jump to navigation

Nariyal Ka Perr – ناریل کا پیڑ August 22, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Poetry, Shairy, Urdu.
Tags: , , , , , ,
5 comments
i-dream-of.gif
ساحل کے پاس تنہا

اک پیڑ ناریل کا

اک خواب ڈھونڈھتا ہے

یادوں میں بھیگا بھیگا

آنچل سے نیلے تن میں

آکاش جیسے پیاسے

سیپوں کے ٹوٹے پھوٹے

خالی پڑے ہیں کاسے
وہ ریت بھی نہیں ہے

جس پر لکھا تھا تم نے

ساگر سکوت میں ہے

لہریں بھی سو رہی ہیں

اک قاش بے دلی سے

بس چاند کی پڑی ہے

کومل سی یاد کوئی
تنہا جہاں کھڑی ہے

اُس ناریل کے نیچے  ۔
 
Sparkle Flower tree
Advertisements

Mother – ماں May 11, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Poetry, Shairy, Urdu.
Tags: , , , , , , , , ,
2 comments

بیٹھی ہے مصلے پہ شب تار مری ماں

اس رات کا ہے مطلع انوار مری ماں

جسموں کو جلاتے ہوئے سورج سے یہ کہدو

اس دشت میں ہ

ے سایٔہ دیوار مری ماں

دنیا سے الجھ کر میں چلا آتا ہوں گھر میں

دنیا سے بچالیتی ہے ہر بار مری ماں

بچے کی طرح نیند سے اٹھا تو کھلا یہ

ہے میرے لئے دولت بیدار مری ماں

میں چا

ند کا کہہ دوں تو دلاتی ہے مجھے چاند

کرتی ہی نہیں ہے کبھی انکار مری ماں

اس ذات کو مجھ سے کوئی لالچ ہی نہیں ہے

ایثار ہے ایثار ہے ایثار مری ماں

اس عمر میں میں نے تو عذیر اتنا ہی جانا

اس ظلم ک

ی دنیا میں فقط پیار مری ماں

جو ابر پھیل رہا ہے وہ س

ب پر برسے گا

کہ ماں کسی کی ہو ہر حال میں دعا دے گی

Heaven gave us a special gift to
make life worthwhile–
someone who wo

uld always be there
to lift our spirit and make us smile;
some

one with a loving heart
filled with tenderness,
to share every tear,
and each success.

Yes, God, in his
special way,
blessed us with a wonderful mother,
the one we always love
more than any other.

ماں ایک خوشبو ہے جس سے سارا جہاں مہک اٹھتا ہے

ماں ایک چھاؤں ہے جس کے پاس سستانے سے ساری تھکن اتر جاتی ہے

ماں ایک دعا ہے جو سر پہ سدا سایہ فگن ہوتی ہے

ماں ایک مشعل ہ

ے جو ہمیشہ راہ دکھاتی ہے

ماں ایک ایسی آہ بھی ہے جو سیدھی عرش پر جاتی ہے

ماں جو اپنے پہلوٹھی کے بچے کو لیئے پھول سی کھل جاتی ہے

کہ کیسے اسے سلائے، کھلائے، پلائے،  دیکھ دیکھ مسکرائے

اپنی گود میں ایک نازک کھلونے کی طرح لیئے حفاظت کرتی ہے

بدلتے مو

سموں کی سختیوں میں بچاتی ہے

صحت و تندرستی کے ساتھ پالتی ہے

دکھ درد تکلیف میں بھی اوس کے قطروں کی طرح مسکراتی ہے

ماں، جس کی محبت پاش نظروں کا حصار چاند کے ہالے سے زیادہ خوبصورت  ہے

جو بیٹیوں

کو دعائیں دیتے نہیں تھکتی

جو بیٹوں  کی بلائیں اتارتے نہں تھکتی

اسی لیئے ٬ماں٬ کسی کی بھی ہو لیکن عظیم ہوتی ہے

اس کے قدموں تلے جنت ہوتی ہے۔

 

Gold Wrapping Paper

The story goes that some time

ago a mother punished her five year old daughter for wasting a roll of expensive gold wrapping paper.

Money was tight and she became even more upset when the child used the gold paper to decorate a box to put under the Christmas tree.

Nevertheless, the little girl brought the gift box to her mother the next morning and then said, “This is for you, Momma.”

The mother was embarrassed by her earlier over reaction, but her anger flared again when she opened the box and found it was empty. She spoke to her daughter in a harsh manner.

“Don’t you know, young lady, when you give someone a present there’s supposed to be something inside the package?”

She had tears in her eyes and said, “Oh, Momma, it’s not empty! I blew kisses into it until it was full.”

The mother was crushed. She fell on her knees and put her arms around her little girl, and she begged her forgiveness for her thoughtless anger.

An accident took the life of the child only a short time later, and it is told that the mother kept that gold box by her bed for all the years of her life.

Whenever she was discouraged or faced difficult problems she would open the box and take out an imaginary kiss and remember the love of the child who had put it there.

In a very real sense, each of us, as human beings, have been given a Golden box filled with unconditional love and kisses from our children, family, friends and GOD.

There is no more precious possession anyone could hold.

اس طرح میرے گناہوں کو وہ دھو دیتی ہے

ماں جب غصے میں ہوتی ہے تو رو دیتی ہے

 

729492p0pak4hng6.gif

کفر کے سب کام April 20, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Nazm, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , ,
1 comment so far

شمشاد صاحب کی گذارش پر ایک کلام پیش خدمت ہے، حالات کے تحت یہی لکھا جاسکا ہے، آپ سب کی رائے کی منتظر رہوں گی۔

نام اسلام کا لو کفر کے سب کام کرو

وہ جو ہے رحمت عالم اسے بدنام کرو

دینی بھائی تمہیں کہتے ہوئے شرم آتی ہے

سوچتے سوچتے چھاتی یہ پھٹی جاتی ہے

قتل معصوموں کا جس نے بھی سکھایا ہے تمہیں

کاش تم سمجھو کہ شیطان بنایا ہے تمہیں

حیف صد حیف کہ تم خود کو مسلمان کہو

خود کشی کو بھی شہادت کہو ایمان کہو

جس نے خوں ریزی کو ایمان بنایا ہوگا

اس نے اپنا کوئی قرآن بنایا ہوگا

میرا قرآن سکھاتا ہے محبت کرنا

کوئی دشمن بھی جو نادم ہو تو شفقت کرنا

لوگ کہتے ہیں کہ تم لوگ مسلمان نہیں

میں یہ کہتی ہوں کہ دراصل تم انسان نہیں

***

بہت اچھے اشعار ہیں فرزانہ نیناں صاحبہ، بہت داد قبول کیجیئے

جس نے خوں ریزی کو ایمان بنایا ہوگا

اس نے اپنا کوئی قرآن بنایا ہوگا

واہ واہ واہ، سبحان اللہ۔

الف عین,  حسن علوی , دوست , سارہ خان , سیدہ شگفتہ ,

شاکرالقادری , شمشاد , فاتح , قیصرانی , محب علوی , محمد

وارث , ڈاکٹر عباس

فرزانہ ، لاجواب کلام کیا ہے ۔ مجھے الفاظ نہیں مل رہے کہ کچھ لکھ سکوں ۔ اللہ کرے کہ آپ کے الفاظ ، آپ کی سوچ ایسے سفاک اور قاتل لوگوں کی ہدایت کا سبب بن جائے ۔ آمین ۔سیدہ شگفتہ

بہت زبردست لکھا ہے سسٹر ۔سارہ خان

بہت خوب۔۔۔۔۔۔۔ ضبط

بروقت اور برمحل کلام ہے اور اس طرح کی شاعری کی ضرورت بھی ہے۔

شمشاد کی فرمائش اور فرزانہ کے فرمائش پوری کرنے کا شکریہ۔محب علوی

بہت خوب آپا میں نے آج ہی آپ کا یہ خوبصورت کلام پڑا۔ بہت اچھا لگا۔ حسن علوی

بہت شکریہ نیناں جی۔
موجودہ حالات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے بہت ہی اچھے اشعار ہیں۔ شمشاد

آپ تمام کی حوصلہ افزائی پر ممنون ہوں، یہ تو فقط جذبات ہیں
اللہ تعالی ان لفظوں میں تاثیر بھی ڈال سکتے ہیں جس کا ہر محب وطن پاکستانی منتظر ہے،
میں کیا میری بساط کیا، ہم وطن سے دور ہیں لیکن دل اسی کے نام پر دھڑکتا ہے،
خمیر تو اسی مٹی کا ہوں، اس کی مہک اپنی جانب کھینچتی ہے،
خدا ہماری ارض پاک کو تباہی و بربادی سے نکالے اور عوام کو عقل سلیم عطا فرمائے۔ آمین
بس یہی میرے دل کی خواہش و دعا ہے۔

اہل محفل بہت شکریہ ۔ فرزانہ نیناں

green.gif green image by elsyta2001

Manzil March 27, 2008

Posted by Farzana Naina in Poetry.
Tags: , ,
5 comments

butt35.gifglitter textglitter textglitter textglitter textglitter textbutt35.gifbutt35.gifmanzil-ko-rehguzar-mein-rose-framed.jpgbutterfly-211.gifbutt35.gif

Mere qareeb hiمرے قریب ہی۔ March 25, 2008

Posted by Farzana Naina in Farzana, Ghazal, Kavita, Naina, Pakistani, Pakistani Poetess, Poetess, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , ,
4 comments

angel-roseMere Qareeb hi yellowbutt83.gifflower_glitter_graphics_6a.gifbutt83.gif

Rasme Karokari – رسم کارو کاری October 22, 2007

Posted by Farzana Naina in Ghazal, Kavita, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , , , , , , , ,
1 comment so far

Rasme Karokari red