jump to navigation

Tributes – نذرانۂ عقیدت

Sent by Priyadangle-silv-heart.gif

Mumtaz Ahmed Poem

 

 

درد کی نیلی رگیں


اجنتا اور الورا کی مورتیاں بنانے والے کے ذہن میں


مجھے یقین ہے تمہارا ہی تصور تھا

قلو پطرہ کےسر پر جب تاج رکھا گیا

تو محبت وادئ نیل میں عام ہوگئی یعنی تمام ہوگئی

وہ محبت تمہاری لفظوں کا اچھنبےتھی

تسلط کی خوشبو تمہارےلکھےہوئےلفظوں سے پھیلتی ہے

ترنم کی نگاہ تمہارے ہی لفظوں کی تصویر سے پھسلتی ہے

سر کا پاتال سے کیا رشتہ ہی

یہ تمہارے لفظوں کی حقیقت ہے

یہ مجھ پر آشکار ہوا آج

آج جب تمہاری کتاب دیکھی

لگتا ہےمحبت وادئ سندھ میں عام ہوگئی

!شوکت عنقا ۔ کراچی!



Comments»

No comments yet — be the first.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: