys meiN ayeee nhiN , acchi
sare halat to pardeys meiN acche heeN magar
jab yahaN eid mnata hooN tu roo deyta hooN

***

Muhammad Zubair Zubair
EID ghum nahi doston khushiyun ka pagaham lati hai
EID k 3 din achchi peda hojati hai
EID ka din hai sowainyan pak kar tayar hain
papa ko dhond rahain hain papa ghar se farar hain

***

Ali Raza
log kehte hai k eid card rasm hai us zamane ki
ye un kay zehnu pa dastak hai jinhay aadat hai bhool jane ki

***

Chand Ghumman
التجا ہے عید کے چاند سے
ذرا نکل آنا سر شام سے
کہیں یہ نہ ہو۔۔
کہ بچے سو جائیں جب آرام سے
ہم بیٹھے ہوں روزے کے اہتمام سے
اک مولانا اچانک ٹی ۔ وی پر
تمھیں پکڑ لائیں کہیں مردان سے۔
ذرا نکل آنا سر شام سے۔
التجا ہے عید کے چاند سے

***

Imran Rashid Yawar
EID AAI HAI TUM NAHI AAY ….KYN MANAAON MAIN EID KI KHUSHYAN

***

Advertisements

Mian Mohammed Bakhsh – میاں محمد بخش November 2, 2010

Posted by Farzana Naina in Poetry.
1 comment so far

میاں محمد بخش پنجاب میں عربی ، فارسی روایت کے آخری معروف ترین صوفی شاعر تھے۔

آپ کی ولادت 1824ء میں میرپور کے علاقہ کھڑی شریف میں ہوئی۔ آپ نے اس علاقے کی مشہور دینی درسگاہ سمر شریف میں تعلیم حاصل کی ۔ حافظ غلام حسین سے علم حدیث پڑھا۔ حافظ ناصر سے دینی علوم کے علاوہ شعر و ادب کے رموز سے بھی آشنائی حاصل کی۔ جلد ہی عربی اور فارسی زبانوں میں عبور حاصل کر لیا۔ اس کے بعد پنجاب بھر کا سفر کیا اور علماء اور مشائخ سے ملاقاتیں کیں ۔واپس آکر ضلع میرپور ہی میں سائیں غلام محمد کے مرید ہوئے۔ آپ کی دانست میں مرشد کامل کا اہم وصف محض صاحب کرامات ہونا ہی نہیں، بلکہ حسن واخلاق کی بلندی کو چھونا بھی ہے۔

میاں محمد بخش حاکمانِ وقت سے دور دور رہتے تھے۔ اکابرین کی سیرت نے آپ کی زندگی میں روحانی انقلاب برپا کر دیا تھا۔ آپ موسیقی کے دقیق رموز پر بھی ماہرانہ نظر رکھتے تھے۔ اسی لئے آپ کی شاعری میں موسیقیت بدرجہ اتم رچی ہوئی ہے۔ آپ نے متعدد کتابیں تصنیف کیں۔ آپ نے جس عہد میں آنکھ کھولی، وہ بڑا پر آشوب دور تھا۔ 1857ء کی جنگ آزادی، انگریزوں کا کشمیر کو سکھ مہاراجہ کے حوالے کرنا ، سکھوں کے پنجاب بھر میں مظالم انہی کے دور میں ہوئے۔

آپ کی شاعری ، فکر اور مطالعے کے ڈانڈے قرآن و حدیث، فارسی شعراء عطار ، رومی ، جامی کے علاوہ منصور حلاج اور خواجہ حافظ سے لے کر پنجابی شعراء تک پھیلے ہوئے ہیں۔ آپ نے اپنی شاعری میں تصوف ہندی اور ایرانی روایت کو جذب کر کے ذاتی اور اجتماعی سوز و گداز کے فیضان سے فکر انگیز اور دلکش پیرائے میں ڈھالا ہے۔ ابن عربی اور مولانا روم کی صوفیانہ روایت ، پنجابی شاعری کی روایت کے اثر سے دو آتشہ ہوگئی ہے۔ آپ کی تخلیق کردہ مشہور داستان ”سفر عشق“ جو کہ قصہ سیف الملوک کے نام سے معروف ہے آپ ہی کے افکار و تخیلات کا پر تو نظر آتی ہے۔ آپ کی شاعری کی تین خصوصیات ہیں، سوزوگداز، پندونصائح کے شائبے کے بغیر لطیف پیرا یہٴ اظہار اورتمثیلی انداز۔

ابن عربی کے فلسفہ وحدت الوجود کی آپ ایسی تعبیر کے حامی ہیں، جو ذرّے ذرّے میں جمالِ حقیقی سے روشناس کرواتی ہے۔ انسان کو تعصبات اور فخر وغرور سے بچاتی ہے۔ اسی رویے نے آپ کی شاعری میں گہرائی اور گیرائی پیدا کی ہے اور فکر کو وسیع اور ہمہ گیر بتایا ہے۔ آپ نے خارجی احوال و کوائف کی ترجمانی کے علاوہ من کی دنیا کی سیاحت بھی کی ہے۔

خارجی اور داخلی زندگی آپ کی شاعری میں الگ الگ نہیں بلکہ باہم مربوط نظر آتی ہیں۔ آپ کے مطابق جیتے جی مرجانا اور مر کر بھی جیتے رہنا ہی فقر ہے۔ آپ اپنی شاعری میں عمل پر بہت زور دیتے ہیں، کیونکہ عمل کے بغیر کوئی بھی کام پورا نہیں ہوتا۔ آپ کی تصنیف ”قصہ سیف الملوک “ کی ساری کی ساری فضا عمل پر ہی قائم کی گئی ہے۔

مصنف: نا معلوم