jump to navigation

Sade Adu April 1, 2020

Posted by Farzana Naina in Film and Music, Music, Radio, Video.
Tags:
add a comment

Still in love with youstar-1

Born    Helen Folasade Adu

16 January 1959 (age 61) AT PRESENT

Ibadan, Colony and Protectorate of Nigeria

Other names   Sade Adu

Alma mater     Saint Martin’s School of Art

Occupation

Singer, song writer, actress

Year’s active   1982–present

Home town     Colchester, Essex, UK

Net worth       £50 million (2015)

Spouse(s)       Carlos Pliego (m. 1989–1995)

Partner(s)       Ian Watts (2007–present)

Children         1

 

Musical career

Genres

Soul, Smooth Jazz, Sophisti-pop, Quiet Storm

Instruments    Vocals, Guitar

Labels

Portrait Epic RCA Sony

Associated acts

Sade

Website         www.sade.com

Studio Albums

Diamond Life (1984)

Promise (1985)

Stronger Than Pride (1988)

Love Deluxe (1992)

Lovers Rock (2000)

Soldier of Love (2010)

music notes

There is a woman in Somalia

Scraping for pearls on the roadside

There’s a force stronger than nature

Keeps her will alive

This is how she’s dying

She’s dying to survive

Don’t know what she’s made of

I would like to be that brave

She cries to the heaven above

There is a stone in my heart

She lives a life she didn’t choose

And it hurts like brand-new shoes

Hurts like brand-new shoes

There is a woman in Somalia

The sun gives her no mercy

The same sky we lay under

Burns her to the bone

Long as afternoon shadows

It’s gonna take her to get home

Each grain carefully wrapped up

Pearls for her little girl

She cries to the heaven above

There is a stone in my heart

She lives in a world she didn’t choose

And it hurts like brand-new shoes

Suraiya Shahab ثریا شہاب ایک آواز September 14, 2019

Posted by Farzana Naina in British Pakistani Poetess, Famous Urdu Poets, Farzana Naina, Ghazal, Kavita, Literature, Mushaira, Nazm, Pakistani Poetess, Poetry, Radio, Shaira, Shairy, Sher, Tv Presenter, Urdu, Urdu Literature, Urdu Poetry, Urdu Shairy.
Tags: , , , , , ,
1 comment so far

مشہور بین الاقوامی براڈ کاسٹر، شاعرہ، افسانہ نگارہ، اور ناول نگارہ ثریا شہاب کینسر کے باعث انتقال کر گئیں۔ 

13 Sep 2019

انا للہ و انا الیہ راجعون

ثریا شہاب سے میری دوستی کا آغاز دو ہزار دو میں ہوا تھا جب میں ادبی محافل میں شرکت کے لیئے ہائیڈل برگ اور فرینکفرٹ گئی تھی۔

پہلی ملاقات میں ہی ہم ایک دوسرے کے گرویدہ ہوگئے، اس دوران انہوں نے جرمن ریڈیو کی ڈوئچے ویلے  ورلڈ سروس کے لیئے میرا انٹرویو ریکارڈ کیا تھا ۔

کینسر کے بعد وہ الزائمر کے مرض میں مبتلا ہوئیں اسی سبب ان سے جب بات ہوئی تو وہ کافی کچھ بھول چکی تھیں اور اپنی پہچان کروانی پڑتی تھی، یہ ایک دلخراش صورتحال رہی لیکن ان سے محبت اور عقیدت کبھی ماند نہیں پڑی۔

آج ثریا شہاب کے انتقال کی خبر ملی تو ایک شدید افسردگی نے گھیر لیا، موت تو برحق ہے اور سبھی کو اک نہ اک روز ساتھ لے ہی جائے گی لیکن ایسے انمول نگینے جب چھینتی ہے تو زندگی کی چمک مدھم پڑنے لگتی ہے۔

ثریا شہاب اردو دنیا کی ایک انمول ہستی تھیں ، ایک زمانہ تھا جو ان کی ورلڈ سروس صداکاری کا دیوانہ تھا۔

ان کی آواز میں خبریں سننے کے لیئے لاکھوں کان منتظر رہتے تھے۔

یہ وہ دور تھا جب مواصلاتی نظام آج کی انٹرنیٹ دنیا سے بیحد مختلف تھا۔

اپنی زبان میں کچھ سننے کے لیئے اردو بولنے اور سمجھنے والے دنیا بھر کے ریڈیو اسٹیشن چھانا کرتے ایسے میں ثریا شہاب کی آواز نے ان کے دلوں کو گرما رکھا تھا۔

ثریا نے ساٹھ کی دہائی سے اپنے نشریاتی سفر میں قدم رکھا، کراچی کے ڈراموں میں بھی حصہ لیا لیکن جلد ہی ایران کی اردو ورلڈ سروس میں کام کرنے زاہدان پدھار گئیں۔

آج بھی وہ آواز سماعتوں میں یوں گونجتی ہے کہ ’’ آواز کی دنیا کے ساتھیو یہ ریڈیو ایران زاہدان ہے‘‘۔

انہوں نےایران سے واپسی کے بعد پاکستان ٹیلیویژن پر خبر نامہ جوائن کیا پھر اس کے بعد لندن چلی گئیں جہاں پر بی بی سی کے لیئے کام کیا، وہیں سے وہ جرمنی چلی گئی تھیں جہاں انہوں نے ایک جرمن نژاد سے اپنی دوسری شادی کی، ثریا کے دو بیٹے اور ایک بیٹی ہیں۔

ثریا شہاب ایک محنتی اور باہمت شخصیت کا نام ہے، انہوں نے بے لوث ادبی خدمات انجام دیں جس بنا پر وہ اپنے دور کی شناخت رہیں۔

جرمنی سے وہ ایک میگزین نکالتی تھیں جس میں میری تحاریر بھی شامل رہیں، فون پر بھی وہ ہمیشہ مجھ کو لکھنے کی تحریک دیتی رہیں۔

ثریا شاعری کے علاوہ افسانے بھی لکھتی تھیں ان کے دو ناول، ایک افسانوی مجموعہ اور ایک شعری مجموعہ’’ خود سے ایک سوال‘‘ شائع ہو چکے ہیں۔

جرمنی میں جب ان کی صحت مدھم پڑنے لگی تو انہوں نے اسلام آباد واپسی کر لی تاکہ ان کی بہتر دیکھ بھال ہو سکے، پاکستان لوٹنے کے بعد ان کے جرمن شوہر ہانز وہاں ایڈجسٹ نہ ہوسکے اور واپس چلے گیئے البتہ وہاں بھی ثریا کی طبیعت نے نچلا نہیں بیٹھنے دیا اور ثریا شہاب نے نوجوانوں کے لیئے ایک تنظیم بنا ئی جس کا نام تھا یوتھ لیگ۔

اس تنظیم کا مقصد نوجوانوں کو تعمیری اور مثبت کاموں کی جانب لے جانا تھا، ان کا جینا زندگی سے بھرپور اور ایک مثال رہا۔

ثریا کو الزائمر کی بیماری لگ گئی اور وہ شخصیت جسے ساری دنیا یاد کرتی ہے سب کو بھول گئی۔

پاکستان نے بھی ان کی خدمات کو بھلا دیا اور کبھی کسی اعزاز سے نہیں نوازا، یہی ہمارے ملک کا ایک بہت بڑا المیہ ہے کہ وہ جیتے جی اپنے ہنرمندوں، محنت کشوں اور با ہمت لوگوں کو صلہ نہیں دیتا۔

ثریا جیسے شستہ لب و لہجہ اور تہذیب و تمدن میں گندھی ہوئی شخصیات آج ڈھونڈے سے شاذ و نادر ہی ملتی ہیں۔

جب تلک رہے جیتا چاہئے ہنسے بولے

آدمی کو چپ رہنا موت کی نشانی ہے

شاعر: تاباں عبد الحئی

میں بہت اداس ہوں اور پروردگار سے ان کی مغفرت کے لیئے دعاگو ہوں کہ انہیں کروٹ کروٹ جنت نصیب کرے۔۔۔ آمین۔

Farzaba Naina, Interview with Surraiya Shahab for world service in Germany
Farzaba Naina, Interview with Surraiya Shahab for world service in Germany
Farzaba Naina, Interview with Surraiya Shahab for world service in Germany

Farzana Khan, Interview with Surraiya Shahab for world service in Germany

ثریا کی ذات ایک روشنی تھی اور یہ روشنی کبھی کم نہ ہوگی۔

Yesteryear’s iconic newscaster Suraiya Shahab reaches a tragic end

Paving the way for female newsreaders in an era bygone, yesteryear’s iconic newscaster Suraiya Shahab passed away Friday morning in Islamabad. She was 78.
Shahab, who extended her services to the state-owned Pakistan Television (PTV) for as long as ten years, succumbed to cancer and Alzheimer’s disease after a prolonged period of illness.
Starting her broadcasting career in the 60’s with a magazine programme at Radio Iran Zahidan which mustered immense success, Shahab’s story is a tragic one that shows how the country forgets its own legends.
“It is sad to see how the legends of the nation are banished from people’s thoughts in their lifetime only,” Shahab’s son Khalid shared in an exclusive conversation with The News.
He added, “My mother used to helm a radio programme when she started reading the news professionally at the tender age of 16. She worked for PTV and Radio Pakistan, before joining the British Broadcasting Corporation (BBC).”
“She was diagnosed with breast cancer, for which she underwent surgery in Germany,”
“The doctors however did not completely remove all the cancerous cells that later spread to her brain. She then had to undergo a brain surgery after which most of her memory got affected and she suffered from Alzheimer’s disease.”
Along with extending her services to renowned organisations like PTV and BBC, Suraiya was also engaged in philanthropic work.
“She was actively involved in social work such as construction of wells, building of schools. During her early years with PTV, she worked very hard to regularise daily-wage labourers,”
“Suraiya Shahab was a great name in the news reading realm. alive” .

https://www.urduvoa.com/a/suraiya-shahab/5082788.html

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Farzaba Naina, Surraiya Shahab and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzana Khan, Surraiya Shahab and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Farzaba Naina, Naseem Akhtar, Kaukab Akhtar, Akhtar Sahab and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzana Khan, Naseem Akhtar, Kaukab Akhtar, Akhtar Sahab and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzaba Naina and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzana Khan and Tahira Safi in Germany Mushaira

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Farzaba Naina in Germany Mushaira

Farzana Khan in Germany Mushaira

Mehdi Hassan June 1, 2012

Posted by Farzana Naina in Film and Music, Ghazal, Ghazal, Music, Old Pakistani Music, Poetry, Radio, Shairy, Urdu Poetry, Video.
Tags: , , , , , ,
1 comment so far

بشکریہ بی بی سی اردو

شہنشاہِ غزل استاد مہدی حسن 1927 میں راجستھان کے ایک گاؤں لُونا میں پیدا ہوئے۔ اُن کے والد اور چچا دُھرپد گائیکی کے ماہر تھے اور مہدی حسن کی ابتدائی تربیت گھر ہی میں ہوئی۔ خود اُن کے بقول

وہ کلاونت گھرانے کی سولھویں پیڑھی سے تعلق رکھتے تھے۔

1947 میں بیس سالہ مہدی حسن اہلِ خانہ کے ساتھ نقلِ وطن کر کے پاکستان آ گئے اور محنت مزدوری کے طور پر سائیکلیں مرمت کرنے کا کام شروع کیا۔ 

کسبِ کمالِ کُن کہ عزیزِ جہاں شوی

اسی روایت پر عمل کرتے ہوئے انھوں نے مکینک کے کام میں مہارت حاصل کی اور پہلے موٹر مکینک اور اسکے بعد ٹریکٹر کے مکینک بن گئے، لیکن رہینِ ستم ہائے روزگار رہنے کے باوجود وہ موسیقی کے خیال سے غافل نہیں رہے اور ہر حال میں اپنا ریاض جاری رکھا۔

سن پچاس کی دہائی اُن کے لیے مبارک ثابت ہوئی جب اُن کا تعارف ریڈیو پاکستان کے پروڈیوسر سلیم گیلانی سے ہوا۔ جوہر شناس نے موتی کی صحیح پہچان کی تھی چنانچہ دھرپد، خیال، ٹھُمری اور دادرے کی تنگنائے سے نکل کر یہ جوہرِ قابل غزل کی پُرفضا وادی میں آنکلا جہاں اسکی صلاحیتوں کو جِلا ملی اور سن ساٹھ کی دہائی میں اسکی گائی ہوئی فیص احمد فیض کی غزل ’گلوں میں رنگ بھرے‘ ہر گلی کوچے میں گونجنے لگی۔

فلمی موسیقار جو ان کے فن کو ریڈیو کی گائیکی کہہ کر دامن چھڑاتے رہے تھے، اب جمگھٹا بنا کر اسکے گرد جمع ہوگئے چنانچہ سن ساٹھ اور ستر کی دہائیوں میں مہدی حسن پاکستان کے معروف ترین فلمی گائیک بن گئے اور سنتوش کمار، درپن، وحید مراد اور محمد علی سے لیکر ندیم اور شاہد تک ہر ہیرو نے مہدی حسن کے گائے ہوئے گیتوں پر لب ہلائے۔

سنجیدہ حلقوں میں اُن کی حیثیت ایک غزل گائیک کے طور پر مستحکم رہی۔ اسی حیثیت میں انھوں نے برِصغیر کے ملکوں کا کئی بار دورہ کیا۔ بھارت میں اُن کے احترام کا جو عالم تھا وہ لتا منگیشکر کے اس خراجِ تحسین سے ظاہر ہوا کہ مہدی حسن کے گلے میں تو بھگوان بولتے ہیں۔ نیپال کے شاہ بریندرا اُن کے احترام میں اُٹھ کے کھڑے ہوجاتے تھے اور فخر سے بتاتے تھے کہ انھیں مہدی حسن کی کئی غزلیں زبانی یاد ہیں۔

پاکستان کے صدر ایوب، صدر ضیاءالحق اور صدر پرویز مشرف بھی اُن کے مداح تھے اور انھیں اعلیٰ ترین سِول اعزازات سے نواز چُکے تھے، لیکن مہدی حسن کے لیے سب سے بڑا اعزاز وہ بےپناہ مقبولیت اور محبت تھی جو انھیں عوام کے دربار سے ملی۔ پاک و ہند سے باہر بھی جہاں جہاں اُردو بولنے اور سمجھنے والے لوگ آباد ہیں، مہدی حسن کی پذیرائی ہوتی رہی اور سن اسّی کی دہائی میں انھوں نے اپنا بیشتر وقت یورپ اور امریکہ کے دوروں میں گزارا۔

مہدی حسن کثیرالاولاد آدمی تھے۔ اُن کے چودہ بچّے ہیں، نو بیٹے اور پانچ بیٹیاں۔ اپنے بیٹوں آصف اور کامران کے علاوہ انھوں نے پوتوں کو بھی موسیقی کی تعلیم دی اور آخری عمر میں انھوں نے پردادا بننے کا اعزاز بھی حاصل کرلیا اور اپنے پڑپوتوں کے سر پہ بھی دستِ شفقت رکھا۔

اُن کے شاگردوں میں سب سے پہلے پرویز مہدی نے نام پیدا کیا اور تمام عمر اپنے اُستاد کو خراجِ عقیدت پیش کرتے رہے۔ بعد میں غلام عباس، سلامت علی، آصف جاوید اور طلعت عزیز جیسے ہونہار شاگردوں نے اُن کی طرز گائیکی کو زندہ رکھا۔

ملکہ ترنم نور جہاں کا کہنا تھا کہ ایسی آواز صدیوں میں ایک بار پیدا ہوتی ہے، حالانکہ یہ بات خود مادام کی شخصیت پر بھی اتنی ہی صادق آتی ہے۔ آج مداّح اور ممدوح دونوں ہی اس دنیا میں نہیں لیکن موت نے صرف اُن کا جسدِ خاکی ہم سے چھینا ہے۔ اُن کی لازوال آواز ہمیشہ زندہ رہے گی۔

Jagjit Singh – جگجیت سنگھ October 10, 2011

Posted by Farzana Naina in Art, Film and Music, Ghazal, Ghazal, Kavita, Mushaira, Music, Nazm, Poetry, Radio, Shairy, Sher, Urdu Poetry, Urdu Shairy.
Tags:
2 comments

پير 10 اکتوبر2011

بھارت میں غزلوں کے معروف گلوکار اور غزل گائیک جگجیت سنگھ کا ممبئی کے لیلا وتی ہسپتال میں انتقال ہوگیا ہے۔ ان کی عمر ستّر برس تھی۔

گزشتہ ہفتہ برین ہیمبرج کے سبب انہیں ہسپتال میں داخل کیا گيا تھا۔ سوگواروں میں وہ اپنی اہلیہ چترا داس کو چھوڑ گئے ہیں۔

جس روز انہیں ہسپتال میں داخل کیا گیا اس روز وہ ممبئی میں پاکستان کے مشہور زمانہ گلوکار غلام علی کے ساتھ مشترکہ پروگرام پیش کرنے والے تھے۔

جگجیت سنگھ کے ایک ہی بیٹا تھا۔ جو جوانی میں ہی ایک روڈ حادثے میں ہلاک ہوگئے تھے۔

آزادی کے بعد بھارت میں غزل گائیکی کے فن کے حالات اچھے نہیں رہے تھے لیکن جگجیت نے اس فن کو دوبارہ زندہ کیا اور غزل کو درباروں یا ادب کی محفلوں سے نکال کر عوام تک پہنچانے میں اہم کردار ادا کیا۔ جگجیت سنگھ غزل گلوکاری کے لیے بھارت میں تو مشہور ہیں ہی لیکن ان کے مداح دنیا بھر میں پھیلے ہوئے ہیں۔

جگجیت سنگھ ریاست راجستھان کے شری گنگا نگر میں آٹھ فروری انیس سو اکتالیس میں پیدا ہوئے تھے۔ پیدائش کے وقت ان کا نام جگموہن رکھا گيا تھا لیکن ایک خاندانی ستارہ شناش کی صلاح پر ان کا نام جگجیت سنگھ کر دیا گیا۔

جگجیت سنگھ نے فلموں میں بھی نغمے گائے لیکن بھارت میں انہیں غزل گائیکی کا معمار مانا جاتا ہے جنہوں نے اس فن کو عوام میں مقبول کیا۔

نقاد ان کے فن کو معیاری یا اعلٰی پائے کا نہیں سمجھتے ہیں لیکن نکتہ چینی بھی اس بات کے قائل ہیں کہ انہوں نے غزلوں کو فلمی گیتوں کی طرح عوام تک پہنچایا۔

جگجیت سنگھ پہلے اپنی اہلیہ چترا کے ساتھ مل کر غزلیں گاتے تھے اور ان کے کئی البم کافی مقبول ہوئے۔ لیکن بیٹے کی موت کے بعد چترانے اس پیشہ کو یکسر چھوڑ دیا اور کبھی دوبارہ نہیں گایا۔

گجیت نے لتا منگیشکر کے ساتھ مل کر سجدہ کے نام سے ایک البم بنایا تھا جو بہت مقبول ہوا تھا۔ انہوں نے اوشا منگیشکر کے ساتھ بھی کافی کام کیا۔

انہوں نے بالی وڈ کے معروف نغمہ نگار اور شاعر گلزار کے سات بھی کافی کام کیا اور ان کے ٹی وی سیریل مرزا غالب میں انہوں نے کئی غزلیں پیش کیں جو بہت مقبول ہوئیں۔ غالب کی چند غزلوں کو جگجیت سنگھ نے عوام میں دوام بخشا۔ اس سیریل کی بیشتر غزلیں اب بھی لوگوں کی پسندیدہ ہیں۔

انہوں نے جاوید اختر کے ساتھ بھی کام کیا اور سوز کے نام سے ایک البم تیار کیا جو کافی سنا گیا۔

جگجیت سنگھ کو گھوڑوں سے بہت لگاؤ تھا اور گھوڑوں کی ریس کے شوقین تھے۔ ان کے پاس گھوڑے تھے اور ان کی دیکھ بھال کے لیے انہوں نے بہت سے لوگوں کی مدد بھی لی تھی۔

بشکریہ بی بی سی اردو

ہفتہ 24 ستمبر 2011

بھارت کے مشہور غزل گو جگجیت سنگھ کی دماغ کی شریان پھٹنے کے بعد ممبئی کے ایک ہسپتال میں ان کا آپریشن کیا گیا ہے۔

ممبئی کے علاقے باندرہ میں واقع ليلاوتی ہسپتال کے ذرائع نے بتایا کہ جمعہ کی صبح ہسپتال لائے جانے کے بعد ستّر سالہ جگجیت سنگھ کی سرجری کی گئی تاہم ان کی حالت نازک بتائی جا رہی ہے۔

دوسری جانب خبر رساں ادارے پی ٹی آئی نے ان کے ایک قربت دار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی حالت خطرے سے باہر ہے۔

انہیں جمعہ کی شام پاکستان کے مشہور غزل گو غلام علی کے ساتھ ایک پروگرام میں شامل ہونا تھا۔

اس سے پہلے جگجیت سنگھ کو سنہ انیس سو اٹھانوے میں دل کا دورہ پڑا تھا اور جسم میں خون کی گردش میں مسائل کی وجہ سے انہیں اکتوبر سنہ دو ہزار سات میں ہسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔

ڈاکٹروں کا خیال ہے کہ شاید ان ہی وجوہات کی بناء پر انہیں برین ہیمرج ہوا ہوگا۔

جگجیت سنگھ کے خاندان کے ایک قریبی دوست نے ليلاوتي ہسپتال میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ ان کے دماغ کے ایک حصہ میں خون جم گیا تھا جسے نکالنے کے لئے آپریشن کیا گیا۔

ان کے مطابق، انہیں اگلے اڑتالیس گھنٹے تک انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں رکھا جائے گا۔

BBC UK