jump to navigation

A Tribute To Mohammed Aziz (Playback Singer) November 29, 2018

Posted by Farzana Naina in Film and Music, Music, Poetry.
Tags: , , , ,
add a comment

Welcome Pink Rose

music notes

محمد عزیز : پیدائش 2 جولائی، 1954, کلکتا, بھارت

انتقال : 27 نومبر، 2018, Nanavati hospital, ممبئی, بھارت

اولاد: ثنا عزيز

ممبئی کی ہندی فلم انڈسٹری میں فلموں کے لیے 1980 اور 1990 کے عشرے میں بہترین نغمے پیش  کرنے والے گلوکار محمد عزیز کا ایک نجی اسپتال میں 64 سال کی عمر میں دل کا دورہ پڑنے سے انتقال ہوگیا۔

 

 

محمد عزیز  2 جولائی 1954 کو مغربی بنگال کے اشوک نگر میں پیدا ہوئے تھے۔

محمد عزیز کا نغمہ ’’آپ کے آجانے سے ‘‘ اور ’’ مائی نیم از لکھن‘‘  فلموں کے چاہنے والوں میں خوب مقبول ہوا ۔

پیر کے روز محمد عزیز کا ایک میوزیکل پروگرام کولکتہ میں منعقد کیا گیا تھا اور ستائیس نومبر دو ہزار اٹھارہ کے منگل کو دوپہر دو بجے ممبئی آمد کے بعد انہوں نے ڈرائیور کو کہا کہ میری طبیعت خراب ہو رہی ہے، جس کے بعد انہیں فوری طور پر ناناوتی اسپتال پہنچایا گیا، چیک اپ کرتے ہی ڈاکٹروں نے دل کا دورہ پڑنے کی اطلاع دی اور انہیں مردہ قرار دے دیا گیا۔

میوزک کمپوزر انو ملک نے سب سے پہلے محمد عزیز کو فلم ’’ مرد‘‘ میں امیتابھ پر فلمائے گانے ’’ مرد ٹانگے والا‘‘  گانے کا چانس دیا تھا۔

محمد عزیز کے تعلقات لکشمی کانت پیارے لال کے ساتھ بہت اچھے اور قریبی تھے، جبکہ کلیان جی آنند ، آر ڈی برمن، نوشاد، او پی نیر اور بپی لہری بھی ان کے رفیق تھے۔

محمد عزیز نے امیتابھ بچن کے دور سے لے کر رشی کپور اور گو وندا جیسے ہیروز کے لیئے مقبول ترین گیت گائے۔

محمد عزیز کو پیار سے ’’ منا ‘‘ کہہ کر پکارا جاتا تھا، ان کا پورا نام ’’ سید محمد عزیز النبی‘‘ تھا۔

اپنی زندگی کے بارے میں بتاتے ہیں کہ ایک مرتبہ آر ڈی برمن کے پاس گیت سنانے پہنچا، وہ اپنے گھر میں تھے اور کمرے میں مائیک بھی لگا ہوا تھا، لہذا میں نے گیت گایا، لیکن برمن نے کہا کہ اپنے لہجے پر ابھی اور محنت کرو، باہر نکل کر میں سوچتا رہا کہ میں تو اہلِ زبان ہوں اس سے بہتر اور کیا سیکھوں گا!۔

پھر اس کے بعد میں ان کی طرف سے مایوس ہوگیا لیکن ایک دن آشا جی مجھے کہا کہ چلو میری گاڑی میں بیٹھو میں تمہیں برمن کے پاس لے چلتی ہوں، میں نے بہانہ کر دیا کہ ابھی تھوڑی بعد میں خود ہی گھر پہنچ جاؤں گا، آشا جی نے ہمیشہ میری بہت مدد کی، وہ ایک مہربان ہستی ہیں ۔

انہوں نے اپنے گائیکی کے دور میں آشا بھونسلے، لتا منگیشکر، انورادھا پوڈوال، کویتا کرشنا مورتی، کے ساتھ اسی اور نوے کی دہائی میں بہترین گیتوں سے دھوم مچادی تھی۔

