jump to navigation

Sea Silk known As Byssus June 2, 2019

Posted by Farzana Naina in Culture, Handy Crafts, Italy, Pinna Nobilis.
Tags: , , , , , ,
trackback

سمندری ریشم جسے بُننے میں چھ سال لگتے ہیں

آپ نے ریشم کی کئی قسمیں دیکھی ہوں گی لیکن سمندری ریشم کے بارے میں شاید ہی سنا ہو گا۔ اسے بائیسس (byssus)کے نام سے جانا جاتا ہے۔

ریشم کی یہ قسم انتہائی مخصوص ہے اور اس کی تاریخ صدیوں پرانی ہے۔

star-silver-2

اس کے متعلق دلچسپ بات یہ ہے کہ اب تک ایک ہی خاندان کی خواتین تقریباً ایک ہزار سال اسے تیار کرنے کے کام میں مشغول ہیں۔ یہ خاندان اٹلی کے سارڈینیا جزیرے پر رہتا تھا اور اب اس خاندان کی ایک ہی خاتون چیارا ویگو بچی ہیں۔ ویگو 62 سال کی ہیں اور آج بھی وہ سمندر سے یہ ریشم نکالنے کا کام کرتی ہیں۔

یہ خیال ظاہر کیا جاتاہے کہ چیارا ویگو دنیا کی اب واحد خاتون ہیں جنھیں سمندری ریشم کو سمندر کی تہہ سے نکالنے سے لے کر اسے تیار کرنے، رنگنے اور کشیدہ کاری کرنے کا ہنر آتا ہے۔ کہتے ہیں کہ سورج کی روشنی پڑنے پر سمندری ریشم سونے کی طرح چمکتا ہے۔

سمندری ریشم کی تاریخ بہت پرانی ہے

ویگو بائسس سے دھاگہ بناتے ہوئے دیکھی جا سکتی ہیں

ماہرین کا کہنا ہے کہ پانچ ہزار سال قبل میسوپوٹیمیا میں خواتین اپنے بادشاہ کے لیے جو نفیس کپڑے تیارکرتی تھیں ان میں سمندری ریشم کے تاروں کا استعمال ہوتا تھا۔ روایات کے مطابق حضرت سلیمان کا چغہ اس کپڑے سے تیار کیا گیا تھا۔ جبکہ مصر کے بادشاہ بھی اس کے لباس کو پسند کرتے تھے۔ تورات میں اس کا 45 بار ذکر آيا ہے۔ کہتے ہیں کہ مسیحی رہنما پوپ اور دوسری اہم شخصیات بھی اس کے بنے کپڑے پہننا پسند کرتی تھیں۔

بہت سی روایات میں یہ مذکور ہے کہ خدا نے اپنے پیغمبر موسیٰ کو سمندری ریشم سے معبد کو سجانے کا حکم دیا تھا۔

یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ہزاروں سال پہلے ویگو کے خاندان نے بائسس یعنی سمندری ریشم کو بننے کے کام کی بنا ڈالی تھی۔ اس سلسلے میں زیادہ معلومات نہیں کہ انھوں نے یہ کام کیوں شروع کیا لیکن گذشتہ ایک ہزار سالوں سے ویگو کے خاندان کی خواتین میں نسل در نسل بائیسس نکالنے، اسے بننے، اس کا پیٹرن بنانے اور رنگنے کا ہنر چلا آ رہا ہے۔ اس کے ساتھ وہ اپنی نئی نسل کو اس فن کو بچا کر آگے بڑھانے کی ہدایت بھی کرتی آئی ہیں۔

star-silver-2

ویگو نے یہ ہنر اپنی نانی سے حاصل کیا۔ انہوں نے دستی کھڈی پر انھیں اسے بنانے کا ہنر سکھایا۔

تین سال کی عمر سے کام شروع کیا تھا

بحری ریشم سے بنائی انتہائی مشکل اور پیچیدہ کام ہے اور ایک رومال بنانے میں چھ سال کا وقت لگ جاتا ہے

سمندری ریشم کو نکالنے کے لیے بھی مخصوص صلاحیت درکار ہے۔ سمندر میں ایک خاص قسم کے جاندار کے جسم پر دھاگہ نما تار اگتے ہیں جہاں سے انھیں کاٹ کر نکالا جاتا ہے۔ سائنس کی زبان میں اسے پنا نوبلس (pinna nobilis) یا شریف قلم کہتے ہیں۔

اس کے ریشے کو نکالنے کے لیے سمندر کی گہرائيوں میں اترنا پڑتا ہے۔ ویگو کہتی ہیں کہ جب وہ صرف تین سال کی تھیں اس وقت سے ہی ان کی نانی انھیں سینٹ اینٹییوکو کے قریب سمندر میں لے جاتی تھیں اور 12 سال کی عمر تک ویگو نے سمندری ریشم بننے کا ہنر سیکھ لیا تھا۔

آج وگو 62 سال کی ہیں اور آج بھی وہ اٹلی کے کوسٹ گارڈز کی نگرانی میں سارڈینیا کے قریب بحیرہ روم کی گہرائیوں سے چاند کی روشنی میں ریشم کے تار نکالتی ہیں۔ اس کے لیے انھیں سمندر میں 15 میٹر کی گہرائی تک اترنا پڑتا ہے۔ ویگوبتاتی ہیں کہ 24 نسلوں سے ان کے یہاں یہ کام ہو رہا ہے۔ 30 گرام ریشے جمع کرنے کے لیے انھیں 100 دفعہ پانی میں غوطہ لگانے ہوتے ہیں۔

ویگو کو لوگ ‘سو میستو’ یعنی استانی کے نام سے پکارتے ہیں اور ایک وقت میں صرف ایک استانی ہو سکتی ہے۔ یہ مقام حاصل کرنے کے لیے ساری زندگی کو اس کام کے لیے وقف کرنا ہوتا ہے اور موجودہ استانی سے اس کے تمام ہنر سیکھنے ہوتے ہیں۔

star-silver-2

یہ کام پیسے کے لیے نہیں ہے

یہ دو سو سال پرانا ہاتھ سے بننے والی مشین ہے جس پر ویگو بحری ریشم سے نمائش کے لیے اشیا بناتی ہیں

سمندری ریشم تیار کرنے کا کام پیسے کمانے کے لیے نہیں کیا جاتا۔ اسے سیکھنے سے پہلے سمندر کی قسم کھانی پڑتی ہے کہ اس ریشم کا استعمال دولت کمانے کے لیے نہیں کیا جائے گا۔ یہ کبھی بھی خریدا یا بیچا نہیں جائے گا۔ ویگو نے بھی اس سے کوئی کمائی نہیں کی۔

جو کچھ بھی سمندری ریشم سے تیار کیا جاتا ہے وہ صرف لوگوں کی نمائش کے لیے ہوتا ہے۔ ویگو نے بائسس کی بہت سے چیزیں بنائی ہیں اور یہ تمام چیزیں برطانیہ میوزیم اور ویٹیکن سٹی میں نمائش کے لیے ہیں۔

ویگو اپنے شوہر کے ساتھ ایک اپارٹمنٹ میں رہتی ہیں اور انھوں نے گھر کے قریب ایک سٹوڈیو بنایا ہے، جسے لوگ دور دور سے دیکھنے آتے ہیں۔ یہاں 200 سال پرانی کھڈی ہے جس پر ویگو کام کرتی ہیں۔

یہاں چھوٹے چھوٹے مرتبان بھی ہیں اور اس میں رکھے قدرتی رنگ سے سمندری ریشم کو رنگا جاتا ہے۔ سٹوڈیو کی دیواروں پر ویگو کو دی جانے والی سند آویزاں ہیں۔

ویگو بحری ریشم کو رنگنے کے لیے مختلف قسم کے قدرتی رنگوں کا استعمال کرتی ہیں

اس سٹوڈیو کا دورہ کرنے والے زائرین ویگو کو کچھ عطیہ دیتے ہیں اور اسی سے ان کا خرچ چلتا ہے۔

سمندری ریشم سے بنا سامان صرف تحفے میں دیا جا سکتا ہے۔ انھوں نے پوپ بینڈکٹ اور ڈنمارک کی ملکہ کے لیے سمندری ریشم کے پارچے بن کر دیے تھے۔.

جو خواتین ماں بننے کی امید لے کر وہاں آتی ہیں ویگو انھیں بھی برکت کے طور پر کوئی ٹکڑا دے دیتی ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ بائسس کسی ایک کے لیے نہیں بلکہ سب کے لیے ہے۔ اسے فروخت کرنا سورج اور سمندر سے منافع کمانے کی طرح ہے اور ایسا کرنا گناہ ہے۔

star-silver-2

بحری ریشم کی تیاری آسان نہیں

ویگو 30 گرام بائسس حاصل کرنے کے لیے سمندر میں تقریبا 100 بار غوطے لگاتی ہیں

سمندری ریشم کشید کرنے کا طریقہ بہت پیچیدہ ہے۔ سمندر سے خام بائسس نکالنے کے بعد اسے 25 دنوں تک صاف پانی میں بھگو کر رکھا جاتا ہے تاکہ اس کا نمک ختم ہوجائے۔ ہر تین گھنٹے پر پانی کو تبدیل کرنا ضروری ہے۔ پھر اسے خشک کیا جاتا ہے اور اس کے بعد اس کے ریشے الگ ہوتے ہیں۔

ویگو بتاتی ہیں کہ اصلی سمندری ریشم انسانی بالوں کے مقابلے میں تین گنا باریک ہوتا ہے۔ بعد میں ان ریشوں کو زرد رنگ کے محلول میں ڈال دیا جاتا ہے۔ ویگو کو 124 قسم کے قدرتی رنگوں میں اس ریشم کو رنگنے کی مہارت حاصل ہے۔ یہ رنگ پھل، پھول اور سمندر صدف سے بنائے جاتے ہیں۔

ریشوں سے دھاگہ بنانے میں 15 دن لگتے ہیں اور ایک سینٹی میٹر کپڑے کا وزن محض دو گرام ہوتا ہے۔ اسے بنانے میں تقریباً چھ سال صرف ہوتے ہیں۔ اگر کپڑے پر کوئی تصویر ابھارنی ہو تو مزید وقت لگ جاتا ہے۔

ویگو کو اپنی کھڈی پر کام کرتے دیکھا جا سکتا ہے

ویگو کہتی ہیں کہ اب تک ان کے خاندان نے 140 نمونوں پر کام کیا ہے۔ ان میں سے آٹھ نمونے ایسے ہیں جن کے بارے میں لکھا نہیں گیا بلکہ وہ نسل در نسل زبانی چلے آ رہے ہیں۔اس روایت کو برقرار رکھنے کے لیے ويگو یہ ہنر اب اپنی چھوٹی بیٹی سکھا رہی ہیں۔ ویگو کا کہنا ہے کہ سمندر سے ریشم بنانے کا کام ایک ایسا راز ہے جو ہر کسی کو نہیں بتایا جا سکتا۔ اپنے خاندان میں بھی صرف اسی کو بتایا جاتا ہے جو سمندر کی قسم کھاتا ہے اور اس کا احترام کرتا ہے۔

ویگو کہتی ہیں کہ شاید یہ راز ان کے ساتھ ہی چلا جائے لیکن بائسس ہمیشہ رہے گا۔

star-silver-2Blue Flower Girl in Shell

بتشکر: ایلیٹ سٹین

بی بی سی

Comments»

No comments yet — be the first.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: