jump to navigation

Eidul Azha – عید الاضحی November 17, 2010

Posted by Farzana Naina in Eid Mubarak, Festivals, Greetings, Islam, Poetry, Shairy, Sher, Urdu, Urdu Poetry.
Tags: , , , ,
1 comment so far

کیسے مٹاؤں زخمی ہتھیلی سے مہندی کے گل بوٹے

اب تو عیدی دینے والے ہاتھ  کا  لمس بھی  یاد  نہیں

 

Rose

♥ معزز دوستو تسلیمات♥

عید کا پر مسرت موقعہ قریب ہے، عید کارڈوں کے کبوتر اپنے پیاروں کے پیغام لے جانے کے لئیے اڑانیں بھر رہے ہیں، ان پیغامات میں ’عید کے اشعار‘ خوشی و غمی، قربت و دوری ہر طرح کے جذبات کی ترسیل کرتے ہیں۔
آپ بھی اپنے پسندیدہ ’عید پر اشعار‘ یہاں پوسٹ کیجیئے تاکہ دیگر ممبران اپنے اپنے کارڈز کو آپ کے انتخاب سے مرصع کر سکیں۔

نوازش، کرم، شکریہ، مہربانی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
Dear Friends

Please post your choice of EID POEMS or COUPLETS here to provide our readers some poetry for EID CARDS.

♥ Good luck.♥

کس شان سے آئی ہے جہاں میں سحر عید
خورشید پر انوار ہے خود نغمہ گر عید
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کون سی چیز تجھے دیس کا تحفہ بھیجوں
پیار بھیجوں کہ دعاؤں ذخیرہ بھیجوں
بربط قلب کی پو سوز صدائیں بھیجوں
دل مجروح کی پاکیزہ دعائیں بھیجوں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید لائی ہے خوشیوں کا دلکش سماں
ہے زمیں پر ہمیں آسماں کا گماں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید ہے دوستوں کی یکجائی
ورنہ پھر عید ہی کہاں آئی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کچھ بڑھ گیا ہے عید کے دن ناز دوستی
اے جان دوست عید مبارک ہو آپ کو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
غصے کی تھی یا پیار کی ہمدم نگاہ تھی
دیکھا جو اس نے آج یہاں عید ہوگئی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کب ترے ملنے کی تقریب بنا عید کا چاند
تیری یاد آئی تو دیکھا نہ گیا عید کا چاند
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کبھی تو خواب سا آؤ کہ عید کا دن ہے
رخ جمیل دکھاؤ کہ عید کا دن ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
کتنے ترسے ہوئے ہیں خوشیوں کو
وہ جو عیدوں کی بات کرتے ہیں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
ہم نے چاہا کہ انہیں عید پہ کچھ پیش کریں
جس میں تابندہ ستاروں کی چمک شامل ہو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی سچی خوشی تو دوستوں کی دید ہے
سامنے جب وہ نہیں تو خاک اپنی عید ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی بے بہا مسرت سے
رنگ نکھریں گے پھر فضاؤں میں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کی شام کو آفاق کی سرخی لے کر
اس کو ڈھونڈیں گے جہاں تک یہ نظر جائے گی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے چاند غریبوں کو پریشاں مت کر
تجھ کو معلوم نہیں زیست گراں ہے کتنی
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن بھی کسی لمحے سکوں حاصل نہیں
عید کے دن بھی تری یادوں سے دل غافل نہیں
عید کے دن بھی نشاط زندگی حاصل نہیں
عید کے دن بھی مقدر میں تری محفل نہیں
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن اداس سے گھر میں
ایک بیوہ غریب روتی ہے
اس کا بچہ یہ پوچھ بیٹھا ہے
عید بنگلوں ہی میں کیوں آتی ہے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن بھی قدم گھر سے نہ باہر نکلے
جشن غربت بھی مناتے تو مناتے کیسے
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
عید کے دن تو سحاب اپنے سنوارو گیسو
ایسے لگتے ہو کہ جیسے کوئی سودائی ہو
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
مہکے گا محبت کا چمن عید کے دن
شاد ہوں گے ارباب وطن عید کے دن
♥ ♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥♥ ♥ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔۔۔۔۔۔۔♥ ♥ ♥۔♥ ♥ ♥
۔۔۔۔۔۔۔عید مبارک۔۔۔۔۔۔۔۔