 محمد عزیز نے بطور پلے بیک گلوکار اپنے کیریئر کا آغاز بنگلہ فلم ‘جیوتی’ سے کیا تھا۔ سال 1984 میں وہ ممبئی آ گئے جہاں انہوں نے ہندی فلم ‘امبر’ میں گیت گایا، اس کے بعد عزیز نے کئی فلموں کے ہٹ گانے گائے،  انہوں نے مرد کے علاوہ بنجارن، آدمی کھلونا ہے، لو 86، پاپی دیوتا، ظلم کو جلا دوں گا، پتھر کے انسان، بیوی ہو تو ایسی، برسات کی رات، لال دوپٹہ ململ کا، رام لکھن، ہمارا خاندان، رام اوتار جیسی کئی فلموں میں گانے گائے۔

ہندی، اردو کے علاوہ محمد عزیز نے بھجن، بھگتی گیت، اڑیسہ، اور صوفی کلام بھی گایا۔ 

ان کے میوزیکل کیریئر میں گانوں کی کل تعداد بائیس ہزار سے زائد ہے۔

وہ ان چند گلوکاروں میں سے تھے جو اپنی آواز کا نوٹ بہت اونچا اٹھا سکتے ہیں، محمد عزیز نے ہندی فلموں کے علاوہ بنگالی، اوڑیا اور دیگر علاقائی زبان کی فلموں میں بھی بطور پلے بیک گانے گائے، وہ خود محمد رفیع کے بہت بڑے پرستار تھے جبکہ سونو نگم ان کے بہت بڑے پرستار ہیں۔  

آخری دور میں ان کو شکوہ رہا کہ فلم انڈسٹری نے ان کو بڑے ستاروں کے میوزیکل شوز میں بلانا چھوڑ دیا ہے، ان کی گلوکاری جتنی مقبول تھی اتنا ہی ان کو فلمی دنیا نے نظر انداز کیا ہوا تھا۔ 

Music Multi Eighth Note Music Multi TwoEighthNote Music Multi Eighth Note Tiny music notes Rose red 13 Tiny music notes Music Multi Eighth Note Music Multi TwoEighthNote Music Multi Eighth Note

