jump to navigation

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام ۔ سلام مع فرہنگ November 20, 2019

Posted by Farzana Naina in Hamd, Naat, Poetry, Urdu Poetry, Urdu Shairy.
Tags: , , , , ,
trackback

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام

مِہرِ چرخِ نبوت پہ روشن دُرود

گلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام  

شہرِ یارِ ارم تاج دارِ حرم

نوبہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

شبِ اسرا کے دولہا پہ دائم دُرود

نوشۂ بزمِ جنّت پہ لاکھوں سلام

عرش کی زیب و زینت پہ عرشی دُرود

فرش کی طیب و نُزہت پہ لاکھوں سلام

نورِ عینِ لطافت پہ اَلطف دُرود

زیب و زینِ نظافت پہ لاکھوں سلام

سروِ نازِ قِدَم مغزِ رازِ حِکَم

یکّہ تازِ فضیلت پہ لاکھوں سلام

نقطۂ سِرِّ وحدت پہ یکتا دُرود

مرکزِ دورِ کثرت پہ لاکھوں سلام

صاحبِ رَجعتِ شمس و شقُ القمر

نائبِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس کے زیرِ لِوا آدم و من سِوا

اس سزائے سیادت پہ لاکھوں سلام

عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں

اُس کی قاہر ریاست پہ لاکھوں سلام

اصل ہر بُود و بہبود تُخمِ وجود

قاسمِ کنزِ نعمت پہ لاکھوں سلام

فتحِ بابِ نبوت پہ بے حد دُرود

ختمِ دورِ رسالت پہ لاکھوں سلام

شرقِ انوارِ قدرت پہ نوری دُرود

فتقِ اَزہارِ قدرت پہ لاکھوں سلام

بے سہیم و قسیم و عدیل و مثیل

جوہرِ فردِ عزت پہ لاکھوں سلام

سِرِّ غیبِ ہدایت پہ غیبی دُرود

عطر جیبِ نہایت پہ لاکھوں سلام

ماہِ لاہوتِ خَلوت پہ لاکھوں دُرود

شاہِ ناسوتِ جَلوت پہ لاکھوں سلام

کنزِ ہر بے کس و بے نوا پر دُرود

حرزِ ہر رفتہ طاقت پہ لاکھوں سلام

پرتوِ اسمِ ذاتِ اَحد پر دُرود

نُسخۂ جامعیت پہ لاکھوں سلام

مطلعِ ہر سعادت پہ اسعد دُرود

مقطعِ ہر سیادت پہ لاکھوں سلام

خلق کے داد رس سب کے فریاد رس

کہفِ روزِ مصیبت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے بے کس کی دولت پہ لاکھوں دُرود

مجھ سے بے بس کی قوت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ دنیٰ ہُوْ میں گم کُن اَنَا

شرحِ متنِ ہُوِ یَّت پہ لاکھوں سلام  

انتہائے دوئی ابتدائے یکی

جمع تفریق و کثرت پہ لاکھوں سلام

کثرتِ بعدِ قلّت پہ اکثر دُرود

عزتِ بعدِ ذلّت پہ لاکھوں سلام

ربِّ اعلا کی نعمت پہ اعلا دُرود

حق تعالیٰ کی منّت پہ لاکھوں سلام

ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد دُرود

ہم فقیروں کی ثروت پہ لاکھوں سلام

فرحتِ جانِ مومن پہ بے حد دُرود

غیظِ قلبِ ضلالت پہ لاکھوں سلام  

سببِ ہر سبب منتہائے طلب

علّتِ جملہ علّت پہ لاکھوں سلام

مصدرِ مظہریت پہ اظہر دُرود

مظہرِ مصدریت پہ لاکھوں سلام

جس کے جلوے سے مرجھائی کلیا ں کھلیں

اُس گلِ پاک مَنبت پہ لاکھوں سلام

قدِّ بے سایہ کے سایۂ مرحمت

ظلِ ممدود رافت پہ لاکھوں سلام

طائرانِ قُدُس جس کی ہیں قُمریاں

اُس سہی سرو قامت پہ لاکھوں سلام

وصف جس کا ہے آئینۂ حق نما

اُس خدا ساز طلعت پہ لاکھوں سلام  

جس کے آگے سرِ سروراں خم رہیں

اُس سرِ تاجِ رفعت پہ لاکھوں سلام

وہ کرم کی گھٹا گیسوے مُشک سا

لکّۂ ابرِ رافت پہ لاکھوں سلام

لَیْلَۃُ القدر میں مطلعِ الفجر حق

مانگ کی استقامت پہ لاکھوں سلام

لخت لختِ دلِ ہر جگر چاک سے

شانہ کرنے کی عادت پہ لاکھوں سلام

دُور و نزدیک کے سُننے والے وہ کان

کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

چشمۂ مِہر میں موجِ نورِ جلال

اُس رگِ ہاشمیت پہ لاکھوں سلام

جس کے ماتھے شفاعت کا سہرا رہا

اُس جبینِ سعادت پہ لاکھوں سلام

جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جھکی

اُن بھووں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

اُن کی آنکھوں پہ وہ سایہ افگن مژہ

ظلۂ قصرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

اشک باریِ مژگاں پہ برسے دُرود

سلکِ دُرِّ شفاعت پہ لاکھوں سلام

معنیِ قَدْ رَأیٰ مقصدِ مَاطَغیٰ

نرگسِ باغِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس طرف اٹھ گئی دم میں دم آ گیا

اُس نگاہِ عنایت پہ لاکھوں سلام

نیچی آنکھوں کی شرم و حیا پر دُرود

اونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

جن کے آگے چراغِ قمر جھلملائے

اُن عِذاروں کی طلعت پہ لاکھوں سلام

اُن کے خد کی سُہُولت پہ بے حد دُرود

اُن کے قد کی رشاقت پہ لاکھوں سلام  

جس سے تاریک دل جگمگانے لگے

اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

چاند سے منہ پہ تاباں درخشاں دُرود

نمک آگیں صباحت پہ لاکھوں سلام  

شبنمِ باغِ حق یعنی رُخ کا عَرَق

اُس کی سچی بَراقت پہ لاکھوں سلام

خط کی گردِ دہن وہ دل آرا پھبن

سبزۂ نہرِ رحمت پہ لاکھوں سلام  

رِیشِ خوش معتدل مرہمِ رَیش دل

ہالۂ ماہِ نُدرت پہ لاکھوں سلام

پتلی پتلی گلِ قُدس کی پتّیاں

اُن لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

وہ دہن جس کی ہر بات وحیِ خدا

چشمۂ علم و حکمت پہ لاکھوں سلام

جس کے پانی سے شاداب جان و جناں

اُس دہن کی طراوت پہ لاکھوں سلام

جس سے کھاری کنویں شیرۂ جاں بنے

اُس زُلالِ حلاوت پہ لاکھوں سلام

وہ زباں جس کو سب کُن کی کنجی کہیں

اُس کی نافذ حکومت پہ لاکھوں سلام

اُس کی پیاری فصاحت پہ بے حد دُرود

اُس کی دل کش بلاغت پہ لاکھوں سلام

اُس کی باتوں کی لذّت پہ بے حد دُرود

اُس کے خطبے کی ہیبت پہ لاکھوں سلام

وہ دُعا جس کا جوبن قبولِ بہار

اُس نسیمِ اجابت پہ لاکھوں سلام

جن کے گچھّے سے لچھّے جھڑیں نور کے

اُن ستاروں کی نُزہت پہ لاکھوں سلام

جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں

اُس تبسم کی عادت پہ لاکھوں سلام

جس میں نہریں ہیں شیٖر شکر کی رواں

اُس گلے کی نضارت پہ لاکھوں سلام

دوش بردوش ہے جن سے شانِ شَرَف

ایسے شانوں کی شوکت پہ لاکھوں سلام

حَجَرِ اسودِ کعبۂ جان و دل

یعنی مُہرِ نبوت پہ لاکھوں سلام

روئے آئینۂ علم پُشتِ حضور

پُشتیِ قصرِ ملّت پہ لاکھوں سلام

ہاتھ جس سمت اُٹھّا غنی کر دیا

موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

جس کو بارِ دو عالم کی پروا نہیں

ایسے بازو کی قوّت پہ لاکھوں سلام

کعبۂ دین و ایماں کے دونوں ستوں

ساعدینِ رسالت پہ لاکھوں سلام

جس کے ہر خط میں ہے موجِ نورِ کرم

اُس کفِ بحرِ ہمّت پہ لاکھوں سلام

نُور کے چشمے لہرائیں دریا بہیں

انگلیوں کی کرامت پہ لاکھوں سلام

عیدِ مشکل کُشائی کے چمکے ہِلال

ناخنوں کی بشارت پہ لاکھوں سلام

رفعِ ذکرِ جلالت پہ اَرفع دُرود

شرحِ صدرِ صدارت پہ لاکھوں سلام

دل سمجھ سے ورا ہے مگر یوں کہوں

غنچۂ رازِ وحدت پہ لاکھوں سلام

کُل جہاں مِلک اور جَو کی روٹی غذا

اُس شکم کی قناعت پہ لاکھوں سلام

جو کہ عزمِ شفاعت پہ کھنچ کر بندھی

اُس کمر کی حمایت پہ لاکھوں سلام  

انبیا تَہ کریں زانُو اُن کے حضور

زانُوؤں کی وجاہت پہ لاکھوں سلام

ساق اصلِ قدم شاخِ نخلِ کرم

شمعِ راہِ اِصابت پہ لاکھوں سلام

کھائی قرآں نے خاکِ گزر کی قسم

اُس کفِ پا کی حُرمت پہ لاکھوں سلام

جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند

اُس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

پہلے سجدے پہ روزِ ازل سے دُرود

یادگاریِ اُمّت پہ لاکھوں سلام

زرع شاداب و ہر ضرع پُر شیٖر سے

برَکاتِ رضاعت پہ لاکھوں سلام

بھائیوں کے لیے ترکِ پِستاں کریں

دودھ پیتوں کی نِصفَت پہ لاکھوں سلام

مہدِ والا کی قسمت پہ صدہا دُرود

بُرجِ ماہِ رسالت پہ لاکھوں سلام

اللہ اللہ وہ بچپنے کی پھبَن!

اُس خدا بھاتی صورت پہ لاکھوں سلام

اُٹھتے بوٹوں کی نشوونَما پر دُرود

کھِلتے غنچوں کی نکہت پہ لاکھوں سلام

فضلِ پیدایشی پر ہمیشہ دُرود

کھیلنے سے کراہت پہ لاکھوں سلام

اعتلائے جبلّت پہ عالی دُرود

اعتدالِ طَوِیّت پہ لاکھوں سلام

بے بناوٹ ادا پر ہزاروں دُرود

بے تکلف ملاحت پہ لاکھوں سلام

بھینی بھینی مہک پر مہکتی دُرود

پیاری پیاری نفاست پہ لاکھوں سلام

میٹھی میٹھی عبارت پہ شیریں دُرود

اچھی اچھی اِشارت پہ لاکھوں سلام  

سیدھی سیدھی رَوِش پر کروروں دُرود

سادی سادی طبیعَت پہ لاکھوں سلام

روزِ گرم و شبِ تیرہ و تار میں

کوہ و صحرا کی خَلوت پہ لاکھوں سلام

جس کے گھیرے میں ہیں انبیا و مَلک

اس جہاں گیر بعثت پہ لاکھوں سلام

ادھے شیشے جھلاجھل دمکنے لگے

جلوہ ریزیِ دعوت پہ لاکھوں سلام

لطفِ بیداریِ شب پہ بے حد دُرود

عالمِ خوابِ راحت پہ لاکھوں سلام

خندۂ صبحِ عشرت پہ نُوری دُرود

گِریۂ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

نرمیِ خوئے لینت پہ دائم دُرود

گرمیِ شانِ سطوت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے کھنچی گردنیں جھک گئیں

اُس خداداد شوکت پہ لاکھوں سلام

کس کو دیکھا یہ موسیٰ سے پوچھے کوئی

آنکھوں والوں کی ہمّت پہ لاکھوں سلام

گردِ مہ دستِ انجم میں رَخشاں ہِلال

بدر کی دفعِ ظلمت پہ لاکھوں سلام

شورِ تکبیر سے تھرتھراتی زمیں

جنبشِ جیشِ نصرت پہ لاکھوں سلام

نعرہائے دلیراں سے بَن گونجتے

غُرّشِ کوسِ جرأت پہ لاکھوں سلام

وہ چقاچاق خنجر سے آتی صدا

مصطفی تیری صَولت پہ لاکھوں سلام

اُن کے آگے وہ حمزہ کی جاں بازیاں

شیرِ غُرّانِ سطوت پہ لاکھوں سلام

الغرض اُن کے ہر موٗ پہ لاکھوں دُرود

اُن کی ہر خُو و خصلت پہ لاکھوں سلام

اُن کے ہر نام و نسبت پہ نامی دُرود

اُن کے ہر وقت و حالت پہ لاکھوں سلام

اُن کے مولا کی اُن پر کروروں دُرود

اُن کے اصحاب و عترت پہ لاکھوں سلام

پارہائے صُحف غنچہ ہائے قُدُس

اہلِ بیتِ نبوت پہ لاکھوں سلام

آبِ تطہیر سے جس میں پودے جمے

اُس ریاضِ نجابت پہ لاکھوں سلام

خونِ خیرُالرُّسل سے ہے جن کا خمیر

اُن کی بے لوث طینت پہ لاکھوں سلام

اُس بتولِ جگر پارۂ مصطفی

حجلہ آرائے عِفّت پہ لاکھوں سلام

جس کا آنچل نہ دیکھا مہ و مِہر نے

اُس رِدائے نَزاہت پہ لاکھوں سلام

سیّدہ زاہرہ طیّبہ طاہرہ

جانِ احمد کی راحت پہ لاکھوں سلام

حَسَنِ مجتبیٰ سیّدُ الاسخیا

راکبِ دوشِ عزت پہ لاکھوں سلام

اَوجِ مِہرِ ہُدیٰ موجِ بحرِ نَدیٰ

رَوحِ رُوحِ سخاوت پہ لاکھوں سلام

شہد خوارِ لُعابِ زبانِ نبی

چاشنی گیرِ عصمت پہ لاکھوں سلام

اُس شہیدِ بَلا شاہِ گلگوں قَبا

بے کسِ دشتِ غربت پہ لاکھوں سلام

دُرِّ دُرجِ نجف مِہرِ بُرجِ شَرَف

رنگِ رومی شہادت پہ لاکھوں سلام

اہلِ اسلام کی مادرانِ شفیق

بانوانِ طہارت پہ لاکھوں سلام  

جلوگیّانِ بیتُ الشَّرَف پر دُرود

پردگیّانِ عفّت پہ لاکھوں سلام

سَیِّما پہلی ماں کہفِ امن و اماں

حق گزارِ رفاقت پہ لاکھوں سلام

عرش سے جس پہ تسلیم نازل ہوئی

اُس سرائے سلامت پہ لاکھوں سلام

منزلُُ مَّن قَصَبْ لَا نَصَبْ لَاصَخَبْ

ایسے کوشک کی زینت پہ لاکھوں سلام

بنتِ صدّیق آرامِ جانِ نبی

اُس حریمِ براء ت پہ لاکھوں سلام

یعنی ہے سورۂ نور جن کی گواہ

اُن کی پُر نور صورت پہ لاکھوں سلام

جن میں رُوح ا لقدُس بے اجازت نہ جائیں

اُن سُرادِق کی عِصمت پہ لاکھوں سلام

شمعِ تابانِ کاشانۂ اجتہاد

مفتیِ چار ملّت پہ لاکھوں سلام

جاں نثارانِ بدر و اُحُد پر دُرود

حق گزارانِ بیعَت پہ لاکھوں سلام

وہ دسوں جن کو جنت کا مژدہ ملا

اُس مبارک جماعت پہ لاکھوں سلام

خاص اُس سابقِ سیرِ قُربِ خدا

اوحَدِ کاملیَّت پہ لاکھوں سلام

سایۂ مصطفیٰ مایۂ اِصطَفیٰ

عِزّو نازِ خلافت پہ لاکھوں سلام

یعنی اُس افضلُ الخلق بعدَ الرُّسُل

ثانی اَثنَینِ ہجرت پہ لاکھوں سلام

اصدقُ الصّادِقیں سیّدُ المتّقیں

چشم و گوشِ وزارت پہ لاکھوں سلام  

وہ عمر جس کے اعدا پہ شیدا سقر

اُس خدا دوست حضرت پہ لاکھوں سلام

فارقِ حقّ و باطل امامِ الہُدیٰ

تیغِ مسلول شدّت پہ لاکھوں سلام

ترجمانِ نبی ہم زبانِ نبی

جانِ شانِ عدالت پہ لاکھوں سلام

زاہدِ مسجدِ احمدی پر دُرود

دولتِ جیشِ عُسرت پہ لاکھوں سلام

دُرِّ منثور قرآں کی سلک بہی

زوجِ دو نور عفّت پہ لاکھوں سلام

یعنی عثمان صاحب قمیصِ ہدیٰ

حُلّہ پوشِ شہادت پہ لاکھوں سلام

مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں

ساقی شیٖر و شربت پہ لاکھوں سلام

اصل نسلِ صفا وجہِ وصلِ خدا

بابِ فصلِ ولایت پہ لاکھوں سلام

اّولیں دافعِ اہلِ رفض و خروج

چارمی رکنِ ملّت پہ لاکھوں سلام

شیرِ شمشیر زن شاہِ خیبر شکن

پرتوِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

ماحیِ رفض و تفضیل و نصب و خروج

حامیِ دین و سنت پہ لاکھوں سلام

مومنیں پیشِ فتح و پسِ فتح سب

اہلِ خیر و عدالت پہ لاکھوں سلام

جس مسلماں نے دیکھا اُنھیں اک نظر

اُس نظر کی بصارت پہ لاکھوں سلام

جن کے دشمن پہ لعنت ہے اللہ کی

اُن سب اہلِ محبت پہ لاکھوں سلام

باقیِ ساقیانِ شرابِ طہور

زینِ اہلِ عبادت پہ لاکھوں سلام

اور جتنے ہیں شہزادے اُس شاہ کے

اُن سب اہلِ مکانت پہ لاکھوں سلام

اُن کی بالا شرافت پہ اعلا دُردو

اُن کی والا سیادت پہ لاکھوں سلام

شافعی مالک احمد امامِ حنیف

چار باغِ امامت پہ لاکھوں سلام

کاملانِ طریقت پہ کامل دُرود

حاملانِ شریعت پہ لاکھوں سلام

غوثِ اعظم امامُ التقیٰ والنقیٰ

جلوۂ شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

قطبِ ابدال و ارشاد و رُشدالرشاد

مُحییِ دین و ملّت پہ لاکھوں سلام

مردِ خیلِ طریقت پہ بے حد دُرود

فردِ اہلِ حقیقت پہ لاکھوں سلام

جس کی منبر ہوئی گردنِ اولیا

اُس قدم کی کرامت پہ لاکھوں سلام

شاہِ برکات و برکات پیشینیاں

نوبہارِ طریقت پہ لاکھوں سلام

سید آلِ محمد امام الرشید

گلِ روضِ ریاضت پہ لاکھوں سلام

حضرتِ حمزہ شیرِ خدا و رسول

زینتِ قادریت پہ لاکھوں سلام  

نام و کام و تن و جان و حال و مقال

سب میں اچھے کی صورت پہ لاکھوں سلام

نورِ جاں عطر مجموعہ آلِ رسول

میرے آقائے نعمت پہ لاکھوں سلام

زیبِ سجّادہ سجّاد نوری نہاد

احمدِ نورِ طینت پہ لاکھوں سلام  

بے عذاب و عتاب و حساب و کتاب

تاابد اہلِ سنّت پہ لاکھوں سلام

تیرے ان دوستوں کے طفیل اے خدا

بندۂ ننگِ خلقت پہ لاکھوں سلام

میرے اُستاد ماں باپ بھائی بہن

اہلِ وُلد و عشیرت پہ لاکھوں سلام

ایک میرا ہی رحمت میں دعویٰ نہیں

شاہ کی ساری اُمّت پہ لاکھوں سلام

کاش محشر میں جب اُن کی آمد ہو اور

بھیجیں سب اُن کی شوکت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے خدمت کے قُدسی کہیں ہاں ! رضاؔ

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

Small Diamond٭٭٭​Small Diamond

مصطفی: برگزیدہ/ چنا ہوا/ منتخب/ افضل و اعلا

جانِ رحمت: کرم کی جان /رحمت کی روح/سراپا مِہربان

شمع: موم بتّی/چراغ

بزمِ ہدایت: رہِ نمائی کی مجلس (مراد انبیائے کرام علیہم السلام کی مقدس جماعت)

مِہر: سورج … چرخ : آسمان

گلِ باغِ رسالت: نبوت و پیغمبری کے باغ کا پھول

شہرِ یارِ ارم: جنت کے بادشاہ

تاج دارِ حرم: کعبے کے بادشاہ /آقا/صاحبِ تاج

نوبہار: نئی رونق

شفاعت: گناہوں کی معافی کی سفارش

شبِ اسرا کے دولہا: معراج کی رات کے دولہا

دائم: ہمیشہ

نوشۂ بزمِ جنت:جنت کی محفل کے دولہا/سربراہ

عرش: اللہ تعالیٰ کی جلوہ گاہِ خاص

زیب و زینت: حُسن اور سجاوٹ

عرشی دُرود: بلندی والا دُرود

فرش کی طیب و نزہت: زمین کی مہک اور پاکیزگی

نورِ عینِ لطافت:نرمی و نازکی کی آنکھ کا نور

اَلطف دُرود: پاکیزہ ترین دُرود

زیب و زینِ نظافت: پاکیزگی کی زینت اور خوبصورتی

سروِ ناز: ناز و ادا والا سرو قد محبوب

قِدَم: قدیم / ساری مخلوق سے پہلے

مغزِ رازِ حِکَم: حکمت کے رازوں کا خلاصہ

یکّہ تاز: بے مثال و لاجواب … فضیلت: فضل و کمال

یکّہ تازِ فضیلت: فضائل میں سبقت لے جانے والوں میں بے مثال و لاجواب

نقطۂ سِرِّ وحدت: اللہ کی وحدانیت کے رازوں کے مرکز

یکتا دُرود: بے مثل دُرود

مرکزِ دورِ کثرت: اللہ وحدہٗ لاشریک کی جملہ مخلوقات (جسے امام احمد رضا نے کثرت کہاہے) کی تخلیق کا سبب اور ان تمام کا نقطۂ کمال آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہی کی ذات ہے

رَجعت: لوٹانا

صاحبِ رَجعت ِشمس و شقُ القمر: سورج کو لوٹانے والے اور چاند کو ٹکڑے کرنے والے آقا

نائبِ دستِ قدرت: مراد اختیاراتِ الٰہیہ کے نائب

زیرِ لِوا: جھنڈے(لواء الحمد ) کے نیچے

سزائے سیادت : سرداری کے لائق

عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں : زمین و آسمان کی جملہ مخلوقات آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی تابع و محکوم ہیں

قاہر ریاست: زبردست حکومت/سرداری

اصل: بنیاد … بود: ہستی … بہبود: بھلائی

تُخمِ وجود: زندگی کا بیج( سارے جہان کی بھلائیوں اور کائنات کی اصل و بنیاد آقا ﷺ ہیں )

قاسم: بانٹنے والے … کنزِ نعمت: نعمت کا خزانہ

فتحِ بابِ نبوت: پیغمبری کا دروازہ کھولنے والے

ختمِ دورِ رسالت:پیغمبری کا زمانہ ختم کرنے والے

شرقِ انوارِ قدرت: اللہ تعالیٰ کے انوار و تجلیات کی چمک دمک/مظہرِ انوارِ خداوندی

فتقِ اَزہارِ قربت: قربت کی کلیوں کو کھلانے والے

بے سہیم:لاشریک … قسیم: حصہ دار/بانٹنے والے

عدیل : ہم رُتبہ … مثیل: ہم مثل(مراد آقا صلی اللہ علیہ وسلم کا اللہ کی عطا سے ذات و صفات اور فضائل و خصائل میں بے نظیر ہونا)

جوہرِ فردِ عزت: ایسا مقام و مرتبہ جو ناقابلِ تقسیم ہو یعنی مخلوق میں کسی دوسرے کو نہ ملا ہو

سِرِّ غیبِ بدایت: مراد غیب کے رازوں ( خصوصاً اللہ کی وحدانیت)کے منبع … غیبی دُرود: عالمِ غیب کا دُرود

عطر جیبِ نہایت: مرادرسول اللہ ﷺ کا سینۂ مبارک

قدرت کے رازوں کا گنجینہ اور جنت کی خوشبوؤں کا خزینہ ہے

ماہ: چاند … لاہوت: تصوف میں فنا فی اللہ کے مقام کو کہتے ہیں

خَلوت: تنہائی

ماہِ ناسوتِ خلوت: مقامِ فنا فی اللہ کی تنہائیوں کے چاند

شاہ: بادشاہ … ناسوت: کائنات … جَلوت: ظاہر

شاہِ ناسوتِ جلوت: کائناتِ ہست و بود کی جلوتوں کے بادشاہ

کنزِ ہر بے کس و بے نوا: ہر بے سہارا اور محتاج کا خزانہ

حرز: جائے پناہ … رفتہ طاقت: کم زور/ناتواں

پرتوِ اسمِ ذاتِ اَحد: اللہ کے اسمِ صفاتی(اَحد-اکیلا) کے عکس

نُسخۂ جامعیت: مراداللہ تعالیٰ کی صفات کے مجموعۂ کامل

مطلعِ ہر سعادت: ہر نیک بختی کے طلوع ہونے کا مقام

اسعد دُرود: سعادتوں والا دُرود

مقطعِ ہر سیادت: ہر قسم کی سرداری کی آخری حد

خلق کے دادرس سب کے فریاد رس: ساری مخلوق کے مددگار اور فریاد کو پہنچنے والے

کہفِ روزِ مصیبت: تکلیف کے دن کی پناہ گاہ

بے کس کی دولت: محتا ج کی دولت

بے بس کی قوت: کم زور اور بے سہارا کی طاقت

دَنَا: اللہ تعالیٰ کے قربِ خاص کی منزل

ہُوْ:وہ/ اسمِ ذات

شمعِ بزمِ دَنَا ہُوْ: اللہ تعالیٰ کے قربِ خاص کی مجلس کے چراغ

متن: عبارت … ہُوِیَّت: مرتبۂ وحدت

شرحِ متنِ ہُویَّت: مرتبۂ وحدت(اللہ تعالیٰ کی قدیم و غیر فانی یکّہ و تنہا ذات) کی تفصیل حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کی مقدس ذات ہے کہ آپ ہی سے لوگوں کو اللہ تعالیٰ کی پہچان ہوئی

انتہائے دوئی ابتدائے یکی: مراد رسول اللہ ﷺ اللہ کی صفات کے عظیم مظہر ہیں، اللہ خالق ہے آپﷺ مخلوق ہیں، اللہ معبود ہے آپ ﷺ عابد ہیں، لیکن اللہ نے آپ کو اپنی صفات کا ایسا عکس بنا دیا کہ صفاتی دوئی ختم ہو گئی اور اللہ نے آپ کی رضا کو اپنی رضا، آپ کی اطاعت کو اپنی اطاعت، آپ کی بیعت کو اپنی بیعت، آپ کے مارنے کو اپنا مارنا قرار دیا اور آپ کے سبب کائنات کی تخلیق فرمائی

جمع تفریق و کثرت:یہ تصوف کی اصطلاحات ہیں اللہ کی صفاتِ فعلیہ کا مظہر ہونا تفریق اور صفاتِ ذاتیہ کا مظہر جمع کہلاتا ہے، آپ ﷺ صفاتِ الٰہیہ کا مظہر اور ساری مخلوق کا خلاصہ ہیں

کثرتِ بعدِ قلّت: کم کے بعد زیادہ ہونا(اہل اسلام ابتداء ً کم تھے رفتہ رفتہ بڑھتے گئے) … اکثر دُرود: زیادہ دُرود

عزتِ بعدِ ذلّت: کم زوری کے بعد طاقت

ربِّ اعلا کی نعمت: بلند و بالا رب کا انعام

منّت: احسان(آقاﷺ اللہ تعالیٰ کا انعام اور احسان ہیں )

آقا: مالک … بے حد: ان گنت … ثروت : دولت

فرحتِ جانِ مومن: مومن کی جانوں کے سکون و اطمینان

غیظِ قلبِ ضلالت: کفر و گمراہی والے دل کیلئے غیظ و غضب

سببِ ہر سبب: ہر وجود کا سبب/سببِ تخلیقِ کائنات

منتہائے طلب: تمام تلاش و جستجو اور طلب کی انتہا

علّتِ جملہ علّت: ہر مقصد و مدعا کا سبب(باعثِ تخلیقِ کائنات)

مصدرِ مظہریت: اللہ تعالیٰ کی ذات و صفات اور اس کی عظمتوں کو ظاہر کرنے والے

اظہر دُرود: بہت نمایاں دُرود

مظہرِ مصدریت: اللہ تعالیٰ کے جلووں کے ظاہر ہونے کا مقام حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات ہے

جلوہ: نظارا/دیدار … مرجھائی کلیاں : سوکھے غنچے

گلِ پاک مَنبت: پاکیزہ پھول کی اُٹھان ( نبیِ رحمت ﷺ کے چہرۂ زیبا کے دیدار سے سوکھی کلیاں کھل جاتی ہیں، ایسے پاکیزہ اور بابرکت پھو ل کے بڑھنے پر قربان جائیں )

قدِّ بے سایہ: بغیر سایے والا قد

سایۂ مرحمت: مِہربانی و الا سایا

ظلِ ممدود رافت: کرم اور مِہربانی کا دائمی سایا(آقا ﷺ کے جسمِ پُر نور کا سایا نہ تھا لیکن آپ کی رحمتوں کا سایا سب پر پھیلا ہوا ہے)

طائرانِ قُدُس: مراد فرشتے

قُمری: فاختہ کی طرح ایک اچھی آواز والا پرندہ

سہی: سیدھا … قامت: قد … سرو:دو شاخوں والا ایک خوش قامت درخت( عشاق اپنے محبوب کے جمال کو نظر میں رکھ کر اس سے کنایہ کرتے ہیں یہاں آپ ﷺ کے قدِ رعنا کو عاشقِ صادق نے بیان کرتے ہوئے ’’سہی سرو قامت ‘‘ کی ترکیب استعمال کی ہے)

وصف: تعریف … آئینۂ حق نما: اللہ کی راہ دکھانے والا آئینہ( چہرۂ مصطفی ﷺ حق کو دیکھنے کا آئینہ ہے)

خدا ساز طلعت:خداوند قدوس کی پہچان کرانے والا روشن اور چمک دار چہرہ

سروراں : بادشاہ … خم: جھکنا

سرِ تاجِ رفعت: بلندی کے تاج کا سر

کرم کی گھٹا: مِہربانی کا بادل

گیسوے مُشک سا: کستوری کی طرح مہکنے والے بال

لکّۂ ابرِ رافت: مِہربانی کے بادل کا ٹکڑا

لیلۃُ القدر: شبِ قدر( شعر میں زُلفیں مراد ہے)

مطلعِ الفجر: صبح کا طلوع ہونا(شعر میں مانگ مراد ہے)

مانگ: سر کے بالوں کے درمیان نکالی جانے والی لکیر

استقامت: سیدھا پن … لخت لخت: ٹکڑے ٹکڑے

چاک: پھٹا ہوا … شانہ: کنگھی(امام احمد رضا کہتے ہیں کہ نبیِ کونین ﷺ کے سرِ مبارک میں کنگھی کرنے کے انداز پر میں قربان ہو جاؤں کہ اِس ادا پر میرا دل چاک ہو کر سینے سے باہر آنے کی کوشش کر رہا ہے تو پھر میں آقا ﷺ کے کنگھی کرنے کے عمل پر بھی کیوں نہ سلام کہوں )

کانِ لعلِ کرامت: نبیِ کریم ﷺ کے مبارک کان جو اصل میں عزت کے موتیوں اور عظمت کے ہیرے اور جواہرات کی کان(ذخیرہ)ہیں

چشمۂ مِہر: سورج کا چشمہ

موجِ نورِ جلال: جلال کے سمندر کی نوری موج

رگِ ہاشمیت: غیرت و حیا والے ہاشمی خون کی گردش کرنے والی رگ(جاہ و جلال کے وقت رسول اللہ ﷺ کی دونوں بھووں کے درمیان ایک رگِ انور اُبھر آتی تھی جس کو اعلا حضرت چشمۂ مہر(سورج کا چشمہ) یعنی چہرۂ انور میں موجِ نورِ جلال( جلال کے سمندر کی نوری موج) قرار دے رہے ہیں، اور اس رگِ مبارک کو رگِ ہاشمیت کہہ کر لاکھوں سلام بھیج رہے ہیں )

ما تھا: پیشانی … شفاعت: گناہوں سے معافی کی سفارش

سہرا: شادی کے موقع پر دولہا کے چہرے پر پھولوں سے بنا کر سجایا جاتا ہے

جبینِ سعادت: نیک بختی کی پیشانی

سجدہ : پیشانی زمین پر ٹیکنا

محراب: مسجد میں امام کے کھڑے رہنے کی جگہ

بھووں : ابروؤں

لطافت: نزاکت اور خوبی

سایہ افگن: سایہ کرنے والا

مژہ: پلک

ظلۂ قصرِ رحمت: کر م اور مہربانی کے محل کی چھتری

اشک باریِ مژگاں : پلکوں کا آنسو برسانا

سلکِ دُرِّ شفاعت: شفاعت کے موتیوں کی لڑی( امت کی بخشش کے لیے حضور ﷺ کی مقدس آنکھوں سے بہنے والے آنسووں کو اعلا حضرت نے موتیوں کی لڑی کہا ہے)

معنیِ قَدْ رَأیٰ:حدیثِ پاک من رانی فقد رأی الحق، جس نے مجھے دیکھا اُ س نے حق(خدا کو ) دیکھا، کے معنی آقاﷺ ہیں

مقصدِ مَاطَغیٰ :آیۂ کریمہ ماضل صاحبکم وما غویٰ، نہ تمہارا ساتھی ( اپنی بابرکت صحبت سے تمہیں فیض یاب کرنے والا)بھٹکا اور نہ اِدھر اُدھر ہوا (سورۃالنجم) کے مقصد آپ ﷺ ہی ہیں

نرگس: پیلے رنگ کا خوب صورت پھول۔ جس کی شکل آنکھ کی طرح ہونے کی وجہ سے محبوب کی آنکھ کو اس سے تشبیہ دیتے ہیں

نرگسِ باغِ قدرت: قدرت کے گلشنِ نبوت کے نرگسیں آنکھوں والے محبوب صلی اللہ علیہ وسلم

دم میں دم آنا: جسم میں جان آنا

نگاہِ عنایت: کرم کی نظر

بینی :ناک … رفعت: بلندی

قمر: چاند … جھلملائے: ٹمٹمائے / جلنا بجھنا

عِذاروں کی طلعت: رخساروں (گالوں ) کی چمک دمک

خد: گال … خَد کی سُہُولت: گالوں کی نرمی

رشاقت: عمدگی/ زیبا قامتی/ خوش قامتی

تاریک: اندھیرا … جگمگانے: چمکنے

چمک والی رنگت: نور اور روشنی والا رنگ و روپ/ نورانی رنگت

تاباں : چمک دار … درخشاں : روشن

چاند سے منہ پہ تاباں درخشاں دُرود: چاند جیسے چمک دار چہرۂ انور پہ روشن و منور دُرود ہو

نمک آگیں صباحت: نمکیں حُسن و جمال(بہت زیادہ پُر کشش اور من مو ہنی شکل و صورت کو نمکینی حُسن کہا جاتا ہے)

شبنمِ باغِ حق یعنی رُخ کا عَرَق: اللہ تعالیٰ کے گلشن کی اوس اور شبنم یعنی آقا ﷺ کے چہرۂ زیبا کا پسینہ

بَراقت : چمک دمک

خط: داڑھی … گردِ دہن: منہ کے ارد گرد

دل آرا پھبن : دل کو موہ لینے والی آرایش و زیبایش

رِیش: داڑھی … رَیش: زخم

رِیشِ خوش معتدل: موزوں اور خوب صورت داڑھی

مرہمِ رَیش دل: دل کے زخموں کا مرہم

ہالۂ ماہِ نُدرت: اعلا حضرت نے رسول اللہ ﷺ کی مبارک داڑھی کو ’ہالۂ ماہِ نُدرت‘ یعنی چودھویں کے چاند(چہرۂ مصطفی ﷺ) کے ارد گرد دل کش اور انوکھے دائروں سے استعارہ دیا ہے

گلِ قُدس کی پتّیاں : جنت کے نکھرے ہوئے پھول کی پتّیاں

نزاکت: خوبی/ نفاست / نرمی

دہن: منہ … وحی: اللہ تعالیٰ کا پیغام

وہ دہن جس کی ہر بات وحیِ خدا: سرکارِ دوعالم ﷺ کے دہنِ پاک سے نکلی ہوئی ہر بات وحیِ خدا ہے اس پر آیۂ کریمہ وما ینطق عن الھویٰ ان ھُو الا وحیُ یُّوحیٰ (سورۃ النجم) شاہد و دال ہے

چشمۂ علم و حکمت: عقل مندی، دانائی اور علم کی نہرِ رواں

شاداب: سر سبز/ تر و تازہ … جناں : جنت کی جمع، جنتیں

طراوت: تری/ تازگی … کھاری: کڑوا/ نمکین

شیرۂ جاں : جان کو تسکین دینے والا میٹھا شربت

زُلال: ٹھنڈا میٹھا اور صاف و شفّاف پانی

حلاوت : مٹھاس

کُن کی کنجی: جملہ مخلوقات کی پیدایش کا سبب آپ ﷺ کی ذات ہے اور اللہ تعالیٰ نے اپنی قدرتِ کاملہ اور عطائے خاص سے پیارے مصطفی ﷺ کو بے حد تصرفات و اختیارات عطا کیے ہیں اسی لیے اعلا حضرت نے آپ ﷺ کو ’کُن کی کنجی‘ کہا ہے

نافذ حکومت: جاری و ساری حکمرانی /حکومت

فصاحت:خوش بیانی/ اچھا کلام

دل کش: دل میں اُترنے والی … بے حد: لاتعداد

بلاغت: موقع محل کے مطابق عمدہ گفتگو

لذّت: کیف وسرور

خطبہ: وعظ و نصیحت اور حمد و نعت کا مجموعہ

ہیبت: رعب و دبدبہ

جوبن : حسن و جمال/رونق/ بہار/شباب

بہارِ قبول: شرفِ قبولیت

نسیمِ اجابت: قبولیت کی خوش بو دار ہَوا

گُچھے: کسی شَے کی کثرت و مجموعہ اور ایک ہی شاخ پر بہت سارے پھل پھول کو کہتے ہیں

لچھے: مسلسل

نزہت: چمک اور پاکیزگی

تسکیں : تسلی … تبسم: مسکراہٹ … عادت: معمول

شیٖر: دودھ … نضارت: تازگی، تری

دوش: سیاہ زلفیں … دوش: کاندھا … شرف: بزرگی

شانوں کی شوکت: کاندھوں کی شوکت

حجرِ اسودِ کعبۂ جان و دل-یعنی مُہرِ نبوت پہ لاکھوں سلام:

دل اور جان کے کعبہ مصطفی ﷺ کی پُشتِ انور پر مُہرِ نبوت جو سیاہ مائل بہ زرد گوشت کا ٹکڑا دونوں کاندھوں کے درمیان تھا اُسے بھی امام احمد رضا نے لاکھوں سلام بھیجا ہے، جس طرح حجرِ اسود بوسہ گاہِ مسلمین ہے اُسی طرح مُہرِ نبوت بھی بوسہ گاہِ عاشقین تھی۔ خصائصِ کبریٰ میں ہے کہ جابر بن عبداللہ کہتے ہیں کہ حضورِ انور ﷺ نے سواری پر مجھے اپنے پیچھے بٹھا لیا تو میں نے مُہرِ نبوت کو چوم لیا اس سے مُشک کی خوش بُوآرہی تھی۔ (ج۱، ص ۶۰)

روئے آئینۂ علم پُشتِ حضور: حضور انور ﷺ کا چہرۂ اقدس جس طرح علم کا آئینہ ہے اُسی طرح آپ کی پُشتِ مبارک (پیٹھ) بھی بے خبر نہیں۔ بخاری باب الخشوع فی الصلاۃ میں ہے کہ سرکار ﷺ نے فرمایا میں آگے پیچھے بل کہ نماز کی امامت کرتے ہوئے تمہارے رکوع اور دلی کیفیات (خشوع) کو بھی دیکھتا ہوں

پُشتی: نگہبان/محافظ … قصر: محل

پُشتیِ قصرِ ملّت: دین اور اُمّت کے نگہبان

غنی: مال دار

موج: جوش/ لہر

بحر: سمندر

سماحت: بخشش/ جود و عطا

بار: بوجھ

دو عالم: دونوں جہان(دنیا و آخرت)

پروا: فکر/ تردد/پریشانی

کعبۂ دین و ایماں : مراد حضور انور ﷺ

ستون: کھمبے … ساعدین: کلائیاں /بازو

خط: نقش و نگار

موجِ نورِ کرم: مِہربانی کے انوار کی لہریں

کف: ہتھیلی

بحرِ ہمّت: عزم و ارادہ اور بخشش کے سمندر

کرامت: بزرگی/عزت اور انوکھی خوبی

عید: خوشی … مشکل کشائی: حاجت پوری کرنا

ہلال: پہلی سے تیسری تاریخ تک کا چاند

بشارت: خوش خبری

رفع: بلند ہونا … ذکرِ جلالت: عظمت و بزرگی کا ذکر

ارفع: بہت بلند

شرح : کھلنا … صدر: سینہ

صدارت: صدر نشینی۔شرحِ صدارت والے سینہ پر لاکھوں سلام

دل سمجھ سے ورا ہے مگر یوں کہوں -غنچۂ رازِ وحدت پہ لاکھوں سلام: حضور انور ﷺ کے ناخنوں، بازوؤں، کلائیوں، انگلیوں اور سینۂ پاک کی بزرگی ظاہر کرنے کے بعد اعلا حضرت کہتے ہیں کہ آقا ﷺ کے دل کی شان مَیں کیسے بیان کروں ؟ جب قلب المؤمن عرش اللہ ہے تو پھر حضور انور ﷺ کا دل اللہ اکبر! میری سمجھ سے بہت بلند تر ہے، آپ کی عظمت و شان میری فکر کماحقہٗ کیسے بیان کر سکے گی؟ بس اک اندازہ سا ہے اور وہ یہ ہے کہ آپ کا دل اللہ تعالیٰ کے راز ہائے سربستہ کا ایک عظیم الشان خزانہ ہے۔ مواہب لدنیہ جلد ۴ صفحہ ۲۱۸ میں ہے کہ اللہ تعالیٰ نے سب سے پہلے اپنے محبوب کے دل کو اپنے رازوں کا مرکز بنایا

مِلک: ملکیت / قبضہ … جَو: ایک قسم کا اناج

غذا: خوراک/ کھانا … شکم: پیٹ

قناعت: تھوڑی سی چیز پر خوش ہونا

عزم: پکّا ارادہ … کھنچ کر: مضبوطی سے

حمایت: ہم دردی

تَہِ کریں زانو: ادب و احترام سے دو زانو ہو کر بیٹھیں (یعنی آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے فیض حاصل کریں )

وجاہت: رعب و دبدبہ/ عزت … ساق:پنڈلی

اصل: بنیاد / جڑ … شاخ : ٹہنی

نخل : درخت … کرم : بخشش

ساق اصلِ قدم شاخِ نخلِ کرم: حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کی مبارک پنڈلیوں کو امام احمد رضا نے بخشش اور مہربانی کے درخت کی شاخوں کی بنیاد قرار دیا ہے

شمع: چراغ

راہِ اصابت: منزلِ مقصود/ درست و سیدھا راستہ

خاکِ گزر: راستہ/ … کفِ پا: پاوں کا تلوا

حرمت: عزت

سہانی : من پسند/ خوب صورت

گھڑی: وقت/ لمحہ

دل افروز: دلوں کو زندگی دینے والا … ساعت: وقت

ازل: کائنات کی تخلیق سے پہلے کا وقت،اللہ ہی بہتر جانتا ہے  

یادگاریِ اُمت : اُمت کو یاد رکھنا

زرع: کھیتی … شاداب: سرسبز / ہرا بھرا

ضرع: چھاتی/ پستان … پُر شیر: دودھ سے بھرپور

برکاتِ رضاعت:دودھ پینے کے دوران کی برکتیں ( حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کی برکت سے حضرت حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا کے گھر میں دودھ کی نہریں جاری ہو گئیں جن بکریوں نے کبھی دودھ نہ دیا تھا اب اُن کا دودھ ختم ہی نہ ہوتا تھا۔ ہر جانور کا تھن دودھ کا منبع بن گیا، اعلا حضرت امام احمد رضا محدثِ بریلوی نے اسے بیان کرنے کے بعد اپنے آقا صلی اللہ علیہ وسلم کی حضرت حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا کے گھر میں مدتِ رضاعت دودھ پینے کے دوران کی برکتوں پر لاکھوں سلام بھیجا ہے۔

ترکِ پستاں : پستان کا چھوڑنا/ دودھ نہ پینا

نِصفت: عدل و انصاف۔۔حضرت حلیمہ سعدیہ رضی اللہ عنہا کی اولاد بھی چوں کہ آقا صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ دودھ میں شریک تھیں اس لیے حضور صلی اللہ علیہ وسلم صرف ایک ہی طرف سے دودھ پیتے تھے، دوسری طرف سے نہ پیتے تھے، گویا پیارے مصطفی رحمتِ عالم صلی اللہ علیہ وسلم بچپن ہی سے عدل و انصاف کے پیکر بن گئے تھے۔

مہدِ والا: مبارک گود/ بلند و بالا گود

قسمت: خوش بختی

صدہا: سیکڑوں

بُرج: آسمان کا بارہواں حصہ

ماہِ رسالت: رسالت کا چاند۔۔۔مراد حضور انور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم

پھبن: حُسن و جمال/ خوب صورتی/ فضل وکمال

خدا بھاتی: اللہ تعالیٰ کو بھی پسند آنے والی

اُٹھتے بوٹوں : پودوں کا بڑھنا

نشوونَما: بالیدگی/ بڑھوتری

غنچے: کلیاں

نکہت: مہک/ خوش بُو

فضل: فضلیت/ کمال

کراہت: نفرت/ ناپسندیدگی

اعتلا: بلند

جبلّت: خلقت و فطرت

اعتلائے جبلّت: فطرت کی بلندی

اعتدال: موزوں / مناسب/ برابر

طَوِیَّت: عادت/ فطرت

بے بناوٹ ادا: بے تکلف/ تصنع اور بناوٹ سے پاک ادا

ملاحت: نمکینی حُسن / سلونا حُسن جو پُر کشش ہوتا ہے

بھینی بھینی مہک: ہلکی ہلکی عمدہ اور خوش گوار خوش بُو

مہکتی دُرود: خوش بُو بکھیرنے والا دُرود

نفاست : پاکیزگی

عبارت: بیان/ گفتگو/ بات چیٖت

شیریں : میٹھا

اِشارت: اشارا /کنایا

روش: چال/ رفتار/ چلنا/ برتاؤ کرنا

طبیعت: مزاج

تیٖرہ و تار: بہت ہی سیاہ … کوہ: پہاڑ … صحرا: جنگل

خَلوت: تنہائی۔۔۔حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کا اپنے رب عزوجل سے بندگی کے تعلق کو پختہ کرنے کے لیے عرب کی سخت گرمی میں دن کو اور سخت اندھیری راتوں میں غاروں اور جنگلوں میں تنہا عبادتِ الٰہی میں مصروف رہنے کی طرف اشارا کرتے ہوئے امام احمد رضا نے ایسی مبارک خَلوت گزینی پر لاکھوں سلام بھیجا ہے۔

گھیرے : حلقے/ دائرے

انبیا: نبی کی جمع

ملک: فرشتے

جہاں گیر: تمام جہاں پر حاوی/ عالم گیر

بعثت:رسول ہونا۔۔۔اللہ کی طرف سے رسول بنا کر بھیجا جانا۔

اندھے شیشے: مراد مردہ دِل / کفر و شرک کا اندھیرا

جھلاجھل: بہت تیز روشنی

دمکنا: چمکنا

جلوہ ریزی: نور بکھیرنا … دعوت: پیغامِ خدا

جلوہ ریزیِّ دعوت: اللہ کے پیغام کا نور بکھیرنا

لطف: نرمی/ لذت/ ذائقہ/ خوبی

بے داریِ شب: رات کو عبادتِ الٰہی میں جاگنا

عالم: کیفیت … خواب: نیند

راحت: آرام … خندہ: مسکراہٹ

عشرت: خوشی و سرور سے زندگی گذارنا۔

گریہ: رونا … ابر: بادل

رحمت: مہرنانی / کرم

خوئے لینت: نرم عادت/ کبھی غصہ نہ آنا … دائم: ہمیشہ

نرمیِ خوئے لینت: طبیعت کی نرمی

گرمی: رونق

گرمیِ شانِ سطوت: رعب و دبدبہ کی عظمت و شوکت

کھنچی گردنیں : اکڑی ہوئی گردنیں

خداداد شوکت: اللہ تعالیٰ کا دیا ہوا رعب و دبدبہ

موسیٰ: اللہ عز وجل کے جلیل القدر رسول جنھیں کلیم اللہ کہا جاتا ہے کوہِ طور پر آپ نے اللہ عزوجل کی تجلی کا مشاہدہ فرمایا تھا

ہمت: حوصلہ۔۔۔ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے ذاتِ باریِ تعالیٰ کی تجلی کا مشاہدہ فرمایا جب کہ صاحبِ مازاغ البصر و ما طغیٰ رسولِ رحمت صلی اللہ علیہ وسلم نے عین ذاتِ خداوندی کو ملاحظہ فرمایا، رسول کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کو اعلا حضرت امام احمد رضا نے تعظیماً ’’آنکھوں والوں ‘‘ کہا ہے۔

گردِ مہ: چاند کے گرد

دستِ انجم: کہکشاں / ستاروں کا جھرمٹ

رخشاں : روشن … ہلال: پہلی رات کا چاند، میدانِ بدر میں جب مدینے کے چاند آقاﷺ تشریف لائے تو صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم ستاروں کی طرح آپ کے گرد حلقہ بنائے ہوئے تھے اور ہلال پہلی رات کے چاند کی طرح اپنے آقا، چودھویں رات کے چاند کا دفاع کر رہے تھے۔ اعلا حضرت اسی کو بڑی خوب صورت پیرایہ میں ’’گردِ مہ دستِ انجم میں رخشاں ہلال‘‘ کہہ رہے ہیں۔

بدر کی دفعِ ظلمت: مقامِ بدر میں کفر و شرک کے اندھیروں کو دور کرنا

تکبیر: اللہ اکبر کا نعرہ … تھرتھرائی : کانپ اُٹھی

جنبش: حرکت … جیشِ نصرت:مدد کا لشکر

نعرہ ہائے دلیراں : بہادروں کے نعرے

بَن: جنگل … غُرّش : غرّانا … کوس: نقّارہ

غُرّشِ کوسِ جرأت : ہمت و جواں مردی کے نقّارے کی غرّاہٹ

چقاچاق: تلوار یا خنجر کی کاٹ دار آواز

صَولت: ہیبت/ دبدبہ/ رعب

حمزہ: حضور ﷺ کے چچا جن کا لقب ’’سیدالشہدا‘‘ ہے

جاں بازیاں : قربانیاں / جاں نثاریاں

شیرِ غُرّان : بپھرا ہوا اور دھاڑنے والا شیر

الغرض: ۔ آخر کار/ قصہ مختصر … مُو: بال

خوو خصلت: عادت و ادا

نامی دُرود: مشہور دُرود/ بڑھنے والا دُرود

مولا: اللہ تعالیٰ

اصحاب: صحابہ کی جمع

عترت : اولاد/ اعزّہ/ اقربا

پارہائے صحف: مقدس کلام کے ٹکڑے

غنچہ ہائے قدس: پاکیزہ کلیاں

اہلِ بیتِ نبوت: آقا ﷺ کے گھرانے والے(اولاد و ازواج، مقدس کلام ، مراد رسول اللہ ﷺ کے ٹکڑے اور حصے، آپ ﷺ کے جگر کے ٹکڑے، اور مقدس باغ کے پھول،حضورﷺ، کی کلیاں یعنی خاندانِ نبوت حضور ﷺ کی اولاد و ازواج پر لاکھوں سلام۔

آبِ تطہیر: پاک کرنے والا پانی

ریاضِ نجابت: شرافت اور بزرگی کا باغ

خیرالرسل : تمام رسولوں میں سے بہترین، آپﷺ ہیں۔

خمیر: اصل / فطرت

بے لوث طینت: بے عیب طبیعت/ پیدایش

بتول: حضرت فاطمۃ الزہرا رضی اللہ عنہا کا لقب

جگر پارۂ مصطفی: مصطفی ﷺ کے دل کا ٹکڑا، فاطمہ بضعۃ منی، فاطمہ میرے دل کا ٹکرا ہے، بخاری باب مناقب فاطمہ۔

حجلہ: دلہن کا پردا/ پالکی … آرا: سنوارنے والا

حجلہ آرائے عفت: مراد فاطمۃ الزہرا رضی اللہ عنہا شرم و حیا کی پیکر ہیں اور پارسائی و پرہیزگاری کی عظمت و عزت کو سنوارنے والی ہیں

آنچل: دوپٹے کا کنارا

مہ و مہر: چاند سورج

رِدائے نزاہت: طہارت و پاکیزگی کی چادر

سیدہ: جنت کی تمام عورتوں کی سردار

زاہرہ: تر و تازہ پھول یا چمک دار کلیاں

طیبہ: پاک باز … طاہرہ: پاکیزہ/ طہارت والی

جانِ احمد کی راحت: حضورﷺ کے دل کا سکون و آرام

حَسَن: رسول اللہ ﷺ کے نواسے فاطمۃ الزہرا رضی اللہ عنہا کے صاحب زادے حضور سیدنا امام حسن رضی اللہ عنہ

مجتبیٰ : پسندیدہ/ چنا ہوا … سید الاسخیائ: سخیوں کا سردار

راکبِ دوشِ عزت: عظمت و بزرگی کے کاندھوں کے سوار

اَوجِ بحرِ ہدیٰ: ہدایت کے سورج کی بلندی

موجِ بحرِ ندیٰ: سخاوت کے سمندر کی لہر

رَوح: آسایش/ فرحت/ ٹھنڈک

رُوحِ سخاوت: جود و عطا کی جان

رَوحِ رُوحِ سخاوت: حَسنِ مجتبیٰ رضی اللہ عنہ سخاوت و عطا کی جان کی ٹھنڈک ہیں

شہد خوارِ لعابِ زبانِ نبی: نبیِ پاک ﷺ کی مبارک زبان کے لعاب کا شہد کھانے والے ۔ مقدس نواسے۔

چاشنی گیرِ عصمت:پاک دامنی اور عزت کی مٹھاس چکھنے والے

بَلا: مصیبت … شاہِ گلگوں قبا: گلاب کے پھول کی طرح سُرخ رنگ کا جبہ پہننے والے بادشاہ( مراد شہیدِ کربلا حضور سیدناامام حسین رضی اللہ عنہ)

بے کسِ دشتِ غربت: بے وطنی اور مسافرت کے جنگل کا اکیلا مسافر (حضور سیدناامام حسین رضی اللہ عنہ)

دُرّ: موتی … دُرج: موتیوں کی ڈبی یا صندوقچہ

نجف : عراق کا شہر حضرت علیِ مرتضیٰ رضی اللہ عنہ کا مسکن تھا

دُرِّ دُرجِ نجف: حضرت علی رضی اللہ عنہ کے موتیوں کے صندوقچے کا ایک چمک دار اور سچا موتی ( شہید کربلا)

مہرِ بُرجِ شَرَف: بزرگی اور شرافت کے آسمان کا چمکتا سورج

رنگِ رومی شہادت: حضرت صہیب رومی رضی اللہ عنہ جب ہجرت کر کے آرہے تھے تو کفار نے ان کا سب سازوسامان لوٹ لیا تھا اور امام حسین رضی اللہ عنہ کی ہجرت الیٰ اللہ اور شہادت میں بھی یہ بات موجود ہے آپ کے قافلے کو بھی لوٹ لیا گیا تھا ’’ رنگِ رومی شہادت‘‘ سے امام احمد رضا نے امام عالی مقام رضی اللہ عنہ کی شہادت کا بیان کرتے ہوئے حضرت صہیب رومی رضی اللہ عنہ کے واقعہ سے کنایہ کیا ہے۔

اہلِ اسلام: مسلمانوں … مادرانِ شفیق: مہربان مائیں مراد امہات المؤمنین رضی اللہ عنہن

بانوانِ طہارت: پاک دامن اور پاکیزہ خواتین

جلوگیّانِ بیت شَرَف: بزرگی والے گھر میں تشریف رکھنے والے

پردگیّانِ عفت: پرہیزگار با پردا خواتین مراد امہات المؤمنین

سیّما: بالخصوص/ خاص طور پر حضرت خدیجۃ الکبرا مراد ہیں۔

کہف: پناہ گاہ … حق گزار: حق ادا کرنے والا

رفاقت: ساتھ … تسلیم: سلام کرنا/ سلامتی

سرائے سلامت: امن کا مقام

منزل: گھر/ ٹھکانہ … قَصَب: موتی … نصَب: مشقت

صخَب: شور … کوشک:حجرہ … زینت:آرایش/ سجاوٹ

اس شعر میں امام احمد رضا نے بخاری و مسلم کی حدیث کے الفاظ کااستعمال کیا ہے حضرت جبریل امین علیہ السلام بارگاہِ نبویﷺ میں حاضر ہوئے اور عرض کیا: فاقرا علیہا السلام من ربہا و منی وبشرہا بیت فی الجنۃ من قصب لا صخب فیہ ولا نصب-حضرت خدیجہ کو اللہ تعالیٰ کا اور میرا سلام کہہ دیجیے اور ان کو جنت میں ایسے گھر کی خوش خبری سنادیجیے جو موتیوں سے بنا ہوا ہے نہ وہاں کوئی تکلیف ہو گی نہ ہی کوئی شور۔

بنتِ صدیق: ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا

آرامِ جانِ نبی: نبیِ کریم ﷺ کے دل کا سکون

حریم: بیوی … برأت: پاک دامنی/ پاکی

سورۂ نور: اٹھارھویں پارے کی ایک سورۃ جس میں اللہ تعالیٰ نے حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی پاک دامنی بیان فرمائی ہے …

پُر نور: نور سے بھری ہوئی/ چمکیلی

روح ا لقدس: جبریل امین … سُرادق: خیمہ/ حجرہ ۔۔۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کا حجرہ جو ہمارے نبی ﷺ کی آخری آرام گاہ بھی ہے اس میں جبر یلِ امین بھی بغیر اجازت نہیں آتے تھے ایسے مبارک حجرے کی عظمت پہ لاکھوں سلام۔

شمعِ تاباں : روشن چراغ … کاشانہ: مکان / محل

اجتہاد: فقہِ اسلامی میں مسائل کے استخراج کی محنت و کوشش کرنا/ ٹھیک راہ ڈھونڈنا

مفتی: فتویٰ دینے والا … چار ملّت:خلفائے راشدین کا مقدس زمانہ ۔۔۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کا مبارک کاشانہ دینِ اسلام کے تمام مسائل کے حل کا مرکز بنا اور آپ اس کی روشن شمع تھیں، خلفائے راشدین کے تمام ادوار میں صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم ہر دینی مسئلے کا حل آپ کی بارگاہ سے لیتے تھے۔

جاں نثارانِ بدر و اُحد:بدر و احد میں جان قربان کرنے والے

حق گزارانِ بیعت : حضور ﷺ کے مبارک ہاتھ پر بیعت کا حق ادا کرنے والے … وہ دسوں : عشرۂ مبشرہ، وہ دس صحابہ جنھیں حضور ﷺ نے دنیا میں جنت کی خوش خبری سنائی- حضرت ابوبکر صدیق، حضرت عمر فاروق، حضرت عثمان غنی، حضرت علیِ مرتضیٰ، حضرت سعد بن وقاص، حضرت ابو عبیدہ بن جراح، حضرت زبیر بن عوّام، حضرت عبدالرحمان بن عوف، حضرت ابو طلحہ، حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہم و نفعنا بہم آمین۔

مژدہ: خوش خبری … مبارک جماعت: بابرکت گروہ

سابق : آگے بڑھنے والا

سیرِ قربِ خدا: خدا کے قرب کا سفر مراد سفرِ ہجرت

اوحد: یگانہ و بے مثل

کاملیت: مکمل ہونا ۔۔۔ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ جو کہ تما م صحابہ پر ہجرت کے سفر میں سبقت لے جانے والے اور صحابہ کی جماعت میں زیادہ کاملیت رکھنے والے ہیں۔

سایۂ مصطفی: مصطفیﷺ کے پر تو/ جانشین

مایۂ اصطفا: تقوا اور پرہیزگاری کے لیے باعثِ فخر

عزّ و نازِ خلافت: جانشینی کے لیے باعثِ فخر و عزت

افضل الخلق بعد الرسل: جملہ رسولوں کے بعد مخلوق سے بہتر

ثانی اَثنین: دو میں سے دوسرا ۔۔۔ قرآنی آیت ثانی اَثنین اذ ہما فی الغار}سورۃ التوبہ{کی طرف اشارا۔

اصدق الصادقیں : تمام سچوں میں سے زیادہ سچا

سید المتقیں : پرہیز گاروں کا سردار ۔۔ مراد حضرت سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ۔

چشم و گوشِ وزارت: جانشینی اور نیابت کے کان اور آنکھ

عمر: حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ

اعدا ۔: عدو کی جمع، دشمن

شیدا: دیوانہ … سقر : دوزخ

خدا دوست: اللہ تعالیٰ کے دوست

فارقِ حق و باطل : حق اور باطل کے درمیان فرق کرنے والا

امام الہدیٰ : ہدایت کا امام

تیغِ مسلولِ شدّت: برہنہ تلوار/ سونتی ہوئی تلوار کی سختی ۔۔۔ مراد، حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ۔

ترجمانِ نبی: ایک جیسی زبان بولنے والے

جانِ شانِ عدالت: انصاف کی عزت اور جان

زاہدِ مسجدِ احمدی پہ دُرود:نبیِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مسجد ’’مسجدِ نبوی‘‘ کے عبادت گزار پر دُرود

جیش: لشکر … عُسرت: تنگی

دولتِ جیشِ عُسرت: تنگی کے لشکر کی دولت ۔۔۔ حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ جو بے پناہ مال دار ہونے کے باوجود بھی مسجدِ نبوی میں زاہدانہ عبادت کیا کرتے اور تنگی کی زیادتی کے وقت اپنی دولت راہِ خدا میں لُٹایا کرتے تھے۔ دُرِّ منثور: بکھرے ہوئے موتی … سلک: لڑی/ ڈوری

بہی: بہتری ۔۔۔ حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ نے قرآنِ مجید کے بکھرے ہوئے موتیوں یعنی آیات کو عمدگی اور نفاست کے ساتھ ایک لڑی میں پرو دیا اور جامع القرآن کا لقب پایا۔

زوجِ دو نور عفت : طہارت و پاکیزگی کے دو نور کے خاوند ۔۔۔ مراد حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ کو حضور ﷺ کی دو صاحب زادیوں کے خاوند ہونے کا شَرَف ملا۔

قمیصِ ہدیٰ: ہدایت کی قمیص / خلافت کا لباس

حلہ پوشِ شہادت: شہادت کا لباس پہننے والا ۔۔۔ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ۔

مرتضیٰ : پسندیدہ ، حضرت علی رضی اللہ عنہ۔

شیرِ حق: علی شیرِ خدا

اشجع الاشجعیں : بہادروں کا سردار

ساقیِ شیِر و شربت:دودھ اور شربت پلانے والا

اصل نسلِ صفا: طہارت و پاکیزگی کی حامل نسل کی بنیاد

وجہِ وصلِ خدا:خداسے ملانے کا ذریعہ

ولایت: اللہ کی دوستی

بابِ فضلِ ولایت: ولایت کی فضیلت کا دروازہ

اولین: سب سے پہلا … دافع: دور کرنے والا

رفض: رافضیت و شیعیت ۔ گم راہ فرقہ جو صحابہ سے دشمنی رکھتا ہے۔

خروج: ایک گم راہ فرقہ جو اہلِ بیت سے دشمنی رکھتا ہے

چارمی: چوتھا

رکنِ ملّت: امت کا ستون و سہارا۔ یعنی حضرت علی رضی اللہ عنہ۔

شیرِ شمشیر زن: تلوار کا دھنی

خیبر شکن : خیبر کی اینٹ سے اینٹ بجانے والا

پرتوِ دستِ قدرت: قوتِ پروردگار کے ہاتھ کا عکس

ماحی: مٹانے والا

تفضیل: حضرت علی کو تمام صحابہ پر افضل ماننے کا غلط عقیدہ

نصب و خروج: اہلِ بیتِ اطہارسے دشمنی رکھنا

حامیِ دین و سنت: دین و سنت کی حمایت کرنے والا ۔۔۔ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے صحابہ اور اہلِ بیت سے دشمنی رکھنے والوں اور آپ کو تمام صحابہ سے افضل سمجھنے والوں کو اپنے اعمال، افعال اور اقوال کے ذریعہ ختم کر دیا اور اسلام و سنتِ مصطفی ﷺ کی پُر زور حمایت کی۔

مومنین: ایمان والے … پیشِ فتح: فتحِ مکہ سے پہلے

پسِ فتح: فتحِ مکہ کے بعد

اہلِ خیر و عدالت: بھلائی اور انصاف والے، حضور ﷺ کے تمام صحابہ چاہے وہ فتحِ مکہ سے پہلے یا بعد میں ایمان لائے ہوں تمام سے اللہ تعالیٰ نے جنت اور بھلائی کا وعدہ فرمایا ہے اور الصحابۃ کلہم عدول سب صحابہ بھلائی کرنے والے اور انصاف پسند ہیں۔

بصارت: بینائی /دیکھنا ۔۔۔ اس شعر میں اعلا حضرت نے صحابۂ کرام کو ایک نظر دیکھنے والوں یعنی تابعین پر سلام بھیجاہے۔

لعنت: اللہ کی رحمت سے دوری

اہلِ محبت: پیار والے ، اس شعر میں اشارا ہے حدیث پاک کی طرف کہ :’’ جس نے میرے صحابہ سے بغض رکھا اس نے مجھ سے بغض رکھا اور جس نے مجھ سے دشمنی کی وہ خدا کا دشمن ہے، بخاری شریف۔

باقیِ ساقیانِ شرابِ طہور: پاکیزہ شراب پلانے والے باقی حضرات، سلام میں جن کا ذکر اب تک ہو چکا ان کے علاوہ باقی تمام ائمۂ اہلِ بیت و صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم۔

زینِ اہلِ عبادت : عبادت گزاروں کی زینت

شہزادے: مراد حضور ﷺ کی جملہ اولاد و امجاد

اہلِ مکانت : اہلِ مرتبہ/ اہلِ کمال

بالا : بلند … شرافت : بزرگی … اعلا دُرود: اونچا دُرود

والا: بلند شان … سیادت: سرداری

شافعی : امام محمد بن ادریس شافعی رضی اللہ عنہ

مالک: امام مالک رضی اللہ عنہ

احمد: امام احمد بن حنبل رضی اللہ عنہ

امام حنیف: امام اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ عنہ

امامت: پیشوائی / سرداری

کاملانِ طریقت: روحانیت کے شہِ سوار

حاملانِ طریقت: شریعت پر عمل کرنے والے

غوث : مدد کرنے والا … غوثِ اعظم : مراد حضرت سیدنا محی الدین عبدالقادر جیلانی بغدادی رضی اللہ عنہ

امام التقیٰ والنقیٰ : طہارت و تقوی والوں کے پیشوا

جلوۂ شانِ قدرت : قدرت کی شان کے مظہر

قطب: باطنی طور پر جس ولی کے قبضہ و اقتدار میں کسی شہر یا ملک کا انتظام من جانب اللہ سپرد ہو

ابدال: اولیائے کرام کے اس گروہ کو کہتے ہیں جس کے سپرد باطنی طور پر کسی مخصوص خطہ یا مقام کا انتظام ہوتا ہے ان کی تعداد چالیس ہوتی ہے اولیا کے دس طبقات میں سے یہ پانچواں طبقہ ہے

ارشاد: ہدایت کا بیان کرنے والا

رشد الرشاد: ہدایت کا راستہ دکھانے والا

محیی: زندہ کرنے والے … خیل : سربراہ

فرد: یکتا … اہلِ حقیقت: اہلِ یقین

منبر: جس پر بیٹھ کر خطیب وعظ کرتا ہے

کرامت: بزرگی/ بلندی … شاہِ برکات: مراد حضرت سید شاہ برکت اللہ عشقی و پیمی مارہروی قدس سرہٗ (ولادت ۲۶؍ جمادی الاخریٰ۱۰۷۰ھ وصال شبِ عاشورہ محرم الحرام۱۱۴۲ھ۔

پیشینیاں : پہلے بزرگ … نوبہارِ طریقت: طریقت کی نئی بہار

سید آلِ محمد: سید شاہ برکت اللہ عشقی و پیمی مارہروی قدس سرہٗ کے بڑے فرزند (ولادت ۱۸؍ رمضان المبارک ۱۱۱۱ھ وصال ۱۶؍ رمضان المبارک ۱۱۶۴ھ ۔

امام الرشید: ہدایت کے پیشوا … رَوض: باغ

گلِ رَوضِ ریاضت: عبادت و مجاہدہ کے باغ کے پھول

حضرت حمزہ: سید شاہ آلِ محمد مارہروی قدس سرہٗ کے صاحب زادے حضرت سید شاہ حمزہ عینی مارہروی قدس سرہ صاحب کاشف الاستار شریف، ولادت ۱۴؍ ربیع الثانی ۱۱۳۱ھ وصال ۴؍محر م الحرام ۱۱۹۸ھ ۔

شیرِ خدا ورسول: اللہ و رسول کے شیر

زینتِ قادریت : بزمِ قادریت کی خوب صورتی

کام: مقصد … تن: جسم … حال: حالت … مقال: بات

اچھے: سید آلِ احمد عرف اچھے میاں بن سید شاہ حمزہ عینی مارہروی ۔ ولادت ۲۸؍ رمضان المبارک وصال ۱۷؍ ربیع الاول ۱۲۳۵ھ ۔

نورِ جاں :جان و دل کی روشنی … عطر مجموعہ: خوش بوؤں کا مرکز

آلِ رسول ۔: اعلا حضرت کے مرشدِ گرامی حضرت سید آلِ رسول احمدی مارہروی حضرت ستھرے میاں کے صاحب زادے جو کہ سید شاہ حمزہ عینی مارہروی کے منجھلے صاحب زادے اور عمِ مکرم سید آلِ محمد قدس سرہٗ کے مرید و خلیفہ ہیں ۔ ولادت ۱۲۰۹ھ وصال ذی الحجہ ۱۲۹۶ھ ۔

آقائے نعمت: انعام و بخشش کے سردار، امام احمد رضا نے اپنے مرشد گرامی کے لیے ’آقائے نعمت‘ کی ترکیب استعمال کرتے ہوئے انھیں لاکھوں سلام بھیجا ہے۔

زیب: زینت … سجادہ: بزرگوں کی گدی

سجاد: بہت زیادہ سجدہ کرنے والا

نوری نہاد: نور بھری عادتوں والا ۔۔۔ نوری سے مراد حضرت سید شاہ ابوالحسین احمد نوری مارہروی، سید آلِ رسول احمدی کے پوتے سید شاہ ظہور حسن مارہروی کے صاحب زادے (ولادت ۱۲۵۵ھ وصال۱۱؍ رجب المرجب ۱۳۲۴ھ ۔

احمد : حضرت سید ابولحسین نوری میاں کا نام ’’احمدِ نوری

احمدِ نور طینت: نورانی طبیعت والے احمدِ نوری

عذاب: سزا … عتاب: ناراضگی … تا ابد: ہمیشہ ہمیش

بے عذاب و عتاب و حساب و کتاب: امام احمد رضا کہہ رہے ہیں یا اللہ! بغیر سزا، ناراضگی اور حساب و کتاب کے اپنے نبی کے غلاموں یعنی جملہ اہلِ سنت و جماعت پر ہمیشہ ہمیش رحمتیں، برکتیں اور سلامتی نازل فرما۔

طفیل: وسیلہ/ برکت

ننگِ خلقت: مخلوق کے لیے باعثِ شرم

بندۂ ننگِ خلقت: اس ترکیب سے اعلا حضرت نے خود اپنی ذات مراد لی ہے اس میں آپ جیسی عظیم المرتبت شخصیت کی عاجزی اور انکساری کا پہلو نمایاں ہے، آپ کہتے ہیں کہ یا اللہ ! اِس سلام میں مَیں نے تیرے جن محبوب بندوں کا ذکر کیا ہے ان کے صدقہ و طفیل مجھے بھی اپنی رحمتوں سے حصہ عنایت فرما

وُلد: اولاد … عشیرت: خاندان / قبیلہ

دعویٰ : درخواست/ اعتماد/ بھروسہ/ یقین/ استحقاق

شاہ: مراد حضور رحمتِ عالم ﷺ (اعلا حضرت کہہ رہے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی وسیع رحمت پر اعتماد اور بھروسے کو مَیں صرف اپنی ذات تک ہی محدود کیوں رکھوں بل کہ مَیں یہ کیوں نہ کہوں کہ حضور ﷺ کی ساری امت پر اللہ تعالیٰ کی لاکھوں رحمتیں اور سلامتیاں نازل ہوں

کاش: خدا کرے ایسا ہی ہو

محشر: قیامت/میدانِ محشر/ حساب کتاب کا دن

آمد: آنا … شوکت: دبدبہ / شان و عظمت

قدسی : پاک باز/ فرماں بردار/ مراد فرشتے( یہ دونوں شعر قطعہ بند ہیں – اعلا حضرت کہہ رہے ہیں کہ میدانِ محشر میں جب کہ نفسی نفسی کا عالم ہو اور نبیِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی تشریف آوری ہو تو کاش! ایسے وقت میں اللہ کے مقرب اور پاک باز فرشتے مجھ سے کہیں کہ اے رضاؔ اپنے نبی ﷺ پر درود و سلام کا نذرانۂ عقیدت پیش کرو اور کہو کہ ع

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

بتشکر: محمد حسین مشاہد رضوی

 

Comments»

1. Farooq - November 20, 2019

very nice and well


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: