jump to navigation

Soch Nagar March 19, 2008

Posted by Farzana Naina in Feelings.
Tags: , , , ,
add a comment
angels-watch-over-you.gif

کبھی کبھی ،کوئی دعا ۔۔۔۔۔ ایسی کیوں ہوتی ہے جسے آپ کے سوا کوئی نہیں مانگ سکتا؟

پتہ نہیں کیوں کبھی کبھی اپنے آپ سے ملاقات کے لیئے اپنی ہی دعاؤں پر انحصار کرنا

پڑتا ہے؟

ایک چھوٹی سی بات کے لئے ساری عمر قبولیت کی گھڑی کا انتظار کرنا بہت

کٹھن ہوتا ہے …..جس دروازے پر دستک دی جائے…. وہ صرف اسی کے لیئے کھلے …. اسی

کے لئے مخصوص ہو …. شارع عام تو ہرکسی کے لیئے موجود ہے …. جس کا جی چاہے اٹھ

کر چل پڑے ….. مخصوص اور منفرد ہونا بہت تکلیف دہ ہوتا ہے …. کاش ہم تم بھی اجنبی

ہوتے جس طرح اور لوگ ہوتے ہیں بے تعلق سے ۔۔۔۔۔۔۔ بے تعارف سے ۔۔۔۔۔۔۔ بے قراری نہ بے

کلی ہوتی نا مکمل نہ زندگی ہوتی یوں نہ ہوتیں اذیتیں دل کی زندگی بھی نہ ہوتی مشکل

میں آنسوؤں سے نہ دوستی کرتے اپنے دل سے نہ دشمنی کرتے کیسا دھوپ چھاؤں کا

موسم ہے آج۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں آفتاب بن کر کوئی جگمگا رہا ہے کہیں ماہتاب نیلگوں اداسی

میں…….ڈوبتا جا رہا ہے کیسا عجیب دن ہے۔۔۔۔۔۔ کتنا کچھ کرنے کو ہے لیکن پھر بھی لگ

رہا ہے کہ کچھ بھی نہیں…. کیسا عجیب موسم ہے؟

*** اجنبی شہر ہے اجنبی شام ہے

جان من


Baaz auqaat insaan bohut ghabrata hai,

bohut pachta’ta hai…..

mein bhi aap hi apni baton se tang aa jati hon,

aakhir meine kisi ko aisa kya kaha ya keh diya ke wo aisi mushkil or takleefdah kaifiaat mein mubtila ho jata hai…………..

Phir achanak mere saamne chaand nikal aata hai,

mein usey dekhne lagti hon,

wo sada se mera saathi hai, mere dil ki dunya mein jhaankta hai, meri baatein sunta hai………… mein dunya se ghabra ker bhaag jaati hon, uski panah mein,

wo mujhe sukoon bhi deta hai or be’chain bhi kerta hai……….

mohabbat ki khoobsurtiyoon mein gum bhi kar deta hai………

par mein hi ghabra jaati hon naa…………mohabbaton se chuphti hon,

kinara’ kashi ikhtiyaar ker leti hon…….

haalanke mujhe maloom hai……k ye…………komal hai,

nirmal hai or mukammal bhi hai………….

kisi haseen deis mein mujhe le jaye gi…….

.jahan dil ki shakl ke khoobsurat sar’sabz pattay khiley hongay….

jahan jazbon ki gulabiyaan phoolon ki tarah perron par khil jayein gi…….

barish hogi tau sufaid motiye ke kaliyon ki tarah tapkey gi………lekin ……

mujhe ye bhi khaber hai ke jab suraj in manazir ki taab na laa ker jalne lagey ga…….

tab ye sab kuch ……….

zard patton mein tabdeel ho ker ik dheir ban jaaye ga……..

or sookhey patton ke dheir mein………………

hamesha aag hi lagai jati hai !!!!!!!