ساری دنیا پیاری پر تو ہے سب سے پیارا ۔۔۔ فلم:  میرا کا موہن

 اے مرے دوست لوٹ کے آجا ۔۔۔ فلم: سورگ  

متوا بھول نہ جانا ۔۔۔ فلم: کب تک چپ رہوں گی

بہت جتاتے ہو چاہ ہم سے ۔۔۔ فلم: آدمی کھلونا ہے

کیسے کٹے دن کیسے کٹی راتیں ۔۔۔ فلم: سورگ

کچھ ہو گیا، چاند کے دیس میں دل میرا اڑ گیا ۔۔۔ فلم: کشن کنہیا 

تیرے میرے بیچ میں کیسا ہے یہ بندھن انجانا ۔۔۔ فلم: اک دوجے کے لیئے

آتے آتے آتے تیری یاد آ گئی ۔۔۔ فلم: جان کی بازی

پل دن مہینے کئی سال ہوگئے ۔۔۔ فلم: آپ کی یادیں

پیار ہمارا امر رہے گا ۔۔۔ فلم: مدت

ساتھیا او ساتھیا سورج ہے تو ۔۔۔ فلم: پاپ کو جلا کر راکھ کردوں گا

میں تیرے بن جی نہیں سکتا ۔۔۔ فلم: لال پری

تم جو بنے ہمدرد ہمارے ۔۔۔ فلم: فتح  

پت جھڑ ساون بسنت بہار ۔۔۔ فلم: سندور

جب پیار کیا اقرار کیا ۔۔۔ فلم: وطن کے رکھوالے

آج کل یاد کچھ اور رہتا نہیں ۔۔۔ فلم: نگینہ ۱۹۸۶

تجھے رب نے بنایا کس لیئے ۔۔۔ فلم: یاد رکھے گی دنیا

پھول گلاب کا ۔۔۔ فلم: بیوی ہو تو ایسی

ہم تمہیں اتنا پیار کریں گے ۔۔۔ فلم: بیس سال بعد

لوگ کہتے ہیں کہ پیلا چاند ہے سب سے حسیں ۔۔۔ فلم: خود غرض

سارے شکوے گلے بھلا کے کہو ۔۔۔ فلم: آزاد دیش کے غلام

یاد رکھیو یہ چار اکشر پیار کے ۔۔۔ فلم: عزت دار ۱۹۹۰

سن اے بہار دل کی پکار ۔۔۔ فلم: آسمان سے اونچا

دل کے ارمانوں کو تونے جگا دیا ۔۔۔ فلم: انصاف کی پکار

میں نے تجھ سے پیار کیا ہے ۔۔۔ فلم: سوریا

میرے محبوب رک جاؤ تمہارا چاہنے والا ۔۔۔ فلم: ہمارا خاندان

تو بھی بے قرار میں بھی بے قرار ۔۔۔ فلم: وقت کی آواز

میں تیری محبت میں پاگل ہو جاؤں گا ۔۔۔ فلم: تری دیو

آج صبح جب میں جگا ۔۔۔ فلم: آگ اور شعلہ

انگلی میں انگوٹھی، انگوٹھی میں نگینہ ۔۔۔ فلم: رام اوتار

آپ کا چہرہ آپ کا جلوہ ۔۔۔ فلم: تہلکہ

مئے سے مینا سے نہ ساقی سے ۔۔۔ فلم: خود غرض

مل گئے دل اب تو کھل کے مل ذرا ۔۔۔ فلم اگنی ۱۹۸۸

میں نے دل کا حکم سن لیا تیرے صدقے بلم ۔۔۔ فلم: برسات کی رات

تونے بے چین اتنا زیادہ کیا ۔۔۔ فلم: نگینہ

دنیا میں کتنا غم ہے ۔۔۔ فلم: امرت ۱۹۸۶  

تو مجھے قبول میں تجھے قبول ۔۔۔ فلم: خدا گواہ

محبوب سے ہمارے بادِ صبا یہ ہمارا ۔۔۔ فلم: لو ۸۶

تو ہی میری پریم کہانی ۔۔۔ فلم: پتھر کے انسان

اک لڑکی جس کا نام محبت ۔۔۔ فلم: شعلہ اور شبنم

اپنی آنکھوں کے ستاروں میں ۔۔۔ فلم: پولیس اور مجرم

رب کو یاد کروں ۔۔۔ فلم: خدا گواہ

ساون کا مہینہ ۔۔۔ فلم: ایسا پیار کہاں

چلو چلو چلیں دور کہیں ۔۔۔ فلم: سندور

کھینچ لایا ہے تیرا پیار ۔۔۔ فلم: جنم جنم

جیسے اک چاند کا ٹکڑا ۔۔۔ فلم: انتقام

بہنیں ہنستی ہیں تو ۔۔۔ فلم: پیار کا دیوتا

چھن چھن باجیں گھنگھرو ۔۔۔ فلم: گھنگھرو

یار تیرا پیار تو ہے میری زندگی ۔۔۔ فلم : ہم بھی تو انسان ہیں

مجھے جینے نہیں دیتی ہے ۔۔۔ فلم: بومب بلاسٹ

میرے صنم تیرے سر کی قسم ۔۔۔ فلم: مجبور 

جند تیرے نام کر دی ۔۔۔ فلم: پیار کا دیوتا

تم حسیں کسقدر ہو ۔۔۔ فلم: حاتم طائی  

گوری کا ساجن ، ساجن کی گوری ۔۔۔ فلم: آخری راستہ  

Pink Flower 3

***      ***

موسیقی کے دلدادہ انہیں گیتوں کے جادو میں کچھ مہکتے لمحے ایک الگ دنیا میں گزار آتے ہیں۔

یہ گیت وہ آئینے ہیں جن میں حساس لوگ اپنا دل اور دھڑکن دیکھ لیتے ہیں!۔

ان گیتوں میں کبھی کبھی وہ جھلکیاں دکھائی دیتی ہیں جب محبت نے اپنی مقناطیسی کشش سے مجھے کھینچ لیا تھا، ہم ان گیتوں میں اپنے دلبر کو دیکھتے ہیں یا پھر اسے جو چھین لیا گیا، جو دل چیر گیا ہو، وہ دور کہیں کھو گیا، اوجھل ہوگیا جب اس کے ہمراہ بتائی چند گھڑیاں نصیب ہوتیں اور باقی دن ان گیتوں کے سہارے کٹ جاتا۔ !۔

وقت ان لمحوں کی سوئیاں توڑ کر آگے نکل گیا، لیکن میں اب تک ان چبھتی سوئیوں کو نکال نہیں پائی، اس کے ساتھ کی سب دعائیں کہیں اس عرش و فرش کے درمیان بھٹکتی رہ گئیں !۔

یہ گیت  گلے میں آنسوؤں کا پھندا بن کر سانسیں گھوٹتے ہیں ، اُس کی مہک میرے تن من میں ہے، لیکن وہ نہیں ہے، کہیں بھی نہیں۔

جیسے کوئی خواب تھا، سراسر ایک خواب، جو آنکھ  کھلتے ہی غائب ہو گیا !۔

میں ایک کٹے پروں والا پرندہ جو پھڑ پھڑا کر رہ جاتا ہے، نہ جیتا ہے نہ مرتا ہے، مرے ارد گرد کی دنیا  کبھی اس طلسم کو محسوس نہیں کر سکتی جس نے مجھے حصار میں لیا ہوا تھا، کبھی اس دکھ کی تیز دھار نہیں دیکھ سکتی جو مجھے ٹکڑے ٹکڑے کر کے کاٹتا ہے۔

نا ہی وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ ۔۔۔۔۔۔ جو میرے بن اک پل نہیں رہ پاتا تھا۔۔۔!!!۔

Fairy Grey heart

Advertisements

ہم تمہیں چاہتے ہیں ایسے April 27, 2017

Posted by Farzana Naina in Film and Music.
Tags: , , , , ,
add a comment

بالی وڈ کے معروف اداکار ونود کھنہ 70 برس کی عمر میں ممبئی کے ایک ہسپتال میں انتقال کر گئے ہیں۔ وہ کافی عرصے سے کینسر کے مرض میں مبتلا تھے۔

جمعرات کو ان کے انتقال کی خبر سامنے آنے کے بعد بالی وڈ کی کئی شخصیات نے گہرے دکھ کا اظہار کیا۔

ونود کھنہ نے دو شادیاں کی تھیں اور ان کے چار بچے ہیں۔

1946 میں پشاور میں پیدا ہونے والے ونود کھنہ نے 140 سے زائد فلموں میں کام کیا۔

انھوں نے اپنے فلمی کریئر کا آغاز بطور وِلن کیا تھا لیکن ان کی دلکش شخصیت کے باعث وہ جلد ہی ہیرو کے کردار کرنے لگے اور انھوں نے اپنی اداکاری کے جوہر سے فلمی دنیا میں ایک نئی شناخت قائم کر لی۔

ستر سے 80 کی دہائی کے دوران ونود کھنہ کا شمار بالی وڈ کے بہترین اداکاروں میں ہوتا تھا۔ ان کی پہلی فلم ‘من کا میت’ تھی جس میں انھوں نے سنیل دت کے مد مقابل بطور وِلن کام کیا تھا۔

‘پورب اور پچھم‘،’میرا گاؤں میرا دیش’ میں بھی انھوں نے وِلن کا کردار کیا تھا لیکن بعد میں وہ بطور ہیرو آنے لگے۔

ونود کھنہّ بی جے پی کے ٹکٹ پر چار بار پنجاب کے گروداس پور سے پارلیمان کا الیکشن جیتا تھا اور مرکزی وزیر بھی رہے

‘امر اکبر اینتھونی، پرورش، ہیرا پھیری اور مقدر کا سکندر، جیسی سپر ہٹ فلموں میں ونود کھنہ نے اداکاری کے اپنی بہترین جوہر دکھائے۔