♥ ♥ ♥

۔۔۔♥ ♥ ♥

Jafri Neelofar
Muskurati ,gungunati ,jhoomti aaye gi EID…
bher ke daman mey bharoN ki mahak laye gi EID…
hum pe kab mouquf thi rounaq tumhare bazm ki
hum na honge tab bhi aaye gi zaroor aaye gi EID
Jo hum KO Choor gyee haiN andheri raton mey
unn hi ko dhoond ke laao ke eid aayi hai………..

***

Asif Shafi
کوئی دیس دی گل دسو
اساں عید تے گھر کرئیے
اس مسلے دا حل دسو

***

Sweetjani Sami
eid eid na kar
eid kozar jayega
zayada feshan na kar
nazar lag jayega

***

Safdar Hashmi
عید کے چاند غریبوں کو پریشاں مت کر
تجھ کو معلوم نہیں زیست گراں ہے کتنی

***

Sarmad Ali
Aye Merey Dost Merey Humdam Tujhay Eid Mubarak
Eid K Is Chaand Ki Sab Khushian Mubarak
Laai Yeh Chaand Terey Liey Shadmaani Ka Paygam
Is Chaand Kay Shabab Ki Har Deed Mubarak
Daman Main Phool Hontoon Pay Tabassum Ho Tumharay
Is Eid Kay Haseen Lamhaat Ki Naveed Mubarak
Khushion Ki Aisi Eidain Manai Tu Hazaroon
Har Raat Chaand Raat Ho Din Eid Mubarak
Agar Tumhari Samajh Main Aye Tu Yeh Ghazal Bhi Parhna
Jo Faqat Yohn Likhi Kay Tumhain Eid Mubarak

***

Ujaar Gai Hain Kaiey Ghar
Hum Eid Ki Khushian Manai Kaisey
Apnay Is Dukh Ko Chupain Kaisey
Har Chehra Udaas Hai
Har Aankh Hai Num
Unhain Apnoon Say Bechar Janay Ka Ghum Hai
Meri Qoum Ko Yeh Kis Ki Nazar Kha Gai
Yeh Azaab-E-Ilaahi Hai Kia
Ya Humaray Gunahon Ki Hai Yeh Saza
Hum APnay Aap Say Poochain
Hum Eid Manain Kaisey

***

Syed Salman Ali Shah
Dastoor Hai Dunya Ka Magar Yea Tu Batado.
Hum Kis Say Miley Kis Say Kahen Eid Mubarak.

***

Mubashir Saeed
veyse tu boht keef meiN ghuzree hee ,magar yar!
ek eid hy pardeys meiN ayeee nhiN , acchi
sare halat to pardeys meiN acche heeN magar
jab yahaN eid mnata hooN tu roo deyta hooN

***

Muhammad Zubair Zubair
EID ghum nahi doston khushiyun ka pagaham lati hai
EID k 3 din achchi peda hojati hai
EID ka din hai sowainyan pak kar tayar hain
papa ko dhond rahain hain papa ghar se farar hain

***

Ali Raza
log kehte hai k eid card rasm hai us zamane ki
ye un kay zehnu pa dastak hai jinhay aadat hai bhool jane ki

***

Chand Ghumman
التجا ہے عید کے چاند سے
ذرا نکل آنا سر شام سے
کہیں یہ نہ ہو۔۔
کہ بچے سو جائیں جب آرام سے
ہم بیٹھے ہوں روزے کے اہتمام سے
اک مولانا اچانک ٹی ۔ وی پر
تمھیں پکڑ لائیں کہیں مردان سے۔
ذرا نکل آنا سر شام سے۔
التجا ہے عید کے چاند سے

***

Imran Rashid Yawar
EID AAI HAI TUM NAHI AAY ….KYN MANAAON MAIN EID KI KHUSHYAN

***

Nariyal Ka Perr – ناریل کا پیڑ August 22, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Poetry, Shairy, Urdu.
Tags: , , , , , ,
5 comments
i-dream-of.gif
ساحل کے پاس تنہا