=========                 ========

خیالوں، خوابوں اور نیندوں  پر ہمیشہ کسی روشنی کا راج رہا ہے ، جب دن دھیرے دھیرے اندھیرا بن جاتا ہے تب اس تاریکی میں میری آس میری امیدیں روشنی بن جاتی ہیں، رات کسی لڑکی کی طرح اس تیرگی میں دیپک جلاتی ہے ستاروں کے دیپک، ننھے ننھے سے چراغ جن کے بیچ چاند کی مشعل جلتی ہے، وہ چمکتا رہتا ہے کبھی ادھورا تو کبھی پورا ۔۔۔

کبھی جلتا ہے تو کبھی بجھتا ہے اور رات، رات اسی لڑکی کی طرح اپنی پلکیں گراتی اور اٹھاتی رہتی ہے جو کبھی شور تو کبھی خاموشی، کبھی آہٹ تو کبھی سرگوشی سے اپنے آپ ہی بہل جاےٗ، رنگوں اور راگنیوں سے دکھوں کی دھوپ پر چادر تان لیتی ہو، اس کا وجود جذبہٗ پرستش کو گھولتا  اور دل کو برف کے سرد گالوں سے بچا کر نرم گرم حرارت سے پر کردیتا ہو۔

Sau Dard Hain December 28, 2007

Posted by Farzana Naina in Random, Urdu.
Tags: , ,
add a comment

heart-small-diamond.gifBlue 58Small Diamond

کبھی سوچا نہ تھا کہ وقت ایسی ضد کرے گا، اس کو اپنے فیصلوں پر نظر ثانی کی عادت کسی نے نہیں ڈالی؟
کیوں نہیں، آخر کیوں نہیں؟؟؟
اس نے آوارہ شاموں کی طرح گھنٹوں اس لڑکی سے باتیں کی ہیں جو اتنی منفرد تھی کہ ہوا اپنے لانبے بال باندھنا بھول جاتی تھی اور خوشبو چاروں جانب بکھرتے ھوئے اس کے پاس جاکر سمٹ جاتی تھی،
اس کی سنگت میں یادوں کی البم کھلتی تو بند ہونے کانام نہ لیتی حتی کھ آنکھیں مندنے لگتیں،

جس کی ایک تمنا پر مر جایا جائے، جس کے ایک تبسم پر جی لیا جائے، جو دن کی طرح کھلتی اور رات کی طرح ڈوب جاتی۔۔۔
گلزار نے کہا۔۔۔۔”سو درد ہیں سو راحتیں سب ملا دلنشیں ایک تو ہی نہیں روکھی روکھی سی یہ ہوااور سوکھے پتے کی طرح شہر کی سڑکوں پہ میں لاوارث اڑتا ہوا سو راستے، پر تیری راہ نہیں بہتا ہے پانی بہنے دے وقت کو یونہی رہنے دے دریا نے کروٹ لی ہے توساحلوں کو سہنے دے سو حسرتیں، پر تیرا غم نہیں تنہا تنہا ہے تنہا چل تنہا چل سو درد ہیں سو راحتیں سب ملا دلنشیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تو ہی نہیں۔
وہ۔۔۔۔ سات آسمانوں کے پار کسی اور کہکشاں کے ایک ستارے کی خواہش بھی کرنا اور دوڑ کر لے آنا۔۔۔۔۔

وہ۔۔۔۔ ہونٹوں کے تل کی طرح کسی منفرد خوشبو بھرے پھول کا سوچنا اور قدموں میں بکھیر دینا۔۔۔۔ ۔

وہ ۔۔۔۔ شہد بھرے لہجے میں کڑوی کسیلی باتوں پر میٹھے میٹھے گیت لکھ لینا۔۔۔۔ ۔ہم کس دشت کے پنچھی ہیں؟
کیوں ادھورے پن کا شکار ہیں؟
یہ چائے کی پیالی اگر ختم نہیں ہوتی تو چھلک کر ہی گر کیوں نہیں جاتی؟
سوچیں ،صبحیں، شامیں بغیر پوچھے چلی آرہی ہیں چلی آرہی ہیں۔۔۔
سال دو سال کی دوری پر کوئی ہو تو بات بھی تھی پر یہ تو صدیوں کا سفر آن پڑا ہے،ختم کیوں نہیں ہوتا ؟
اندر ہی اندر جھیلیں اور خوش رنگ جزیرے ۔۔۔ ڈوب رہے ہیں یا ڈبو رہے ہیں؟؟؟

***سو درد ہیں سو راحتیں – جان من

fantasy0030