جب ان کا فلمی کریئرعروج پر تھا تبھی وہ فلمی دنیا کو ترک کرکے امریکہ میں واقع مشہور یوگی اوشو کے شیلٹر ہوم میں چلے گئے جہاں انھوں نے پانچ برس گزارے۔

سنہ 1987 میں وہ دوبارہ فلمی دنیا میں واپس آئے اور ’انصاف‘ اور ’چاندنی‘ جیسی فلموں سے واپسی کی۔

انھوں نے حال ہی میں سلمان خان کے ساتھ ان کی فلموں دبنگ اور بنگ ٹو میں کام کیا تھا۔

ونود کھنہ نے بی جے پی کے ٹکٹ پر چار بار پنجاب کے گروداس پور سے پارلیمانی انتخاب جیتا اور مرکزی وزیر بھی رہے

ونود کھنّہ بالی وڈ ان کے ایک ایسے ہیرو تھے جن کے بارے میں کہا جاتا تھا کہ اگر اسّی کی دہائی میں اپنے کریئر کے عروج پر انہوں نے فلمی دنیا نہ چھوڑی ہوتی تو وہ سپرسٹار ہوتے۔

1946 میں پشاور میں پیدا ہونے والے ونود کھنہ نے 1968 میں سنیل دت کی فلم ‘من کا میت’ میں ولن کے کردار سے اپنے فلمی کریئر کا آغاز کیا اور 140 سے بھی زیادہ فلموں میں اداکاری کی۔

ان کی بہترین فلموں میں ‘میرے اپنے’، ‘انصاف’، ‘پرورش’، ‘قربانی’، ’دیاوان‘، ‘میرا گاؤں میرا دیش’، ‘مقدر کا سکندر’، ‘امر اکبر انتھونی’، ‘چاندنی` اور ‘دی برننگ ٹرین ‘ جیسی فلمیں شامل ہیں۔

کیریئر کے ابتدائی دنوں میں انھیں بطور معاون اداکار اور وِلن کے کرداروں میں کاسٹ کیا گیا اور وہ بالی وڈ کے ان چند ہیروز میں سے ہیں جنھوں نے اپنے کریئر کا آغاز بطور ولن کیا لیکن ہیرو بن کر انڈسٹری پر چھا گئے۔

وہ بالی وڈ میں اینگری ینگ مین کی امیج امیتابھ بچن سے پہلے ہی بنا چکے تھے۔

اپنے کریئر کے عروج پر ہی ونود کھنہ اچانک فلمی دنیا کو خیرباد کہہ کر روحانی گرو رجنیش کے شاگرد بن گئے تھے اور ان کے آشرم میں جا کر رہنے لگے تھے۔

ونود کھنہ کا یہ قدم ان کی بیوی گیتانجلی اور ان کے درمیان طلاق کی وجہ بھی بنا۔ گیتانجلی سے ان کے دو بیٹے راہل اور اکشے کھنہ ہیں۔ بعد میں 1990 میں ونود کھنہ نے کویتا سے دوسری شادی کی۔

1987 میں ونود بالی وڈ میں واپس آئے اور فلم انصاف میں ڈمپل کپاڈیہ کے ساتھ نظر آئے اور اس طرح ان کے فلمی سفر کی دوسری اننگز کا آغاز ہوا۔

1988 میں فلم دیا وان میں 46 سال کے ونود کھنّہ 21 سالہ مادھوری دکشت کے ساتھ ایک رومانوی کردار میں دکھائی دیے اور فلمی شائقین نے عمر کے فرق کو نظر انداز کرتے ہوئے ان کے کردار کو خوب سراہا۔

1997 میں ونود کھنہ نے سیاست کے میدان میں اترنے کا فیصلہ کیا اور بھارتیہ جنتا پارٹی میں شمولیت اختیار کر لی۔ اپنے سیاسی سفر کے دوران وہ پنجاب کے ضلع گرداس پور سے چار مرتبہ لوک سبھا کے رکن بنے۔

اٹل بہاری واجپئی کی حکومت میں انہوں نے سیاحت اور ثقافت کے وزیر کے طور پر کام کیا اور بعد میں انہیں وزیر مملکت برائے خارجہ کی ذمہ داری بھی دی گئی تھی۔

2010 میں ونود کھنہ ایک بار پھر فلمی پردے پر نظر آئے اور انھوں نے پہلے فلم دبنگ اور پھر اس کے سیکوئل دبنگ ٹو میں سلمان خان کے والد کا کردار ادا کیا۔

اس کے بعد وہ 2015 میں شاہ رخ خان کی فلم دل والے میں بھی نظر آئے۔

انڈین فلم انڈسٹری میں ان کے کئی دوست تھے جن میں سے ایک خاص دوست فیروز خان بھی تھے۔ یہ اتفاق ہی ہے کہ فیروز خان کا انتقال بھی 2009 میں آج ہی کے دن یعنی ستائیس اپریل کو ہوا تھا۔

Courtesy of BBC.

Sufi Singers of Sindh-Sohrab Faqeer October 29, 2009

Posted by Farzana Naina in Cultures, Film and Music, Music, Pakistan, Sindhi.
Tags: , , ,
2 comments

سندھ کے معروف صوفی گلوکار سہراب فقیر کا پچھتر برس کی عمر میں طویل علالت کے بعد کراچی کے ایک ہسپتال میں جمعہ کے روز انتقال ہو گیا۔ فالج کی وجہ سے ان کی وہ آواز ختم ہو چکی تھی جسے سننے کے لیے لوگ دور دراز علاقوں سے درازہ (درازہ اس گاؤں کا نام ہے جہاں سائیں سچل مدفو ن ہیں) آتے تھے۔

سہراب فقیر

سہراب فقیر کے انتقال کے ساتھ ہی صوفیوں کا کلام گانے والا ایک اور نامور فنکار کم ہو گیا۔ ان کی کمی پوری کرنے کے لیے مستقبل قریب میں کوئی نظر نہیں آتا ہے۔ اسی طرح جیسے علن فقیر کا مقام حاصل کرنے کے لیے ابھی تک کوئی سامنے نہیں آسکا ہے۔

سہراب کو، جن کا پورا نام فقیر سہراب خاصخیلی تھا، سائیں سچل سرمست کا کلام خصوصاً سنگ گانے کا ملکہ حاصل تھا۔

سہراب کو، جن کا پورا نام فقیر سہراب خاصخیلی تھا، سائیں سچل سرمست کا کلام خصوصاً سنگ گانے کا ملکہ حاصل تھا

انہوں نے آٹھ برس کی عمر سے صوفیوں کا کلام گانا شروع کیا تھا اور سار ی زندگی یہی کام کیا جو ان کا ذریعہ معاش تو تھا ہی لیکن محبوب مشغلہ بھی تھا۔

یہ فن انہیں ورثہ میں ملا تھا۔ ان کے والد ہمل فقیر خود اپنے وقت کے بڑے گائک تھے اورتھری میر واہ میں مدفون بزرگ شاعر خوش خیر محمد ہسبانی کے مرید تھے۔ کچھ بیٹے کو انہوں نے تربیت دی تو کچھ بیٹے کا شوق جس نے سہراب خاصخیلی کو سہراب فقیر بنا دیا۔

یہ سہراب کی اپنے فن پر گرفت اور مقبولیت ہی تھی جو حکومت کو مجبور کرتی تھی کہ انہیں طائفہ کے ساتھ بیرونی ممالک میں بھیجا جائے۔ برطانیہ ، بھارت، ناروے، سعودی عرب اور دیگر کئی ممالک میں جا کر انہوں نے سامعین سے داد وصول کی تھی۔

سائیں سچل ہفت زبان شاعر تھے اور سہراب سندھی، سرائکی، پنجابی اور اردو زبانوں میں گاتے تھے کہ جس زبان میں گایا ایسا لگا کہ یہ ان کی ہی زبان ہے۔

وہ سائیں سچل کے علاوہ حضرت شاہ عبداللطیف بھٹائی، حضرت سلطان باہو، سا ئیں بھلے شاہ اور دیگر شعراء کا کلام بھی گایا کرتے تھے۔

بشکریہ بی بی سی …………آؤ رانھڑا رہو رات

Aao Ranhra Raho Raat