اک پیڑ ناریل کا

اک خواب ڈھونڈھتا ہے

یادوں میں بھیگا بھیگا

آنچل سے نیلے تن میں

آکاش جیسے پیاسے

سیپوں کے ٹوٹے پھوٹے

خالی پڑے ہیں کاسے
وہ ریت بھی نہیں ہے

جس پر لکھا تھا تم نے

ساگر سکوت میں ہے

لہریں بھی سو رہی ہیں

اک قاش بے دلی سے

بس چاند کی پڑی ہے

کومل سی یاد کوئی
تنہا جہاں کھڑی ہے

اُس ناریل کے نیچے  ۔
 
Sparkle Flower tree

Mother – ماں May 11, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Poetry, Shairy, Urdu.
Tags: , , , , , , , , ,
2 comments

بیٹھی ہے مصلے پہ شب تار مری ماں

اس رات کا ہے مطلع انوار مری ماں

جسموں کو جلاتے ہوئے سورج سے یہ کہدو

اس دشت میں ہ

ے سایٔہ دیوار مری ماں

دنیا سے الجھ کر میں چلا آتا ہوں گھر میں

دنیا سے بچالیتی ہے ہر بار مری ماں

بچے کی طرح نیند سے اٹھا تو کھلا یہ

ہے میرے لئے دولت بیدار مری ماں

میں چا

ند کا کہہ دوں تو دلاتی ہے مجھے چاند

کرتی ہی نہیں ہے کبھی انکار مری ماں

اس ذات کو مجھ سے کوئی لالچ ہی نہیں ہے

ایثار ہے ایثار ہے ایثار مری ماں

اس عمر میں میں نے تو عذیر اتنا ہی جانا

اس ظلم ک

ی دنیا میں فقط پیار مری ماں

جو ابر پھیل رہا ہے وہ س

ب پر برسے گا

کہ ماں کسی کی ہو ہر حال میں دعا دے گی

Heaven gave us a special gift to
make life worthwhile–
someone who wo

uld always be there
to lift our spirit and make us smile;
some

one with a loving heart
filled with tenderness,
to share every tear,
and each success.

Yes, God, in his
special way,
blessed us with a wonderful mother,
the one we always love
more than any other.

ماں ایک خوشبو ہے جس سے سارا جہاں مہک اٹھتا ہے

ماں ایک چھاؤں ہے جس کے پاس سستانے سے ساری تھکن اتر جاتی ہے

ماں ایک دعا ہے جو سر پہ سدا سایہ فگن ہوتی ہے

ماں ایک مشعل ہ

ے جو ہمیشہ راہ دکھاتی ہے

ماں ایک ایسی آہ بھی ہے جو سیدھی عرش پر جاتی ہے

ماں جو اپنے پہلوٹھی کے بچے کو لیئے پھول سی کھل جاتی ہے

کہ کیسے اسے سلائے، کھلائے، پلائے،  دیکھ دیکھ مسکرائے

اپنی گود میں ایک نازک کھلونے کی طرح لیئے حفاظت کرتی ہے

بدلتے مو

سموں کی سختیوں میں بچاتی ہے

صحت و تندرستی کے ساتھ پالتی ہے

دکھ درد تکلیف میں بھی اوس کے قطروں کی طرح مسکراتی ہے

ماں، جس کی محبت پاش نظروں کا حصار چاند کے ہالے سے زیادہ خوبصورت  ہے

جو بیٹیوں

کو دعائیں دیتے نہیں تھکتی

جو بیٹوں  کی بلائیں اتارتے نہں تھکتی

اسی لیئے ٬ماں٬ کسی کی بھی ہو لیکن عظیم ہوتی ہے

اس کے قدموں تلے جنت ہوتی ہے۔

 

Gold Wrapping Paper

The story goes that some time

ago a mother punished her five year old daughter for wasting a roll of expensive gold wrapping paper.

Money was tight and she became even more upset when the child used the gold paper to decorate a box to put under the Christmas tree.

Nevertheless, the little girl brought the gift box to her mother the next morning and then said, “This is for you, Momma.”

The mother was embarrassed by her earlier over reaction, but her anger flared again when she opened the box and found it was empty. She spoke to her daughter in a harsh manner.

“Don’t you know, young lady, when you give someone a present there’s supposed to be something inside the package?”

She had tears in her eyes and said, “Oh, Momma, it’s not empty! I blew kisses into it until it was full.”

The mother was crushed. She fell on her knees and put her arms around her little girl, and she begged her forgiveness for her thoughtless anger.

An accident took the life of the child only a short time later, and it is told that the mother kept that gold box by her bed for all the years of her life.

Whenever she was discouraged or faced difficult problems she would open the box and take out an imaginary kiss and remember the love of the child who had put it there.

In a very real sense, each of us, as human beings, have been given a Golden box filled with unconditional love and kisses from our children, family, friends and GOD.

There is no more precious possession anyone could hold.

اس طرح میرے گناہوں کو وہ دھو دیتی ہے

ماں جب غصے میں ہوتی ہے تو رو دیتی ہے

 

729492p0pak4hng6.gif

کفر کے سب کام April 20, 2008

Posted by Farzana Naina in Kavita, Nazm, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , ,
1 comment so far

شمشاد صاحب کی گذارش پر ایک کلام پیش خدمت ہے، حالات کے تحت یہی لکھا جاسکا ہے، آپ سب کی رائے کی منتظر رہوں گی۔

نام اسلام کا لو کفر کے سب کام کرو

وہ جو ہے رحمت عالم اسے بدنام کرو

دینی بھائی تمہیں کہتے ہوئے شرم آتی ہے

سوچتے سوچتے چھاتی یہ پھٹی جاتی ہے

قتل معصوموں کا جس نے بھی سکھایا ہے تمہیں

کاش تم سمجھو کہ شیطان بنایا ہے تمہیں

حیف صد حیف کہ تم خود کو مسلمان کہو

خود کشی کو بھی شہادت کہو ایمان کہو

جس نے خوں ریزی کو ایمان بنایا ہوگا

اس نے اپنا کوئی قرآن بنایا ہوگا

میرا قرآن سکھاتا ہے محبت کرنا

کوئی دشمن بھی جو نادم ہو تو شفقت کرنا

لوگ کہتے ہیں کہ تم لوگ مسلمان نہیں

میں یہ کہتی ہوں کہ دراصل تم انسان نہیں

***

بہت اچھے اشعار ہیں فرزانہ نیناں صاحبہ، بہت داد قبول کیجیئے

جس نے خوں ریزی کو ایمان بنایا ہوگا

اس نے اپنا کوئی قرآن بنایا ہوگا

واہ واہ واہ، سبحان اللہ۔

الف عین,  حسن علوی , دوست , سارہ خان , سیدہ شگفتہ ,

شاکرالقادری , شمشاد , فاتح , قیصرانی , محب علوی , محمد

وارث , ڈاکٹر عباس

فرزانہ ، لاجواب کلام کیا ہے ۔ مجھے الفاظ نہیں مل رہے کہ کچھ لکھ سکوں ۔ اللہ کرے کہ آپ کے الفاظ ، آپ کی سوچ ایسے سفاک اور قاتل لوگوں کی ہدایت کا سبب بن جائے ۔ آمین ۔سیدہ شگفتہ

بہت زبردست لکھا ہے سسٹر ۔سارہ خان

بہت خوب۔۔۔۔۔۔۔ ضبط

بروقت اور برمحل کلام ہے اور اس طرح کی شاعری کی ضرورت بھی ہے۔

شمشاد کی فرمائش اور فرزانہ کے فرمائش پوری کرنے کا شکریہ۔محب علوی

بہت خوب آپا میں نے آج ہی آپ کا یہ خوبصورت کلام پڑا۔ بہت اچھا لگا۔ حسن علوی

بہت شکریہ نیناں جی۔
موجودہ حالات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے بہت ہی اچھے اشعار ہیں۔ شمشاد

آپ تمام کی حوصلہ افزائی پر ممنون ہوں، یہ تو فقط جذبات ہیں
اللہ تعالی ان لفظوں میں تاثیر بھی ڈال سکتے ہیں جس کا ہر محب وطن پاکستانی منتظر ہے،
میں کیا میری بساط کیا، ہم وطن سے دور ہیں لیکن دل اسی کے نام پر دھڑکتا ہے،
خمیر تو اسی مٹی کا ہوں، اس کی مہک اپنی جانب کھینچتی ہے،
خدا ہماری ارض پاک کو تباہی و بربادی سے نکالے اور عوام کو عقل سلیم عطا فرمائے۔ آمین
بس یہی میرے دل کی خواہش و دعا ہے۔

اہل محفل بہت شکریہ ۔ فرزانہ نیناں

green.gif green image by elsyta2001

Mere qareeb hiمرے قریب ہی۔ March 25, 2008

Posted by Farzana Naina in Farzana, Ghazal, Kavita, Naina, Pakistani, Pakistani Poetess, Poetess, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , ,
4 comments

angel-roseMere Qareeb hi yellowbutt83.gifflower_glitter_graphics_6a.gifbutt83.gif

Saghar Siddiqui – ساغر صدیقی March 7, 2008

Posted by Farzana Naina in Ghazal, Kavita, Poetry, Shairy, Sher, Urdu.
Tags: , , , , , ,
17 comments

star-silver-2

Saghar Siddiqui (1928-1974) was an Urdu poet from Pakistan.  In spite of his ruined and homeless alone life, he remained famous and successful till his death among the masses. Saghar is also known as a saint and when he died, he left nothing but a pet, his dog, who also died on the same foot path where Saghar died a few days earlier.

Biography

Saghar was born in 1928 in Ambala as Muhammad Akhtar. History has no record of Saghar’s personal life and very less is known as he never spoke to anyone in this regard.

Saghar started poetry at very young age. At age 16, he would regularly attend mushairas.At aged 19, he migrated to Pakistan in 1947 and settled in Lahore. At the time of partition, he was only 19 years old. In those days with his slim appearance, wearing pants and boski (yellow silky cloth) shirts, with curly hair, and reciting beautiful ghazals in a melodious voice, he became a huge success. He had some tragic turns in his life. He continued to write poetry for the film industry and moved on to publish a literary magazine. The magazine was a critical success but a commercial flop. Disappointed, Saghar shut down the magazine. In his later life, he fell into depression, financially ruined and addicted to drugs.

Sometimes he would have to sell his poetry to other poets for a few rupees. He would use the waste paper spread around to light fires to stay warm during winter nights.

Death

On 19 July 1974, he was found dead on a roadside in Lahore at the age of 46. His dead body was found one early morning outside one of the shops. He was buried at the Miani Sahib graveyard. His dog also died there after a few days of Saghar’s death. Despite his shattered life, some of his verses (ash’aar) are among the best in Urdu poetry. It is unbelievable that he kept his inner self so pure and so transcending. He will always be shining like a star in Urdu poetry.

حادثے  کیا  کیا  تمہاری  بے  رخی  سے  ہوگیۓ

ساری  دنیا  کے  لیۓ  ہم  اجنبی  سے  ہوگیۓ

کچھ  تمہرے  گیسوؤں  کی  برہمی  سے  ہوگیۓ

کچھ  اندھیرے  میرے  گھر  میں  روشنی  سے  ہوگیۓ

بندہ پرور  کھل  گیا  ہے  آستانوں  کا  بھرم

آشنا  کچھ  لوگ  راز  بندگی  سے  ہوگیۓ

گردش دوراں  زمانے  کی  نظر  آنکھوں  کی  نیند

کتنے  دشمن  ایک  رسم  دوستی  سے  ہوگیۓ

زندگی  آگاہ  تھی  صیاد  کی  تدبیر  سے

ہم  اسیر  دام  گل  اپنی  خوشی  سے  ہوگیۓ

اب  کہاں  اے  دوست  چشم  منتظر  کی  آبرو

اب  تو  ان  کے  عہد و پیماں  ہر  کسی  سے  ہوگیۓ

Blue flower candleKuliyat e sagharBlue flower candleSilver bar 12Thanks Quill 1