jump to navigation

Maulana Zafar Ali Khan – مولانا ظفر علی خان

مولانا ظفر علی خان

وہ شمع اُجالا جس نے کیا چالیس برس تک غاروں میں

اِک روز جھلکنے والی تھی سب دنیا کے درباروں میں

رحمت کی گھٹائیں پھیل گئیں افلاک کے گنبد گنبد پر

وحدت کی تجلّی کوند گئی آفاق کے سینا زاروں میں

گر ارض و سما کی محفل میں لولاک لما کا شور نہ ہو

یہ رنگ نہ ہو گلزاروں میں یہ نوُر نہ ہو سیّاروں میں

وہ جنس نہیں ایمان جسے لے آئیں دکانِ فلسفہ سے

ڈھونڈے سے ملے گی عاقل کو یہ قرآں کے سیپاروں میں

جس میکدے کی ایک بوند سے بھی لب کج کلہوں کے تر نہ ہوئے

ہیں آج بھی ہم بے مایہ گدا اس میکدے کے سرشاروں میں

جو فلسفیوں سے کھل نہ سکا اور نکتہ وروں سے حل نہ ہوا

وہ راز اِک کملی والے نے بتلادیا چند اشاروں میں

ہیں کرنیں ایک ہی مشعل کی بوبکرؓ و عمرؓ عثمانؓ و علیؓ

ہم مرتبہ ہیں یارانؓ نبی کچھ فرق نہیں ان چاروںؓ میں

اے کربلا کی خاک اس احسان کو نہ بھول

تڑپی ہے تجھ پہ لاش جگر گوشۂ بتول

اسلام کے لہو سے تری پیاس بجھ گیٔ

سیراب کر گیا تجھے خونِ رگِ رسول

کرتی رہے گی پیش شہادت  حسین کی

آزادیٔ حیات کا یہ سرمدی اصول

چڑھ جاۓ کٹ کے سر ترا نیزے کی نوک پر

لیکن یزیدیوں کی اطاعت نہ کر قبول


Comments»

1. zeeshan - December 8, 2013

Allah maulana I qbr shreef pr rehmataen Atari farmae

2. Asim Prince - March 23, 2014

Nice zaffar

3. misbah - September 21, 2014

Hand ki tasreeh za far ali khan 2nd year

4. Muhammad-Ibrahim - July 24, 2016

ik in ka bara piara shair
aritu ki hikmat hey yasrab ki londi
falatoon hey tifl-e-dabastan-e-Ahmed


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: