jump to navigation

Fairy Tales


“If you see the magic in a fairy tale, you can face the future.

Only those who truly love and who are truly strong can sustain their lives as a dream. You dwell in your own enchantment. Life throws stones at you, but your love and your dream change those stones into the flowers of discovery. Even if you lose, or are defeated by things, your triumph will always be exemplary. And if no one knows it, then there are places that do. People like you enrich the dreams of the worlds, and it is dreams that create history. People like you are unknowing transformers of things, protected by your own fairy-tale, by loveOnce in a while, right in the middle of an ordinary life, love gives us a fairy tale.

Sara Bareilles fairytale music video

Donna Summer Fairy Tale High.

کبھی سوچا نہ تھا کہ وقت ایسی ضد کرے گا،
وقت کو اپنے فیصلوں پر نظر ثانی کی عادت کسی نے نہیں ڈالی؟
کیوں نہیں،
آخر کیوں نہیں؟؟؟
اس نے آوارہ شاموں کی طرح گھنٹو
ں اس لڑکی سے باتیں کی ہیں جو اتنی منفرد تھی کہ ہوا اپنے لانبے بال باندھنا بھول جاتی تھی اور خوشبو چاروں جانب بکھرتے ھوئے اس کے پاس جاکر سمٹ جاتی تھی،
اس کی سنگت میں یادوں کی البم کھلتی تو بند ہونے کانام نہ لیتی حتی کھ آنکھیں مندنے لگتیں،
جس کی ایک تمنا پر مر جایا جائے،
جس کے ایک تبسم پر جی لیا جائے،
جو دن کی طرح کھلتی اور رات کی طرح ڈوب جاتی۔۔۔
گلزار نے کہا۔۔۔۔ ”سو درد ہیں سو راحتیں سب ملا دلنشیں ایک تو ہی نہیں

روکھی روکھی سی یہ ہوا اور سوکھے پتے کی طرح شہر کی سڑکوں پہ میں لاوارث اڑتا ہوا سو راستے، پر تیری راہ نہیں
بہتا ہے پانی بہنے دے
وقت کو یونہی رہنے دے
دریا نے کروٹ لی ہے تو ساحلوں کو سہنے دے

سو حسرتیں، پر تیرا غم نہیں

تنہا تنہا ہے
تنہا چل تنہا چل
سو درد ہیں سو راحتیں سب ملا دلنشیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تو ہی نہیں۔

وہ۔۔۔۔ سات آسمانوں کے پار کسی اور کہکشاں کے ایک ستارے کی خواہش بھی کرنا اور دوڑ کر لے آنا۔۔۔۔۔
وہ۔۔۔۔ہونٹوں کے تل کی طرح کسی منفرد خوشبو بھرے پھول کا سوچنا

اور قدموں میں بکھیر دینا۔۔۔۔۔
وہ۔۔۔۔شہد بھرے لہجے میں کڑوی کسیلی باتوں پر میٹھے میٹھے گیت لکھ لینا۔۔۔۔۔
ہم کس دشت کے پنچھی ہیں؟
کیوں ادھورے پن کا شکار ہیں؟

یہ چائے کی پیالی اگر ختم نہیں ہوتی تو چھلک کر ہی گر کی

وں نہیں جاتی؟
سوچیں ،صبحیں، شامیں بغیر پوچھے چلی آرہی ہیں چلی آرہی ہیں۔۔۔
سال دو سال کی دوری پر کوئی ہو تو بات بھی تھی
پر یہ تو صدیوں کا سفر آن پڑا ہے،
ختم کیوں نہیں ہوتا؟
اندر ہی اندر جھیلیں اور خوش رنگ جزیرے ۔۔۔

ڈوب رہے ہیں….
یا ڈبو رہے ہیں؟؟؟

مینوں موت توں ڈرا کے
گھڑیا منہ نا توں موڑیں
جند یار دے حوالے


آج آسمان نجانے کیوں نیلا سا سجیلا ہورہا ہے، ہلکے ہلکے پون جھکورے اٹھکیلیاں کرتے کیسے بھلے لگتے ہیں،

دل پنکھ لگاءے دور کہیں اڑنے کی کوشش میں بے چینی کی انتہا پر ہے،

صبح کی سنہری کرنیں دھلی دھلاءی سڑکوں پر پھسل رہی ہیں،

جب زندگی اپنی رفتار میں میں لیے دوڑنے میں مصروف ہو اور  کوءی پرسکون شکوہ آجاے تو اچھا لگتا ہے۔ ۔ ۔ ناں ۔۔۔۔!۔

ہاں ایسا ہی چھوٹا سا ایک شکوہ آگیا ہے جس میں “ناز” دکھانے کا کہا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آہا ہا ہا۔۔۔ ہم کہاں اور “ناز” کہاں !۔

یہ جو لفظ “ناز” ہے “فخر” والا نہیں ۔۔۔۔ بلکہ “ادا” اور ںخرے والا، اس میں عجیب سا نشہ ہوتا ہے،

جادو سا ۔۔۔ “میں آرزوءے جاں لکھوں یا جان آرزو ۔۔۔ تو ہی بتادے ناز سے ایمان آرزو”   ۔

مسکاءے جاتی ہوں، بھلا کیا کہوں ایسے حسین شکوے پر !۔۔۔۔۔ہ

م نے کہاں کبھی کوءی “ناز” دکھایا، وقت اجازت ہی نہیں دیتا۔۔۔۔

کبھی پون جھکورا بن کے اڑاتا ہے تو کبھی ظالم آندھی کی طرح تہس نہس کردیا ہے

“دل ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دن۔۔۔بیٹھے رہیں تصور جاناں کیے ہوءے

یہ تو موسموں کی بات ہے نا کبھی کبھی سارے گلدان خالی پڑے ہوتے ہیں

 

، کسی ڈگر میں سواءے سرکنڈوں کے کوءی پھول نظر نہیں آتا۔۔۔۔۔اور۔۔۔کبھی کبھی کسی منظر کی یاد داشت گہری اداسی سمیت رنگ بھی چھڑکتی ہے۔۔۔۔

ایسا رنگ جو اکثر میرے پاس اداس شاموں میں اتر آتا ہے۔۔۔

میرے آنچل کو بھگونے کی کوشش کرتا ہے۔۔۔

کبھی کبھی میں اس میں پوری گھل جاتی ہوں تو کبھی وہ نامراد سا میری  چپ کے ہمراہ بیٹھ جاتا ہے،

دم سادھے،  پالتو پنچھی کی طرح جو موقع ملتے ہی اکدم اڑنے سے باز نہیں آسکتا۔

Fairy crystalbowl

کیا ہے موت؟

اتنی لاحاصل کیوں ہے؟

ایک گھنٹہ بیت بھی گیا، کمال ہے میں تو چلتے چلتے کءی صدیاں گزار آءی اور گھر کی دہلیز تک پہنچی تو فقط ایک ہی گھنٹہ بیتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

وقت کیا ہے؟

انسان کا ذہن کون سی مشین ہے؟

زندگی سے مجھے اتنی ہی محبت ہے شاید ۔۔۔۔۔۔۔۔ جتنی کہ نفرت !۔

دھیرے دھیرے چلتی ٹھنڈی ہوا کیسے پیار سے چہرے کو چھو رہی ہے، زلفیں اڑا رہی ہے۔۔۔۔ انسانوں سے کتنی مختلف !!!۔

اس سڑک پر ایسے ہی چہل قدمیاں کرتے تیس سے بھی اوپر کءی برس بیت گءے، کوءی آہٹ نہیں۔۔۔

پھر بھی، وہ جو یہیں تھا، وہ بھی نہیں۔۔۔۔ اس کا سایہ بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مگر ہاں، اس وقت میرا سایہ میرے ساتھ چل رہا ہے، عجب سی یاد کوندی ہے، اس چھوٹی سی لڑکی کی یاد۔۔۔۔۔۔۔

جو اسی طرح دھوپ میں چلتے اپنے ساءے کو حیرت سے تکتی تھی، ہاں میں۔۔۔۔

میں بڑی حیرت سے سوچا کرتی تھی کہ یہ سایہ چلتے چلتے ادھر سے ادھر رخ کیسے تبدیل کر لیتا ہے؟

گھٹتا برھتا کیسے ہے، بڑا دلچسپ سا کھیل لگتا تھا ان دنوں۔۔۔۔۔۔۔ اور اب۔۔۔۔۔۔۔۔

آج، کیا کیفیت ہے، کیا سوچ ہے، سب کچھ جان کر بھی کچھ نہیں جانتی گویا،

بس جیءے جا رہی ہوں، اس ننھی سی لڑکی سے بہت دور، جو یہ سارے دکھ اور اس زندگی کے یہ سب بے ترتیب نقشے نہیں جانتی تھی۔۔۔۔۔

ان نقشوں سے نکلتے راستے۔۔۔۔۔۔کہاں سے کہاں لے آءے مجھے۔۔۔۔۔۔مگر یہ میری خواہش نہیں تھے، بنادیے گے تھے۔۔۔۔۔۔۔بنا شکایت میں نے ان کو مقدر بنا لیا۔۔۔۔۔۔۔کہ شاید ان پر چلتے چلتے وہ ساری منزلیں ملیں جو ایک مسافر کا خواب ہوتی ہیں۔۔۔۔

خواب، ہاں خواب، کتنا استعمال کرتے ہیں نا ہم کو !!!۔

اماں، کیسی یاد آتی ہیں اس اکیلی سی چہل قدمی میں، یہ میری دنیا ہوتی ہے نا، اس لیے اس میں داخل ہوجاتی ہیں۔۔۔۔۔

لیکن اس میں وہ سب بھی داخل ہوجاتے ہیں جو حققیت میں نہیں ہیں، کہیں نہیں ہیں، یا مھھ سے دور چلے گیے۔۔۔۔۔بچھڑ گے، کبھی نا آنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔کون جھانکے گا میرے دل میں، کون دیکھ سکے گا اس آینے میں یہ عکس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوءی نہیں، کوءی بھی نہیں، ایک دن میں بھی چلی جاؤں گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہ علم نہیں کہ کہاں جاؤں گی۔۔۔۔۔۔۔سنا تو ہے کہ جانے کے بعد دوسری دنیا میں سب لوگ دوبارہ مل جاتے ہیں !!!۔

مگر صرف سنا ہے، پڑھا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کتنا سچ کتنا فسانہ۔۔۔۔۔خبر نہیں!۔

میرا سایہ کبھی داءیں ہو رہا ہے تو کبھی باءیں۔۔۔۔۔۔اور اس وقت سٹریٹ لایٹ کے پاس سے گزرتے ہوءے پھر تین سایوں میں بٹ گیا ہے۔۔۔۔۔ایک گہرا اور دو ہلکے۔۔۔۔۔۔۔۔ دو چھوٹے تو ایک بڑا!۔

ابھی چند قدم بعد ایک رہ جاءے گا۔۔۔۔۔پھر دو ہوجاءیں گے اور پھر تین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہلکے، گہرے۔۔۔۔گہرے تو ہلکے۔

؀ولو ٹری؀ کی شاخیں کتنی اچھی لگتی ہیں مجھے، ہمیشہ سے ہی لگتی تھیں، اس وقت چلتے چلتے اس سے پہلے کہ یہ مجھے چھولیں۔۔۔۔میں نے ان کو چھو لیا ہے۔۔۔۔۔۔شاید مسکرا رہی ہیں۔۔۔۔۔۔۔ہاں مسکرا ہی رہی ہوں گی۔۔۔۔۔۔کیونکہ میرے ہاتھ کے لمس میں نرمی ہے، محبت ہے اور محبت کا لمس مسکرانے پر مجبور کر دیتا ہے۔۔۔۔۔اماں کے لمس جیسا، نرم رو، میٹھا، تسکین بخش۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ لمس محبت، وہ۔۔۔۔۔۔وہ کب کا گم ہوگیا، وہ آسمانی نور میں ڈھل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم تو یتیم ہی تھے پر وہ اور زیادہ یتیم کرگیا۔۔۔۔۔۔

آج میری ممی حیات ہوتیں تو زنگی کی شکل نجانے کیا ہوتی ؟

شاید ان سب بیٹیوں جیسی ہوتی جن کی ماءیں زندہ ہیں۔

اس  وقت پھولوں کے رنگ اندھیرے میں یا تو سایوں جیسے لگ رہے ہیں یا اک دم شفاف روشنی جیسے۔۔۔۔۔۔۔دن چڑھتے ہی یہ واپس اپنے اپنے رنگ کے ہوجاتے ہیں۔۔۔۔

میں روز سوچتی ہوں کہ آج شام ڈھلے اس اکیلے سفر کو نکلوں اور روز۔۔۔۔۔۔ روز بھی روز جیسا ہی رہ جاتا ہے۔

لو، ایک اور پون جھکورے نے چھولیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسا ہلکا سا اور ریشمی سا ہے۔۔۔۔۔

جس درخت کے نیچے سے گزر رہی ہوں وہ کیسا گھنا اور سیہ ہے۔۔۔۔اماں کہتی تھی ؀ او چھوکری شام کے وقت اتنے لمبے بال کھلے چھوڑ کر درختوں کے نیچے مت جایا کر جن عاشق ہوجاتے ہیں؀

ہا ہا ، بچاری اماں، میری پیاری دادی اماں، کیسا پیار کرتی تھیں، کہتی تھیں کہ میری صراحی دار گردن والی کونج ہے یہ ۔۔۔۔۔۔

عجیب مثالیں ہیں یہ بھی، کونجیں، صراحیاں :)۔

نہ دادی ہیں، نہ کوجیں، نہ وہ گھر، نہ اس گھر کے مکیں۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنی بڑی سی دنیا میں ۔۔۔ وہ ایک گھر اب نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔کھو گیا، ہمیشہ کے لیے کھو گیا۔ صراحیاں بھی یہاں نہیں ہوتیں، ہاں پیاس ضرور ہوتی ہے، فقط پیاس، بے تحاشا پیاس۔

نہ ابو، نہ ممی نہ دادی، سب چلے گیے

سب رل گیے، سب بچھڑ گیے، کوءی رشتہ کوءی ناطہ نہیں بچا۔۔۔۔۔۔۔

گم ہیں سارے۔۔۔۔۔۔اپنی اپنی دنیا میں گم۔

خوبصورت شہر ہے یہ نوٹنگھم بھی، سامنے والی لمبی سڑک جو دور تک نیچے کو جا رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔بہت سارے گھر۔۔۔۔۔چھوٹے چھوٹے گھر۔۔۔۔۔۔ کیلنڈر کے کسی خوبصورت منظر جیسا شہر۔۔۔۔۔۔۔۔یہ علاقہ جہاں میں رہتی ہوں۔۔۔۔۔۔جہاں سے اس وقت گزرتی ہوءی پرندوں کی ایک قطار مجھے ان کھجوروں کی قطار لگ رہی ہے جو  دیس میں اپنے پاؤں جماءے رہتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔زرد سنہری اور سرخ کھجوریں ، اکدم گہرے گہرے چمکتے ہوءے رنگ کی۔۔۔۔۔۔ ٹوکرے کے ٹوکرے ہمارے یہاں آتے تھے اور پھر محلے کی سب سہیلیاں مجھ سے مانگ کر جاتی تھیں تو کیسا فخر محسوس ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اب ان کھجوروں کی گٹھلیاں چبھتی ہیں۔۔۔بد رنگ  ۔۔۔ بے رنگ۔۔۔۔سخت۔۔۔۔لکڑی جیسی !۔

اکیلی ہوں، بالکل اکیلی۔۔۔۔۔۔ کب سے اس سڑک پر یونہی نکلتی ہوں۔۔۔۔سوچوں کی وادیاں پار کر کے لوٹ آتی ہوں۔

کبھی خوش تو کبھی اداس۔۔۔ کبھی اتنی بیزار کہ جی چاہتا ہے سامنے آنے والی اگلی گاڑی کو اپنے اوپر سے گزرنے کی اجازت دے دوں۔

in-aankhon-ko-sapne-yahoo-360

Photobucketik raat

Comments»

1. farhan feda jameel - October 5, 2009

fairy tales
Raaat ko mein bhi mila kisi din pari sey
koi kalaam na tha os ka merey sey

eik rakhee tu the os jadoo ki tehni merey ser pe
woh na dek sakii koi milee bee thee barey andaaz o ajeeb sey

merey sath koi chaley ga os ka pehlaa kalaam tu thaa
ek merd he tu thaa jo ek baar os key naaam ko jaaan bhe na saka

khear he thaa na jo bhala bhe thaa
koch baaat hum ney bhe tu sona ni thee

Ap key ashaaar mein Ap ki zobani thi
Hawa ki andhee tu nai hoo

Hooron se pari noma bhi nai
insaaan ki insaniyast sey haseen tu ho hee

Heer key mizaaj ki tarah bhee
aap neynan farzana tu ho nai

ger Ap koch ho bhi
tu
bandagi khoda ki talib he

2. Amjed Saleem Alvi - May 1, 2010

Aik ghazal ki talash hai, agar koi madad ho sakay to shukar guzar hoon ga. Pehla sher maloom hai jo kuch iss tarah hai:

Tera haath Haath Main Aa Gaya to Chiragh Rah Main Jal gaye

Sher nahin sirf pehl;a misra hi maloom hai. Agar meri email id per bhaij sakain to mazeed shukriya.
amjedalvi@gmail.com

3. ange - October 7, 2010

i like


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: