jump to navigation

International Women Day March 8, 2008

Posted by Farzana Naina in Ghazal, Kavita, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , , ,
3 comments

bahisht-se2.jpg3-girls.gifmilegi-meri-nishani-7.jpg575188lex4stl4ty1.gif575188lex4stl4ty1.gifmilegi-meri-nishani-8.jpg575188lex4stl4ty1.gif

Saghar Siddiqui – ساغر صدیقی March 7, 2008

Posted by Farzana Naina in Ghazal, Kavita, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , , ,
17 comments

star-silver-2

Saghar Siddiqui (1928-1974)

was an Urdu poet from Pakistan.  In spite of his ruined and homeless alone life, he remained famous and successful till his death among the masses. Saghar is also known as a saint and when he died, he left nothing but a pet, his dog, who also died on the same foot path where Saghar died a few days earlier.

Biography

Saghar was born in 1928 in Ambala as Muhammad Akhtar. History has no record of Saghar’s personal life and very less is known as he never spoke to anyone in this regard.

Saghar started poetry at very young age. At age 16, he would regularly attend mushairas.At aged 19, he migrated to Pakistan in 1947 and settled in Lahore. At the time of partition, he was only 19 years old. In those days with his slim appearance, wearing pants and boski (yellow silky cloth) shirts, with curly hair, and reciting beautiful ghazals in a melodious voice, he became a huge success. He had some tragic turns in his life. He continued to write poetry for the film industry and moved on to publish a literary magazine. The magazine was a critical success but a commercial flop. Disappointed, Saghar shut down the magazine. In his later life, he fell into depression, financially ruined and addicted to drugs.

Sometimes he would have to sell his poetry to other poets for a few rupees. He would use the waste paper spread around to light fires to stay warm during winter nights.

Death

On 19 July 1974, he was found dead on a roadside in Lahore at the age of 46. His dead body was found one early morning outside one of the shops. He was buried at the Miani Sahib graveyard. His dog also died there after a few days of Saghar’s death. Despite his shattered life, some of his verses (ash’aar) are among the best in Urdu poetry. It is unbelievable that he kept his inner self so pure and so transcending. He will always be shining like a star in Urdu poetry.

نام محمد اختر اور تخلص ساغر تھا۔۱۹۲۸ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے۔گھر میں بہت تنگ دستی تھی اس لیے ان کی تعلیم واجبی سی ہوئی۔۱۵؍بر س کی عمر میں شعر کہنے لگے تھے۔ شروع میں قلمی نام ناصر حجازی تھا لیکن جلد ہی بدل کر ساغر صدیقی ہوگئے۔ترنم بہت اچھا تھا۔لطیف گورداس پوری سے اصلاح لینے لگے۔۱۹۴۷ء میں وہ لاہور آگئے۔ ان کا کلام مختلف پرچوں میں چھپنے لگا۔ انھوں نے متعدد فلموں کے گانے لکھے جو بہت مقبول ہوئے۔۱۸؍جولائی ۱۹۷۴ء کو لاہور میں انتقال کرگئے۔

ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں:

’زہر آرزو‘، ’غم بہار‘، شب آگہی‘، ’تیشۂ دل‘، ’لوح جنوں‘، ’سبز گنبد‘، ’مقتل گل‘۔ ’’کلیات ساغر ‘‘ ۔

آؤ اک سجدہ کریں عالم مدہوشی میں  

لوگ کہتے ہیں کہ ساغرؔ کو خدا یاد نہیں

؎  

آج پھر بجھ گئے جل جل کے امیدوں کے چراغ  

آج پھر تاروں بھری رات نے دم توڑ دیا

؎  

اب اپنی حقیقت بھی ساغرؔ بے ربط کہانی لگتی ہے  

دنیا کی حقیقت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے  

؎

اب نہ آئیں گے روٹھنے والے  

دیدۂ اشک بار چپ ہو جا

؎

اب کہاں ایسی طبیعت والے  

چوٹ کھا کر جو دعا کرتے تھے  

؎

ایک نغمہ اک تارا ایک غنچہ ایک جام  

اے غم دوراں غم دوراں تجھے میرا سلام

؎

اے دل بے قرار چپ ہو جا  

جا چکی ہے بہار چپ ہو جا  

؎

اے عدم کے مسافرو ہشیار  

راہ میں زندگی کھڑی ہوگی  

؎

بھولی ہوئی صدا ہوں مجھے یاد کیجئے  

تم سے کہیں ملا ہوں مجھے یاد کیجئے

؎

بے ساختہ بکھر گئی جلووں کی کائنات  

آئینہ ٹوٹ کر تری انگڑائی بن گیا  

؎

تقدیر کے چہرہ کی شکن دیکھ رہا ہوں  

آئینۂ حالات ہے دنیا تیری کیا ہے   

؎

 تم گئے رونق بہار گئی  

تم نہ جاؤ بہار کے دن ہیں   

؎

جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں  

اک ہوش کی ساعت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے   

؎

جس دور میں لٹ جائے غریبوں کمائی  

اس دور کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی ہے

؎  

 جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی  

اس عہد کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی ہے   

؎

جن سے افسانۂ ہستی میں تسلسل تھا کبھی  

ان محبت کی روایات نے دم توڑ دیا  

؎

جن سے زندہ ہو یقین و آگہی کی آبرو  

عشق کی راہوں میں کچھ ایسے گماں کرتے چلو   

؎

جو چمن کی حیات کو ڈس لے  

اس کلی کو ببول کہتا ہوں

؎

جھلملاتے ہوئے اشکوں کی لڑی ٹوٹ گئی  

جگمگاتی ہوئی برسات نے دم توڑ دیا  

؎

چراغ طور جلاؤ بڑا اندھیرا ہے  

ذرا نقاب اٹھاؤ بڑا اندھیرا ہے

؎

چھلکے ہوئے تھے جام پریشاں تھی زلف یار  

کچھ ایسے حادثات سے گھبرا کے پی گیا  

؎

حوروں کی طلب اور مے و ساغر سے ہے نفرت  

زاہد ترے عرفان سے کچھ بھول ہوئی ہے  

؎

خاک اڑتی ہے تیری گلیوں میں  

زندگی کا وقار دیکھا ہے  

؎

دنیائے حادثات ہے اک دردناک گیت  

دنیائے حادثات سے گھبرا کے پی گیا  

؎

رنگ اڑنے لگا ہے پھولوں کا  

اب تو آ جاؤ! وقت نازک ہے  

؎

زلف برہم کی جب سے شناسا ہوئی  

زندگی کا چلن مجرمانہ ہوا  

؎

 زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے  

جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں  

؎

غم کے مجرم خوشی کے مجرم ہیں  

لوگ اب زندگی کے مجرم ہیں  

؎

لوگ کہتے ہیں رات بیت چکی  

مجھ کو سمجھاؤ! میں شرابی ہوں  

؎

مر گئے جن کے چاہنے والے  

ان حسینوں کی زندگی کیا ہے  

؎

 مسکراؤ بہار کے دن ہیں  

گل کھلاؤ بہار کے دن ہیں  

؎

موت کہتے ہیں جس کو اے ساغرؔ  

زندگی کی کوئی کڑی ہوگی  

؎

میں آدمی ہوں کوئی فرشتہ نہیں حضور  

میں آج اپنی ذات سے گھبرا کے پی گیا  

؎

میں تلخی حیات سے گھبرا کے پی گیا  

غم کی سیاہ رات سے گھبرا کے پی گیا  

؎

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو  

ہم سے کہتے ہیں وہی عہد وفا یاد نہیں  

؎

نغموں کی ابتدا تھی کبھی میرے نام سے  

اشکوں کی انتہا ہوں مجھے یاد کیجئے  

؎

کانٹے تو خیر کانٹے ہیں اس کا گلہ ہی کیا  

پھولوں کی واردات سے گھبرا کے پی گیا  

؎

کل جنہیں چھو نہیں سکتی تھی فرشتوں کی نظر  

آج وہ رونق بازار نظر آتے ہیں  

؎

ہم بنائیں گے یہاں ساغرؔ نئی تصویر شوق  

ہم تخیل کے مجدد ہم تصور کے امام  

؎

ہے دعا یاد مگر حرف دعا یاد نہیں  

میرے نغمات کو انداز نوا یاد نہیں   

؎

یہ کناروں سے کھیلنے والے  

ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو

 ؎  

Silver rose welcome 12

حادثے  کیا  کیا  تمہاری  بے  رخی  سے  ہوگۓ

ساری  دنیا  کے  لیۓ  ہم  اجنبی  سے  ہوگۓ

کچھ  تمہارے  گیسوؤں  کی  برہمی  سے  ہوگۓ

کچھ  اندھیرے  میرے  گھر  میں  روشنی  سے  ہوگۓ

بندہ پرور  کھل  گیا  ہے  آستانوں  کا  بھرم

آشنا  کچھ  لوگ  راز  بندگی  سے  ہوگۓ

گردش دوراں  زمانے  کی  نظر  آنکھوں  کی  نیند

کتنے  دشمن  ایک  رسم  دوستی  سے  ہوگۓ

زندگی  آگاہ  تھی  صیاد  کی  تدبیر  سے

ہم  اسیر  دام  گل  اپنی  خوشی  سے  ہوگۓ

اب  کہاں  اے  دوست  چشم  منتظر  کی  آبرو

اب  تو  ان  کے  عہد و پیماں  ہر  کسی  سے  ہوگۓ

Blue flower candleKuliyat e sagharBlue flower candleSilver bar 12Thanks Quill 1